Monday, 25 May, 2020
ہزارہ قوم کا جرم کیا ہے؟؟

ہزارہ قوم کا جرم کیا ہے؟؟
فائل فوٹو
تحریر: ضرغام عباس

 

خبر ملی ہے کہ بلوچستان میں کچلاک کے مقام پر ایک کار پر فائرنگ کرکے 5 ’’ہزارہ برادری‘‘ سے تعلق رکھنے والے افراد کو قتل کیا گیا جس میں دو خواتین بھی شامل تھیں۔ ہزارہ برادی کا یہ قتل کوئی نئی بات نہیں ہے کوئی ایم دن (عید، محرم کے ایام)  ایسا نہیں گزرتا جب ہزارہ برادی کے کسی شخص کو شہید نہ کیا جاتا ہو، اسی سال 20 جولائی کو کوئٹہ سے کراچی جانے والی کار کو نشانہ بنایا گیا جس سے چار ہزارہ  افراد شہید ہوئے جن میں گرافکس ڈیزائیننگ کا طالب علم محمد مرتضیٰ بھی شامل تھا۔

قتل کسی کا بھی ہو ، قابل مذمت ہوتا ہے، چاہے وہ امیر ہو یا غریب، مسلم ہو یا غیر مسلم، پاکستانی ہو یا غیر پاکستانی۔ لیکن جب کسی قوم کے افراد کو جان بوجھ کر، شناخت کرنے کے بعد نشانہ بنایا جا رہا ہے اور قتل کرنے والا اس کو قتل نہیں بلکہ جہاد و ثواب کی خاطر قتل کررہے ہوں اور اس کی توجیہات اور دلائیل دیتے ہوں تو وہ ہر عام دہشت گردی سے ہٹ کر ٹارگیٹد قتل عام ہی کہلایا جائے گا۔

کوئٹہ میں مقیم ہزارہ برادری ایک طویل عرصہ لگ بھگ ڈیڑھ سو سال سے یہاں پر آباد ہے۔ ہزارہ برادری کے زیادہ تر افراد 1880 اور 1890 کی دہائی میں جابر افغان بادشاہ عبدالرحمن کے دور میں افغانستان سے کوئٹہ اور دیگر بلوچستان کے علاقوں میں آکر آباد ہوئے۔ 

قیام پاکستان سے لیکر اب تک ہزارہ برادری نے مملکت کی بےلوث خدمت کی ہے۔ ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والے قاضی محمد عیسیٰ کا تحریک پاکستان میں ایک اہم کردار رہا ہے جبکہ 1965 کی جنگ میں حصہ لینے والے پاکستانی فوج کے کمانڈر ان چیف جنرل موسیٰ اور ائیر مارشل شربت علی چنگیزی کا تعلق بھی اسی برادری سے ہے۔ 

ہزارہ قوم کی آبادی 10 لاکھ کے لگ بھگ ہے ان کی سب سے بڑی خاصیت یہ ہے کہ یہ ایک محنتی اور جفاکش قوم ہیں ، وطن سے محبت ان میں کوٹ کوٹ کر بھری ہوئی ہے، تعلیم کی طرف زیادہ رغبت رکھتے ہیں، اور کوشش کرتے ہیں کہ قانون کی پاسداری کریں اور کوئی ایسا کام سرانجام نہ دیں جس سے ملکی وقار پر کوئی حرف آئے۔ 

1980سے 1990 میں سابق سویت افغان جنگ کے دوران معاشرہ میں اسلحہ کلچر کو پروان چڑھایا گیا، کلاشنکوف عام ہوئی، ہر طرف اسلہ کی گھن گرج تھی۔ ایک خاص مائینڈ سیٹ کے لوگوں کو ٹرینینگ دی گئی جو اگے جا کہ خود پاکستانیوں کےلیے زہر قاتل ثابت ہوئے۔ اور اسی دور سے ہزارہ کے قتل عام کا آغاز ہوا جولائی 1985 میں مجلس کے جلوس پر فائیرنگ کی گئی جس سے 13 افراد شہید ہوئے۔

2001 سے لیکر 2017 تک ہزارہ برادری پر 1400 سے زیادہ حملے ہو چکے ہیں  جس میں شہید ہونے والے ہزارہ کی تعداد 1000 سے زیادہ ہے۔  جون 2003 کو کوئیٹہ سریاب روڈ پر پولیس کیڈیٹس کو نشانہ بنایا گیا جس میں تقریبا 13 ہزارہ کیڈیٹ شہید ہوئے۔ جولائی 2003 کو مجلس میں 4 خود کش حملے ہوئے جس سے 50 افراد شہید ہوئے۔ ستمبر 2010 کو القدس ریلی پر فائیرنگ کر کے 70 ہزارہ شیعہ کو شہید کیا گیا۔ ستمبر 2011 کو مستونگ میں بسوں سے اتار کر شناخت کے بعد 30 ہزراہ افراد کو شہید کیا گیا۔ جنوری 2013 میں علمدار روڈ پر دو خود کش حملوں کے نتیجہ میں 200کے قریب ہزارہ برادری کے افراد شہید ہوئے۔ 

ان حملوں کی زمہ داری یا تو تحریک طالبان نے قبول کی ہے یا لشکر جھنگوی ، سپاہ صحابہ ملوث رہی ہے۔ اکثر حملوں میں کالعدم جماعتیں باقاعدہ پمفلٹس کے ذریعے سے ہزارہ شعیہ برادری کو کوئیٹہ سے نکلنے اور بات نہ ماننے کی صورت میں سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکی بھی دے چکے ہیں۔

آخر ہزارہ برادری کا جرم کیا ہے؟؟ کس جرم کی سزا میں انہیں قتل کیا جا رہا ہے؟؟  کیا امن پسند شہری ہونا جرم ہے؟؟ کیا ہزارہ قوم کا جرم یہ ہے کہ وہ خاندان رسول اللہ ﷺ سے پیار کرتے ہیں ؟؟

تاریخ شاہد ہے کہ ظلم کبھی تادیر نہین رہتا ۔ ظالم کا انجام بلا آخر ایک المناک عذاب اور رسوائی ہے۔ ان بے گناہوں کا خون ایک دن ضرور رنگ لائے گا۔

قریب ہے یارو روز محشر
چھپے گا کشتوں کا خون کیونکر
جو چپ رہے گی زبان خنجر
لہو پکارے گا آستیں گا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کالم نگار، بلاگر یا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ بھی ہمارے لیے کالم / مضمون یا اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر اور مختصر تعارف کے ساتھ info@mubassir.com پر ای میل کریں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  2641
کوڈ
 
   
مزید خبریں
کورونا وائرس پاکستان ہی نہیں ہی دنیا بھر میں اپنی پوری بدصورتی کے ساتھ متحرک ہے ، تشویشناک یہ ہےاس عالمی وباء کے نتیجے میں ہمارے ہاں اموات کا سلسلہ بھی شروع ہوچکا،
کی سڑک کے کنارے ایک ہوٹل میں چائے پینے کے لیے رکا تو ایک مقامی صحافی دوست سے ملاقات ہوگئی جنہیں سب شاہ جی کہتے ہیں سلام دعا کے بعد شاہ جی سے پوچھا کہ ٹیکنالوجی کی وجہ سے پاکستان کتنا تبدیل ہوچکا ہے تو کہنے لگے کہ سوشل میڈیا کی وجہ سےعدم برداشت میں بہت اضافہ ہوا ہے۔
میرے پڑھنے والو،میں ایک عام سی،نا سمجھ ایک الہڑ سی لڑکی ہوا کرتی تھی، بات بات پہ رو دینا تو جیسے میری فطرت کا حصہ تھا، اور پھربات بے بات ہنسنا میری کمزوری، یہ لڑکی دنیا کے سامنے وہی کہتی اور وہی کرتی تھی جو یہاں کے لوگ سن اور سمجھ کر خوش ہوتے تھے
صبح سویرے اسکول جاتے وقت ہم عجیب مسابقت میں پڑے رہتے تھے پہلا مقابلہ یہ ہوتا تھا کہ کون سب سے تیز چلے گا دوسرا شوق سلام میں پہل کرنا۔ خصوصاً ساگری سے آنیوالے اساتذہ کو سلام کرنا ہم اپنے لیے ایک اعزاز تصور کرتے تھے۔

مقبول ترین
مسلم لیگ نواز خیبرپختونخوا کے صوبائی صدر امیر مقام کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا ہے۔
چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور اس کی متنازعہ حیثیت ختم کرنے کی کسی بھی کوشش کا بھرپور جواب دیا جائے گا، جنوبی ایشیاءمیں عدم استحکام پیدا کرنے کے نتائج سنگین ہوں گے۔
امریکہ کی جانب سے 6 ملین ڈالر کی امداد پاکستان کے ہسپتالوں میں کورونا کے مریضوں کی دیکھ بھال اور طبی عملے کی تربیت پر خرچ کی جائے گی۔
ملک بھر میں آج عیدالفطر کورونا وائرس اور طیارہ حادثے کے باعث سادگی کے ساتھ منائی جارہی ہے۔ملک بھر میں عید الفطر کے موقع پر مساجد، عید گاہ اور امام بارگاہوں میں نماز عید کے چھوٹے بڑے اجتماعات ہوئے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں