Sunday, 05 July, 2020
ہمارے بارے میں

مبصر ڈاٹ کام پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے چند صحافتی دوستوں کی مشترکہ کاوش کا نتیجہ ہے۔

مکمل پراجیکٹ سات زبانوں پر مشتمل ہے جن میں انگریزی،اردو،فارسی،عربی،ہندی،بنگالی اور پشتو شامل ہیں۔

فی الحال انگریزی اور اردو سیکشن میں خبروں اور تجزیات کا سلسلہ شروع کیا گیا ہے۔باقی پانچ زبانوں میں ویب سائیٹ ابھی زیر تکمیل ہے۔

مبصر ڈاٹ کام کا مقصد معیاری خبریں،رپورٹس اور بے لاگ تجزیات قارئین تک پہنچانا ہے۔

 

چیف ایڈیٹر: ثاقب اکبر

ایڈیٹر: صفدر دانش

منیجنگ ایڈیٹر: مرتضیٰ عباس

جوائنٹ ایڈیٹر: ذکی عباس شاہ

ڈپٹی ایڈیٹر: ہما مرتضیٰ

ریذیڈنٹ ایڈیٹر: ڈاکٹر سید قلب نواز 

چیف نیوز ایڈیٹر: وحید اختر

نیوز ایڈیٹر: سدھیر احمد کیانی

تکنیکی ماہر: محمد عارف

تکنیکی ماہر: اسد اللہ خان

 

مقبول ترین
عراق میں امریکی سفارت خانے اور فوجی تنصیبات پر راکٹ داغے گئے تاہم امریکی ایئر ڈیفنس نے راکٹس کو فضا میں ہی ناکارہ بنا دیا۔ عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق عراق کے ریڈ زون ایریا میں واقع امریکی سفارت خانے پر ایک راکٹ داغا گیا جسے
اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے زلفی بخاری کا کہنا تھا کہ پاکستان ٹوورازم ڈویلپمنٹ کارپوریشن (پی ٹی ڈی سی) بند نہیں ہوا بلکہ فائدہ مند ادارہ بننے جا رہا ہے۔ اس ادارے نے لاکھوں نوکریاں پیدا کرنی ہیں، ہمیں مشکل فیصلے کرنا ہوں گے۔
سی پیک اتھارٹی کے چیئرمین اور اطلاعات ونشریات کے معاون خصوصی لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ جنرل عاصم سلیم باجوہ نے کہا ہے کہ ایم ایٹ پر کام کا آغاز حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ سینٹرل ڈیویلپمنٹ ورکنگ پارٹی نے
آئی ایس پی آر کے مطابق بھارتی فوج نے جنگ معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کنٹرول لائن پر بھاری ہتھیاروں سے فائرنگ کی، بٹل سیکٹر میں مارٹروں کی شیلنگ کر کے شہری آبادی کو نشانہ بنایا جس کی زد میں آ کر ایک 22 سالہ نوجوان زخمی ہو گیا۔

کرونا وائرس اور احتیاتی تدابیر
5 اگست کو جب بھارت کی پارلیمنٹ نے کشمیر کی آئینی خود مختیاری کو یکطرفہ اور غیر قانونی طور پر منسوخ کیا تقریباً 10 ہزار کشمیری جن میں بچے،بوڑھے اور خواتین سبھی شامل ہیں، کو ریاست سے باہر مختلف جیلوں میی رکھا گیا۔
ملک اس وقت ناگہانی آفات، بحرانوں،وباؤں اور آسمانی آفات کی زد میں ہے اورحالت جنگ کی سی کیفیت سے دوچار ہے۔ایک طرف مہلک کورونا وائرس تودوسری جانب ٹڈی دل کی ہولناک یلغارجاری و ساری ہے یوں کہیں کہ اللہ تعالٰی کی نا شکری کی بناء پرہم پرایک کے بعدایک عذاب مسلط ہو رہا ہے۔
ان دنوں پاکستان سمیت دنیاکے مختلف ممالک میں درجہ حرارت انتہائی زیادہ ہے ۔اس گرم موسم میں لُو اس وقت لگتی ہے جب جسم کا درجہ حرارت 40 ڈگری سیلسیئس یا اس سے بڑھ جائے۔ لُو لگ جانے کے بعد متاثرہ شخص کو فوری طبی امداد کی ضرورت ہوتی ہے

کیا ملک میں کرفیو نافذ ہونا چاہیے؟
نتائج ملاحظہ کریں
پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں