Wednesday, 20 November, 2019
قومی سلامتی اور فوج کا نقطہ نظر

قومی سلامتی اور فوج کا نقطہ نظر
آج کی بات / غلام اکبر

 

کیا قومی سلامتی کے بارے میں
فوج کا نقطہ نظرتبدیل ہوگیا ہے؟

سردیاں گزر گئیں۔۔۔ گرمیاں آچکی ہیں۔۔۔ اور یہ بات سردیاں شروع ہونے سے پہلے کی ہے جب ڈان میں سرل المیڈا کی ایک رپورٹ چھپی تھی جس میں وزیراعظم ہاﺅس کے اندر ہونے والی ایک حساس میٹنگ کے حوالے سے یہ موقف بیان کیا گیا تھا کہ نوازشریف کی حکومت اس سرپرستی سے سخت نالاں ہے جو ہماری فوج انتہا پسند اور شر پسند عناصر کو مہیا کرتی ہے ۔۔۔ 

شرپسند اور انتہا پسند عناصر سے مراد لشکر طیبہ اور دیگر ایسی تنظیموں کی قیادتیں تھیں جو کشمیر کی تحریکِ آزادی سے اپنا ناطہ جوڑے ہوئے ہیں۔۔۔ 

متذکرہ خبر کا واحد مقصد دنیا کو یہ تاثر دینا تھا کہ میاں صاحب کی حکومت تو ایسے ” ناپسندیدہ“ عناصر کی سرکوبی کے لئے کوشاں ہے مگر فوج راستے کی دیوار بنی ہوئی ہے۔۔۔ یہ بیانیہ بھارتی حکومت کا تھا اور ہے۔۔۔ چنانچہ اس بیانیہ کو بھارتی میڈیا اور حکومت نے اپنے اس موقف کا ٹھوس ثبوت بنا لیاکہ پاکستان کی فوج دراصل Rogue Army یعنی غنڈہ فوج ہے۔

یہ امر واقعہ ہے کہ پرائم منسٹر ہاﺅس میں ایک اہم میٹنگ ہوئی ضرور تھی جس میں آئی ایس آئی اور فوج کے اعلیٰ افسران بھی موجود تھے۔۔۔ اس میٹنگ میں نیشنل سکیورٹی کے حوالے سے اہم موضوعات زیرِ بحث آئے تھے جنہیں توڑ مروڑ کر اس شرانگیز خبر کے سانچے میں ڈھال دیا گیا۔۔۔

یہ سانچہ کس نے تیار کیا ۔۔۔؟ اور اس سانچے میں ڈھل کر متذکرہ خبر سرل المیڈا تک کیسے پہنچی ؟ ڈان کی انتظامیہ کو اس خبر کی اشاعت کے لئے کس نے تیار کیا ؟ 

یہ وہ سوالات تھے جن کا جواب ہماری فوج کی اعلیٰ قیادت کو درکار تھا۔۔۔ اس ضمن میں کور کمانڈرز کے متعدد اجلاس بھی ہوئے۔۔۔ فوج نے اسے پاکستان کی سلامتی کے خلاف سازش قرار دیا۔۔۔خود وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے اعلان کیا کہ اس سازش میں شریک کسی بھی فرد کو معاف نہیں کیا جائے گا۔۔۔

پھر کیا ہوا کہ کل جو خبر ملکی سلامتی پر ایک خوفناک وار تھی ` آج اس پر ہماری فوج خاموش ہے۔۔۔ اور ایک مہم یہ چلائی جارہی ہے کہ ایسی خبریں شائع ہوتی ہی رہتی ہیں انہیں دردِ سر یا دل کا روگ نہیں بنایا جانا چاہئے۔۔۔

کیا قومی سلامتی کے بارے میں فوج کا نقطہء نظر تبدیل ہوگیا ہے۔۔۔؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کالم نگار، بلاگر یا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ بھی ہمارے لیے کالم / مضمون یا اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر اور مختصر تعارف کے ساتھ info@mubassir.com پر ای میل کریں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  54557
کوڈ
 
   
متعلقہ کالم
سرزمین فلسطین پر شاطر اور سفاک یہودیوں کا قبضہ عالمی سازش کا ایک حصہ ہے جو صدیوں سے مسلمانوں کے خلاف جاری ہے۔ اسرائیل کے قیام میں مغربی استعمارکا کردار روایتی اسلام دشمنی کی عکاسی کرتا ہے
6 دسمبر کو بابری مسجد کے انہدام کو25 سال ہو جائیں گے۔ یہ کام کانگریس کی حکومت کے دور میں 1992ء میں کیا گیا تھا جب پی وی نرسمہا راؤ وزیراعظم تھے۔ بی جے پی کی حکومت بجائے اس کے کہ اس تاریخی مسجد کے انہدام کا مداوا کرتی
پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کے درمیان زیرو بم آتے رہے ہیں تاہم اس دفعہ یہ تعلقات انتہائی نچلی سطح پر اس وقت پہنچ گئے تھے جب امریکی صدر نے افغان پالیسی کا اعلان کیا اور پاکستان کی اہمیت کو یکسر نظرانداز کردیا
گھریلو زندگیوں میں تلخیاں عمومی بات ہے۔مشرقی معاشرت میں ابھی بھی خاندانی سسٹم مضبوط ہے اورگھریلو زندگی کی تلخیوں واتار چڑھاؤ کو خاندان کے بڑے بوڑھے ہی نمٹاتے اور فیصلہ کرتے ہیں

مزید خبریں
مسجد اقصیٰ کے امام وخطیب الشیخ اسماعیل نواھضہ نے برما میں مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کی شدید مذمت کی اور عالم اسلام پر زور دیا کہ وہ روہنگیا مسلمانوں کو ریاستی جبر وتشدد سے نجات دلانے کے لیے موثر اقدامات کریں
بھارت میں شدید گرمی کے باعث مرنے والوں کی تعداد 134ہوگئی بھارتی میڈیا کے مطابق شدید گرمی کے باعث بھارت کی ریاست تلنگانہ ،آندھرا پردیش اور اڑیسہ میں مرنے والوں کی تعداد 134 ہوگئی ہے۔
افغان حکومت نے باچاخان یونیورسٹی حملے میں افغان سرزمین استعمال ہونے کا امکان مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ افغانستان نے کسی دہشت گرد گروپ کو پناہ نہیں دی جب کہ افغانستان کسی دہشت گرد گروپ کی حمایت بھی نہیں کرتا۔
نیویارک میں ایک کمپنی نے ایک ایسا کام کرنے کے لیے بازار میں بوتھ بنادیا ہے جس کا سن کر ہی انسان شرم سے پانی پانی ہو جائے۔ اس کمپنی نے مردوں کو خودلذتی کا موقع فراہم کرنے کے لیے بازار کے بیچ یہ بوتھ بنایا ہے

مقبول ترین
سابق وزیراعظم کو گاڑی کے ذریعے جاتی امرا سے لاہور ایئر پورٹ کے حج ٹرمینل پہنچایا گیا، ایئر پورٹ پر کارکنان کی بڑی تعداد حج ٹرمینل کے باہر موجود تھی جنہوں نے نواز شریف کے حق میں نعرے بازی کی، نواز شریف کی گاڑی کے ساتھ
وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ عدلیہ طاقتور اور کمزور کےلیے الگ قانون کا تاثر ختم کرے۔ ہزارہ موٹروے فیز 2 منصوبے کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پچھلے دنوں کنٹینر
لاہور ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد میاں محمد نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالتے کا حکم دیتے ہوئے انہیں 4 ہفتے کیلئے بیرون ملک جانے کی اجازت دیدی جبکہ عدالت کی طرف سے کوئی گارنٹی نہیں مانگی گئی۔
وفاقی دارالحکومت اسلام آباداور کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں جمعیت علماء اسلام (ف) کے کارکنوں نے دھرنے دے کر سڑکیں بلاک کردیں۔ مولانا فضل الرحمان کے آزادی مارچ کے ’پلان بی‘ کے تحت ملک بھر میں دھرنوں کا سلسلہ

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں