Wednesday, 20 November, 2019
سمجھوتہ ایکسپریس آتشزدگی،بھارتی دہشتگردی کے 9سال

سمجھوتہ ایکسپریس آتشزدگی،بھارتی دہشتگردی کے 9سال
شمائلہ جاوید بھٹی

 

18 فروری 2007 ء کو لاہور اور دہلی کے مابین چلنے والی سمجھوتہ ایکسپریس میں نئی دہلی سے 100کلومیٹر دورسونی پت کے قریب دیوانہ ریلوے سٹیشن پر بم دھماکوں کے بعد آگ لگی۔ یہ آگ ٹرین کی پچھلی دو بوگیوں میں لگی جو فائر بریگیڈکے پہنچنے سے قبل جل کر راکھ ہوگئیں اور اس کے نتیجے میں 67 افراد جاں بحق اور بہت سے زخمی بھی ہوئے۔ جاں بحق ہونے والوں میں اکثریت پاکستانی مسافروں کی تھی۔
 یہ بات سامنے آچکی ہے کہ سمجھوتہ ٹرین میںآتشزدگی منظم دہشت گردی اور تخریب کاری تھی جسے ہندوئوں نے باقاعدہ منصوبہ بندی کے بعد پائے تکمیل تک پہنچایا۔ بھارتی انٹیلی جنس ایجنسی کی تفتیش کے دوران اس بات کاانکشاف ہوا ہے کہ سمجھوتہ  ایکسپریس، حیدر آباد کی مکہ مسجد اور درسگاہ خواجہ معین الدین  چشتی پر بم دھماکوں میں بھارت کی انتہا پسند ہندو تنظیم آر ایس ایس ملوث ہے۔ ایک انتہا پسند ہندو  اندریش کمار کے مطابق حیدر آباد کی مکہ مسجد میں بم دھماکہ آر ایس ایس نے کرایا ۔ اندریش کمار کے بیان کی روشنی میں ایک اوردہشت گرد ہندو  سوامی آسم نند کو حراست میںلیا گیا ہے جو سمجھوتہ ایکسپریس سانحہ کا ماسٹر مائنڈ سمجھا جا رہا ہے۔
 اب تک تو  بھارتی حکام ان سانحات کی ذمہ داری مسلمانوں پر ڈالتے چلے آرہے تھے مگر اب معلوم ہو چکا ہے کہ ان میں ہندو انتہا پسند تنظیم آر ایس ایس ملوث ہے۔ حال ہی میں راجیو گاندھی کے بیٹے راہول گاندھی ایک بیان میں کہہ چکے ہیں کہ مسلمانوں سے زیادہ خطرناک تو ہندو انتہا پسند تنظیمیں ہیں۔ سمجھوتہ ایکسپریس ٹرین میں آتشزدگی کے بارے میںپاک بھارت دونوں ملکوں کی مشترکہ ٹیم کی جانب سے تحقیقات سے گریز سے یہ بات ظاہرہوتی ہے کہ بھارتی حکومت ہرگز یہ پسند نہیں کرتی کہ اس آتشزدگی میں جو خفیہ ہاتھ کارفرما تھے وہ بے نقاب ہوں اور ساری دنیا سمجھوتہ ایکسپریس کی آتشزدگی میں ملوث انتہاپسند ہندو تنظیموں بشمول بجرنگ دل کا بھیانک چہرہ دیکھے۔بھارت اپنی دہشت گرد تنظیموں کے گھنائونے کردار پر پردہ ڈالنا چاہتا تھا۔ 
بھارت کی انتہا پسند ہندو تنظیموں''آر ایس ایس اور بجرنگ دل''نے سمجھوتہ ایکسپریس میں بم دھماکوں اور آتشزدگی کی ذمہ داری قبول کی ہے اور مسلمانوں کے خلاف معاندانہ سرگرمیاں جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے لیکن اس کے باوجود بھارتی حکومت انتہا پسند ہندو تنظیموں کے چہرے سے نقاب ہٹانے سے انکار کر رہی ہے۔سمجھوتہ ایکسپریس کے سانحہ کو لگ بھگ نو سال گزر چکے ہیں عدالتی کمیشن اور تحقیقاتی رپورٹوں کے مطابق ملزم بھی نامزد ہو چکے ہیں ،  ممبئی حملوں کے بعد تو بھارت نے پاکستان پر دبائو ڈالے رکھا اور نام نہاد اجمل قصاب کو پھانسی تک دے دی مگر سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کا کیا کیا؟بھارت صرف پاکستان کو نقصان پہنچانے کے درپے ہے۔ چاہے وہ سفارتی سطح پر ہو یا زمینی سطح پر۔ ہماری وزارت داخلہ کے مطابق بھارت بلوچستان میں دخل اندازی کرنے کے ساتھ ساتھ پاکستان کی مشرقی اور مغربی سرحد سے اسلحہ بھی  دہشت گردوں کو سپلائی کر رہا ہے۔  تاہم شہدائے سمجھوتہ ایکسپریس کی روحیں اب بھی پاکستانی حکمرانوں سے سوال کررہی ہیں کہ کب اُن کی غیرت جاگے گی اور وہ اُن کے ساتھ طے شدہ منصوبے کے تحت ہونے والے ظلم کا بھارت سے حساب لیں گے؟

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  21233
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
اتحاد امت کمزوری اور قوت دونوں صورتوں میں ضروری ہے،اسے ضرورت کے بجائے عبادت و فریضہ سمجھ کر انجام دیا جائے۔ ایک دوسرے کے مسلک کو کافر کہنا اکابر اور آئین پاکستان کیخلاف ہے
نواز شریف کی نااہلی کے بعد ملکی سیاست خاص طور پر ن لیگی سیاست ایک ہیجان کا شکار ہے۔ وزارت عظمی سے بے دخلی کے بعد نواز شریف نے اپنی مزاحمتی تحریک شروع کی اور اسلام آباد سے لاہور جاتے
اِس میں کوئی شک نھیں کہ میانمار کے روہنگیا مُسلمان مظلوم ترین کمیونٹی ہیں، وہ شناخت کے ساتھ دیگر بنیادی سہولیات سے بھی محروم ہیں، اُنھیں میانمار کی حکومت اپنا شہری تسلیم نھیں کرتی۔ اُن پر مدت سے عرصہءِ حیات تنگ کیا جا رہا ہے۔
ہمارے عزیز، مفتی محمد فاروق علوی (برمنگھم) معتدد بار برطانیہ کے اہلِ سنت علماء اور مفتیوں کے وفد کے ساتھ ایران کا دورہ کر چکے ہیں۔ اُن کے ساتھیوں کا ایک وفد ابھی بھی ایران میں موجود ہے۔ حضرت مفتی صاحب نے

مقبول ترین
سابق وزیراعظم کو گاڑی کے ذریعے جاتی امرا سے لاہور ایئر پورٹ کے حج ٹرمینل پہنچایا گیا، ایئر پورٹ پر کارکنان کی بڑی تعداد حج ٹرمینل کے باہر موجود تھی جنہوں نے نواز شریف کے حق میں نعرے بازی کی، نواز شریف کی گاڑی کے ساتھ
وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ عدلیہ طاقتور اور کمزور کےلیے الگ قانون کا تاثر ختم کرے۔ ہزارہ موٹروے فیز 2 منصوبے کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پچھلے دنوں کنٹینر
لاہور ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد میاں محمد نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالتے کا حکم دیتے ہوئے انہیں 4 ہفتے کیلئے بیرون ملک جانے کی اجازت دیدی جبکہ عدالت کی طرف سے کوئی گارنٹی نہیں مانگی گئی۔
وفاقی دارالحکومت اسلام آباداور کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں جمعیت علماء اسلام (ف) کے کارکنوں نے دھرنے دے کر سڑکیں بلاک کردیں۔ مولانا فضل الرحمان کے آزادی مارچ کے ’پلان بی‘ کے تحت ملک بھر میں دھرنوں کا سلسلہ

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں