Thursday, 20 January, 2022
صدر ممنون حسین پر ایک بہتان
فاروق عادل کا کالم
ایوان صدر میں دو جگہیں ایسی تھیں جو صدر ممنون حسین کو بہت خوش آئیں۔ ان میں ایک ریزیڈینسی کی اسٹڈی تھی۔ اسٹڈی میں میری ان سے لا تعداد ملاقاتیں رہیں۔ اہم تقاریر، خاص طور پر پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کے نکات عام طور پر یہیں زیر بحث آئے۔

جنرل ستی، دیرآید درست آید
اعزاز سید کا کالم
لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ صلاح الدین ستی کی گفتگو سننے کے بعد میں نے ان سے درخواست کی۔ بات تو تم ٹھیک کہہ رہے ہو،لیکن کتاب کیا لکھوں کیا ہم نے کوئی قابلِ فخر کام کیا تھا جس پر کتاب لکھی جائے؟ صلاح الدین ستی نے جواب دیا۔
ایک الگ طرز کا نوحہ ۔۔۔۔
تنویر قیصر شاہد کا کالم
ایک ناقابلِ فہم خیال کے تحت مَیں خاصی دیر تک اپنی نجی لائبریری میں کھڑا رہا۔ خالی الذہن کے ساتھ مَیں نے خاموش لائبریری کے چاروں جانب دیکھا۔ دل میں احساس جاگا: کتنی محنت اور محبت کے ساتھ ان کتابوں کو اکٹھا کیا ہے۔
سید مہدی ..... یادیں زندہ ہیں
جاوید ملک / شب وروز
میں نہیں مانتا جب لوگ کہتے ہیں کہ گلگت بلتستان کی پہچان اس کا حسن جھرنیں آبشاریں اور آسمان کو چھوتی بلند و بالا چوٹیاں ہیں گلگت بلتستان کا حسن تو سید مہدی تھے یہ بلند چوٹیاں تو ان کے پاؤں کی دھول بھی نہ ہیں وہ نہ رہے تو جی بی کے جھرنے ترنم کیسے بپا کر سکتے ہیں یہ گھاٹیاں
پی ایف یو جے کا بھوک مٹاؤ رقص
جاوید ملک / شب وروز
پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ نے شہر کے سب سے مہنگے اور عالیشان ہوٹل میں ایک پروگرام کا اہتمام کیا تھا۔اس کی جیب میں ریزگاری ملا کر اتنے ہی پیسے بچے تھے کہ یک طرفہ کرایہ ادا کر کے ہوٹل پہنچ جاتا واپسی پر کسی سے لفٹ مل جاتی تو موجیں ہو جاتیں
ملی یک جہتی کونسل پاکستان
تحریر: منیر احمد خلیلی
ہمارے ملک میں مدت سے فرقوں کی بنیاد پر ایک ایک مسلک کے کئی کئی دیو بندی، بریلوی، اہل حدیث اور شیعہ دھڑے موجود رہے ہیں۔ ہر دھڑا اپنے آپ کو اپنے فرقے کا نمائندہ ثابت کرتا ہے۔ فرقہ واریت بجائے خود اسلام کے امیج کو بری طرح مجروح کرتی اور
سوشل میڈیا ایک نیا میدان
جاوید ملک / شب وروز
میں یہ فیصلہ نہیں کرپاتا کہ ہم قدامت پسند زیادہ ہیں یا سست المزاج لیکن یہ طے ہے کہ جدت کو اپنانے میں جس قدر غفلت ہم کرتے ہیں شاید ہی دنیا میں اس کی کوئی نظیر مل پائے جب پانی سر سے چڑھ جاتا ہے تو مجبوراً ہمیں ترکی کی ٹرین سے لٹکنا پڑتا ہے
’’بھکاریوں کے روپ ۔۔۔ ‘‘
ڈاکٹر تصدق حسین ایڈووکیٹ
وقت کے ساتھ ساتھ جس طرح ہرطبقہ سے تعلق رکھنے والے لوگوں نے ترقی کی ہے اسی طرح بھکاریوں نے بھی ترقی کی ہے اسی طرح بھکاریوں میں بھی دوطرح کے طبقے پائے جاتے ہیں ایک بھکاری تووہ ہیں جومستقل طورپرنسل درنسل کسی علاقہ کے رہائشی
’’سعودی کے خلاف پروپیگنڈہ: ہوشیار رہنا ہوگا‘‘
جاوید ملک / شب وروز
یہ خبر ہر پاکستانی کیلئے اتنی تکلیف دہ تھی کہ جیسے اسے زندہ کھولتے ہوئے تیل میں ڈال دیا گیا ہو اس خبر کو سوشل میڈیا پر انتہائی منظم طریقے سے پھیلایا گیا لمحوں میں یہ افواہ ٹاپ ٹرینڈ بن گئی کہ ایف اے ٹی ایف کے معاملہ میں سعودی عرب نے پاکستان کے خلاف
فرقہ واریت سے ہوشیار
تحریر: سید ثاقب اکبر
یوں محسوس ہوتا ہے کہ کچھ افراد یا گروہ نئے سرے سے فرقہ واریت کو پھیلانے میں سرگرم ہوگئے ہیں یا فرقہ واریت کے سلیپر سیلز پھر سے متحرک کیے جارہے ہیں۔ اس کے لیے وہ تمام افراد جنھوں نے پاکستان میں فرقہ واریت کے خلاف سالہا سال جدوجہد کی ہے انھیں اس طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے اور اپنی طاقتوں کو نئے سرے سے مجتمع کرنے کی ضرورت ہے تاکہ فرقہ واریت کی نئی لہر کا مقابلہ کیا جاسکے۔
’’موت سے ایک لمحہ پہلے‘‘
جاوید ملک / شب وروز
کوئی اگر آپ کوایک ایسے شخص کی کہانی سنائے جس کی زندگی کی گھڑیاں گنی جا چکی ہیں اسے موت کا فرشتہ سامنے دکھائی دے رہا ہے اور اس لمحہ بھی وہ کسی کی جیب کاٹنے کسی کو دا لگانے کسی کو ٹھگنے اور دھوکہ دہی سے کچھ مال
کورونا... امتحاں اور بھی ہیں
تحریر: رضوان نقوی
سال 2020 کا آغاز دنیا کے لئے نیک شگون ثابت نہ ہوا۔ 2020 کے شروع میں کورونا وائرس نے اپنی تباہی کا آغاز چین سے کیا اور اس نے دیکھتے ہی دیکھتے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ آج آدھا سال گزرنے کو ہے اور ابھی تک لاکھوں انسان اس بیماری کا شکار ہو چکے ہیں۔
بے سمجھے پڑھی جانے والی اکلوتی کتاب
تحریر: سید ثاقب اکبر
آپ کسی سے پوچھیں کہ کیا آپ نے ’’بانگ درا‘‘ پڑھی ہے؟ اگر وہ کہے کہ ہاں تو آپ یقیناً یہی سمجھیں گے کہ اس نے ضرور غوروفکر کرکے، کچھ نہ کچھ سمجھ کر پڑھی ہے۔ آپ نے بھی پڑھ رکھی ہو تو اس کی مختلف نظموں، علامہ اقبال کے زور کلام، مشکلاتِ کلام، پیغام، تبدیلی افکار وغیرہ کے موضوعات پر آپ آپس میں تبادلۂ خیال بھی کرسکتے ہیں۔ یہی حال
۔۔۔۔۔۔ صحافت کا جنازہ
جاوید ملک / شب وروز
وزیر اعظم کے معاون خصوصی شہباز گل نے صحافی کاشف رفیق کو گالی کیوں دی؟ صحافی نے آخر ایسا کیا سوال کردیا جو ان کی طبع نازک پر گراں گزرا شہباز گل کی وہ کون سی دکھتی رگ تھی جس پر انگلی لگتے ہی وہ تڑپ اٹھے اور تھوڑی دیر پہلے تک اخلاقیات کا
امریکی مظلوموں کی حمایت میں آواز اٹھانے کا وقت ہے
تحریر: سید ثاقب اکبر
25 مئی 2020 امریکی ریاست مینیسوٹا میں سیاہ فام جارج فلائیڈ کی سفید فام پولیس افسر کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد سے امریکہ بھر میں احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ امریکی پولیس کے ایسے مظالم طویل عرصے سے جاری ہیں۔
دوراہے پر کھڑی قوم
تحریر: ظہیرالدین بابر
وطن عزیز میں ایک ہی دن کورونا وائرس سے 96 سے زائد افراد کا جان بحق ہونا ان ملکی و عالمی ماہرین کی پیشنگوئی سچ ثابت کررہا ہے جو تواتر سے عالمی وبا کی تباہ کاریوں بارے تنبیہہ کر رہے،ادھر اہل پاکستان کا معاملہ یہ ہے کہ اکثریت اس وبا کے مضمرات پر سنجیدگی سے غور کرنے آمادہ نہیں، سرکار کی جانب سے عیدالفطر پر”جزوی لاک ڈاؤن“ کھولنے کا نتیجہ یہ نکلا کہ عوام کی قابل ذکر تعداد نے لاپرواہی برتی
مقبول ترین
نیشنل اسمال اینڈ میڈیم انٹر پرائزز (ایس ایم ای ڈی اے) پالیسی کے اجرا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئےکہا کہ صدی میں ایک مرتبہ ایسی صورتحال ہوتی ہے، عالمی مالیاتی ادارے (ڈبلیو ایچ او) سمیت دیگر اداروں نے تسلیم کیا
وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سانحہ مری کی تحقیقاتی رپورٹ کی روشنی میں 15 افسران کو معطل کرکے انضباطی کارروائی کا حکم جاری کردیا۔ میڈیا کے مطابق سانحہ مری کی تحقیقاتی کمیٹی نے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار
وزیراعظم عمران خان نے سانحہ مری میں متعدد افراد کی اموات پر تحقیقات کا حکم دے دیا۔ میڈیا کے مطابق مری اور گلیات میں شدید برفباری اور ٹریفک جام کے باعث سردی سے ٹھٹھر کر مرنے والے افراد کی تعداد 21 ہوچکی ہے
مری میں برفباری میں پھنسے 21 سیاح شدید سردی سے ٹھٹھر کر جاں بحق ہوگئے ہیں جبکہ وزیرداخلہ شیخ رشید نے فوج اور سول آرمڈ فورسز کو طلب کرلیا ہے۔ملک کے پُرفضا مقام مری میں شدید برف باری کے باعث ہزاروں سیاح پھنس کر رہ گئے

کرونا وائرس اور احتیاتی تدابیر
کوہاٹ سے پہلے وہ قبائلی علاقے میں قیام پذیر تھے ان کا خاندان زراعت اور مال مویشی کی تجارت سے وابستہ تھا کوہاٹ کا یہ مقام جس کو جرم کہا جاتا ہے اس وقت چند گاؤں پر مشتمل تھا اور آج آبادی کے لحاظ سے بڑھ کر وہ ایک بڑا علاقہ بن چکا ہے
اس بات کو کسی بھی صورت نظر انداز نہیں کیا جاسکتا کہ یہ زندگی مکافات عمل ہے۔ کچھ لوگ اپنا کیا اسی دنیا میں کاٹ لیتے ہیں اور کچھ لوگ آخرت میں۔ مگر کوئی اس سے بچ نہیں سکتا یہ بات تو واضح ہے اسے کسی بھی صورت میں جھٹلایا نہیں جا سکتا۔
آن لائن ایجوکیشن سسٹم تقریباً پوری دنیا میں رائج ہے ۔پاکستان میں بھی دو بڑی یونیورسٹیاں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اورورچوئل یونیورسٹی اس وقت ہزاروں اسٹوڈنٹ کو آن لائن ایجوکیشن فراہم کر رہی ہیں۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں