Friday, 16 November, 2018
گلابوں کے شہر میں پھر خون کی ہولی

گلابوں کے شہر میں پھر خون کی ہولی
تنویر قیصر شاہد کا کالم

 

دسمبر کا مہینہ طلوع ہوتے ہی پشاور، جسے پیار سے ’’گلابوں کا شہر‘‘ کہا جاتا ہے، ہمارے جوان شہدا کے خون سے گلگوں ہو گیا ہے۔ یکم دسمبرکی صبح پونے نو بجے،جب سارے عالمِ اسلام کے ساتھ مملکتِ خداداد پاکستان میں بھی جشنِ عیدِ میلادالنبیؐ منایا جارہا تھا، اسلام اور پاکستان کے دشمنوں نے پشاور شہر میں بروئے کار طلبا کے ایک ہوسٹل پر حملہ کر دیا(اس ہوسٹل میں عمومی طور پر 400طلبا رہتے ہیں لیکن یکم دسمبر کو چھٹیاں ہونے کی وجہ سے ہوسٹل میں صرف ڈیڑھ سو طلبا تھے) پلک جھپکتے میں نصف درجن طلبا اور تین چار دیگر سرکاری ملازمین شہید کردیے گئے۔

شہر کی پولیس اور سیکیورٹی فورسز کے برق رفتار جوابی اقدام سے تمام حملہ آور دہشتگرد جہنّم واصل کردیے گئے۔ شنید ہے ایک بدبخت حملہ آور دہشتگرد زندہ حالت میں گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ جنہوں نے عیدِ میلاد شریف کے مبارک اور مسعود موقع پر یہ خونی کھیل کھیلا ہے، ہم انھیں جہنمی اور اسلام و مسلمان دشمن ہی کہیں گے۔ یہ حملہ عین ایسے موقع پر کیا گیا ہے جب ٹھیک تین سال قبل، دسمبر ہی کے مہینے میں، پشاور کے آرمی پبلک اسکول پر ٹی ٹی پی کے دہشتگردوں نے حملہ کرکے ہمارے سو سے زائد پھولوں کو بے دردی سے روند ڈالا تھا۔ ابھی چند دن پہلے ہی تو دہشتگردوں نے پشاور میں ایڈیشنل انسپکٹر جنرل (اشرف نور) کو خود کش حملے میں شہید کر دیا تھا۔

اللہ تعالیٰ ان بد بخت دہشتگردوں اور اُن کے تمام سر پرستوں، سہولت کاروں اور ہمدردوں کو غارت کرے۔افسوس عمران خان شہدا کے جنازوں میں شریک ہو سکے ہیں نہ زخمیوں کی عیادت کر سکے،حالانکہ پشاور تو اُن کی مقتدر پارٹی کا مرکز ہے۔ یکم دسمبر کا یہ تازہ خونی اور جان لیوا حملہ اُس وقت کیا گیا ہے جب امریکی وزیر دفاع، جیمز میٹس، تین دن بعد پاکستان کے دَورے پر آرہے تھے۔ یہ صاحب غالباً آج اسلام آباد اُتر رہے ہیں۔انھوں نے دو ماہ قبل بھارت کا دَورہ کیا تھا اور وہاں پاکستان کے بارے میں خاصی ’’گل افشانیاں‘‘ فرمائی تھیں۔

حکومتِ پاکستان نے پشاور میں تقریباًتین درجن اپنے تازہ شدید زخمیوں اور 9 شہدا کی ذمے داری افغانستان پر ڈالی ہے۔ کہا گیا ہے کہ افغانستان میں پناہ یافتہ ٹی ٹی پی نے اس خونی سانحہ میں براہ راست حصہ بھی لیا اور سہولت کاری بھی کی ہے۔ آئی ایس پی آر کے سربراہ نے کہا ہے کہ ’’حملہ آور افغانستان میں اپنے سہولت کاروں سے مسلسل رابطے میں تھے۔‘‘ تقریباً ایک سال قبل جب دہشتگردوں نے چارسدہ کی باچاخان یونیورسٹی پر، صبح نو بجے، حملہ کر کے ڈیڑھ درجن سے زائد طلبا کو شہید کر دیا تھا تو اس کی ذمے داری بھی ٹی ٹی پی نے قبول کی تھی۔

اور اُس وقت بھی آئی ایس پی آر کے سربراہ، عسکری قیادت اور پاکستانی حکام کی طرف سے افغانستان کو انتباہ کیا گیا تھا مگر افغانستان کے کانوں پر جوں تک نہ رینگی۔سوال یہ ہے کہ کیا افغانستان، جو اپنے شہریوں کو روٹی فراہم کرنے کے لیے گندم بھی انڈیا سے ادھار لے رہا ہے، اکیلا اِس قابل ہے کہ ٹی ٹی پی کے ذریعے پشاور میں دن دہاڑے قتل و غارتگری کا بازار گرم کر سکے؟ افغانستان کی جو فوجی اور جنگی اوقات ہے، ہم سب اس سے واقف ہیں۔جو افغانستان اپنے چالیس لاکھ مہاجرین پاکستان سے عزت کے ساتھ واپس لینے کے قابل نہیں ہے، وہ افغانستان اِس قابل کہاں سے ہوگیا کہ ایٹمی پاکستان میں دہشتگردیاں اور بدمعاشیاں کر سکے؟ یقینا پاکستان کے خلاف سر اُٹھانے اور آئے روز خوں ریزیاں کر کے پاکستان کو دبانے کی ناکام جرأتیں کرنے پر کوئی اُسے بار بار اعانت فراہم کر رہا ہے۔

یہ ’’کوئی‘‘ کون ہے؟ اِن سے بھی ہم، ہماری حکومت، ہمارے حکمران اور ہمارے خفیہ وعسکری ادارے خوب آگاہ اور آشنا ہیں۔پاکستان مگر صبر سے کام لے رہا ہے اور افغانستان کی گوشمالی کرنے میں تحمل و اعراض برت رہا ہے۔  مگر افغان عوام کی طرف پاکستان کا بڑھتا ہُوا یہ اعانتی اور برادرانہ ہاتھ افغان حکام اور افغانی خفیہ ادارے ’’این ڈی ایس‘‘ نے شائد پاکستان کی مجبوری اور کمزوری کو سمجھ لیا ہے۔ یوں اُس کی پاکستان کی خلاف سرکشیاں، زیادتیاں روز افزوں ہیں۔ وہ ایران اور بھارت سے اپنی دوستیوں پر زیادہ مَت اِترائے۔

آئی ایس پی آر کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور نے پشاور کے سانحہ پر فوری طور پر افغانستان کا چہرہ بے نقاب کرکے اُن قوتوں کو بھی متنبّہ کر دیا ہے جو پاکستان کے خلاف اپنا شیطانی اور خونی کھیل کھیل کر مذموم مقاصد حاصل کرنے کے دَرپے تو ہیں لیکن نہیں جانتے کہ یہ کھیل کامیابی سے ہمکنار ہونے والا نہیں ہے۔ افواجِ پاکستان اور پاکستان کی جملہ سیکیورٹی فورسز کے جوانوں اور افسروں کے ساتھ ساتھ ہزاروں پاکستانی عوام نے اپنے مقدس خون کی دیوار سے دشمنانِ پاکستان کی پیدا کردہ دہشتگردی کی اس کالی آندھی کا منہ موڑ کررکھ دیا ہے۔ دنیا بھر میںہے کوئی دوسری قوم، کوئی ملک، کوئی فوج جو ان کامیابیوں کے میدان میں پاکستان کی ہمسری کر سکے؟؟

دنیا نے تسلیم کیا اور مانا ہے کہ پاکستان نے اپنے محدود وسائل کے باوصف دہشتگردوں کو شکست دے کر دنیا کو امن کا تحفہ دیا ہے۔ پاکستان کی یہ کاوشیں اور کوششیں مسلسل جاری ہیں۔ ابھی 2 دسمبر کو وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بحیرۂ اسود کے کنارے واقع روس کے مشہور شہر’’سوچی‘‘ میں ’’بلوم برگ‘‘ کو انٹرویو دیتے ہُوئے ایک بار پھر پاکستان کی یہ خواہش اور پیشکش عالمی قائدین کے سامنے رکھی ہے کہ آپ(پاکستان میں) دہشتگردوں کے ٹھکانوں کی نشاندہی کیجئے، ہم اُن کا خاتمہ کریں گے۔ شائد یہ کہنا اتنا آساں نہیں ہے لیکن امریکا آگے بڑھ کر’’نافرمانی پر‘‘ پاکستان کی مشکیں کسنے کا متمنی ضرور نظر آرہا ہے۔ قرائن اور آثار واضح ہیں۔ مثال کے طور پر یہ دیکھئے کہ جس روز (یکم دسمبر2017ء) دہشتگردوں نے پشاور کو خون میں نہلا دیا گیا، اُسی روز ممتاز امریکی ادارے CRS (Congressional Research Service)نے یہ خبر دی کہ امریکا نے پاکستان کو دی جانے والی امداد میں جو بے پناہ کمی کی ہے، اس کی وجہ سے پاکستان کو پاک، افغان بارڈر کی نگرانی میں شدید مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہا ہے۔

متذکرہ رپورٹ میں یوں انکشاف کیا گیا ہے:’’نائن الیون کے سانحہ کے بعد پاکستان کو امریکا کی طرف سے سالانہ 2ارب 20کروڑ ڈالر کی جو امداد فراہم کی جارہی تھی، اب یہ محض 35کروڑڈالر رہ گئی ہے۔‘‘اس رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ امریکا گزشتہ9برسوں کے دوران(2002ء تا 2011ء) پاکستان کو 22ارب 17کروڑ ڈالر ادا کر چکا ہے۔اِسی امداد میں CSF (Coalition Support Fund)کے نام سے وہ رقم بھی شامل تھی جس کی بنیاد پر 2200کلومیٹر طویل پاک، افغان بارڈر کی مانیٹرنگ آسان بھی تھی اور اخراجات کا بوجھ بھی پاکستان کے سرکاری خزانے پر نہیں پڑ رہا تھا۔ امریکی ’’شہ دماغوں‘‘ کا خیال ہے کہ امریکا نے یہ امداد بند کردی ہے تو پاکستان مجبور ہو کر امریکی مطالبات کے سامنے جھک جائے گا۔

امریکیوں کی یہ محض خام خیالی ہے۔ وہ نہیں جانتے کہ اب پاکستانی جان چکے ہیں کہ’’بھاری امریکی امداد ‘‘ہمیشہ اپنے دامن میں پاکستان کے لیے بدبختیاں اور بدشگونیاں ہی لے کرآتی ہے۔ اس لیے ہمارا سلام ایسی امریکی امداد کو!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بشکریہ ’’روزنامہ ایکسپریس‘‘
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کالم نگار، بلاگر یا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ بھی ہمارے لیے کالم / مضمون یا اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر اور مختصر تعارف کے ساتھ info@mubassir.com پر ای میل کریں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  14309
کوڈ
 
   
متعلقہ کالم
یہ وہ دن ہیں جب پہلی جنگ عظیم کے خاتمے کے 100برس مکمل ہونے پر یورپ، جشن منا رہا ہے ۔ ہم اس خبر سے یوں سرسری گزرتے ہیں جیسے اس سے ہمارا کوئی تعلق نہیں۔ یہ بات ہمیں یاد نہیں رہی کہ یہ وہ زمانہ تھا جب ہندوستان اپنی آزادی ہار چکا تھا۔
آپ سب کو مبارک ہو۔ پاکستان پھر آئی ایم ایف کا در کھٹکھٹارہا ہے۔ میاں شہباز شریف حراست میں لے لئے گئے۔ آغاز ہفتہ کراچی اسٹاک ایکسچینج بہت نیچے چلی گئی۔ لوگ سمجھے کہ یہ گرفتاری کا ردّ عمل ہے۔ لیکن اسٹاکس کے ایک بڑے بروکر
مورخہ ستائیس ستمبر۔مقام قومی اسمبلی ہال۔ وزیرِاطلاعات فواد چوہدری کی جانب سے چور ، ڈاکو اور قومی دولت مجرے کی طرح لٹانے والے ریمارکس کے ردِعمل میں حزبِ اختلاف واک آؤٹ کر چکی ہے۔مگر فواد میاں کا کلیجہ ٹھنڈا نہیں ہوا۔
بہتی گنگا میں ہاتھ دھونا ایک محاورہ ہے اور ہم لوگ گزشتہ 70برس سے مختلف ادوار میں اس محاورے کو فقرے میں استعمال ہوتا دیکھ رہے ہیں۔ متذکرہ محاورے کو فقرے میں استعمال کرنے والے امتحانی نقطہ نظر سے ایسا نہیں کرتے۔

مزید خبریں
میڈیا کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس علی اکبر قریشی نے اظہر صدیق ایڈوووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی۔ جس میں سگریٹ نوشی پر پابندی کے قوانین کی پاسداری نہ کرنے کی نشاندہی دہی کی گئی۔
صوبہ بلوچستان کے ضلع تربت میں کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھنے والے 15 اہم کمانڈروں سمیت تقریباً 200 فراری ہتھیار ڈال کر قومی دھارے میں شامل ہوگئے ہیں۔ تقریب کے مہمان خصوصی وزیراعلیٰ بلوچستان میرعبدالقدوس بزنجو تھے۔ اب تک ایک ہزار 8 سو کے قریب فراری ہتھیار ڈال کر قومی دھارے میں شامل ہوچکے ہیں۔
سابق وزیراعظم اور حکمران جماعت کے سربراہ میاں محمد نواز شریف کی کل سعودی عرب روانگی کا امکان ہے۔ جہاں وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف پہلے سے موجود ہیں۔ جبکہ وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق بھی پی آئی اے کی پرواز کے ذریعے اہلخانہ کے ہمراہ سعودی عرب روانہ ہوگئے ہیں
مسجد اقصیٰ کے امام وخطیب الشیخ اسماعیل نواھضہ نے برما میں مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کی شدید مذمت کی اور عالم اسلام پر زور دیا کہ وہ روہنگیا مسلمانوں کو ریاستی جبر وتشدد سے نجات دلانے کے لیے موثر اقدامات کریں

مقبول ترین
لاپتہ ہونے والے ڈپٹی ڈائریکٹر ایاز خان خان پورڈیم پر تعینات تھے، سی ڈی اے کے افسر ایازخان کی بیٹی کی کل شادی ہے۔ اہلیہ نے پولیس کو بیان دیتے ہوئے کہا جمعرات کی شام ساڑھے 4 بجے میرے خاوند دفتر سے نکلے، خاوند نے جی 13 میں واقع اپنے گھر آنا تھا
سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں زلفی بخاری کے بطور معاون خصوصی وزیراعظم تقرری کی نااہلی کے لیے درخواستوں پر چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار کی سربراہی میں سماعت ہوئی، زلفی بخاری سماعت کے دوران عدالت میں وکیل اعتزاز احسن
سپریم کورٹ آف پاکستان میں تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے نومبر 2017 میں فیض آباد دھرنے کے معاملے پر لیے گئے از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران اٹارنی جنرل کی غیرموجودگی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ
غیر ملکی خبر ایجنسیوں کے مطابق ٹرمپ انتظامیہ نے جمال خاشقجی کے قتل کے ردِ عمل میں پہلی مرتبہ عملی قدم اٹھاتے ہوئے ان 17 سعودی شہریوں پر پابندیاں عائد کی ہیں جو صحافی کے قتل کا منصوبہ بنانے اور اسے عملی جامہ پہنانے والی ٹیم کا حصہ تھے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں