Monday, 17 December, 2018
احوال کچھ نئے لکھاریوں کا ..

احوال کچھ نئے لکھاریوں کا ..
تحریر: شہباز علی عباسی

 

نطق و تحریر کا سلسلہ خاصا پرانا ہے بلکہ یوں کہا جاۓ تو بے جا نہ ہو گا کہ تخلیق کائنات کے ساتھ ہی اسکی داغ بیل پڑ گئی تھی اور بولنے'لکھنے کا سلسلہ اسی وقت سے ہی چل پڑا تھا  لہذا جب ہم اقوام عالم کی تاریخ کا مطالعہ کرتے ہیں تو ہمیں عبرانی,عربی اور دیگر کئی زبانوں میں لکھی جانے والی کتب کا بیش بہا خزانہ ملتا ہے اور یہی گنج گراں مایہ بعد ازاں زبان دانی کے شاہکار کے طور پر استعمال ہونے لگا۔

چنانچہ ماضی قریب میں جب عربی زبان کی تاریخ پر نظر دوڑاتے ہیں تو ہمیں سبع معلقات کے طور پر لکھے جانے والے قصائد کا مجموعہ آج بھی عربی لٹریچر پڑھنے والوں کے سلیبس میں نظر آتا ہے اور نہ صرف سلیبس کا حصہ ہے بلکہ گرائمر کی سمجھ بوجھ اور اوزان کا دارومدار بھی اسے ہی گردانا جاتا ہے المختصر تحریری ملکہ اور تحریری صورت میں چھوڑا جانے والا مواد نو آمدہ نسل کو ماضی کی وادیوں میں نہ صرف عبرت و نصیحت کے سحر تلے دبوچنے کے لیے لے جاتا ہے بلکہ اپنی علمی عملی اور فکری بنیادیوں کا بھی پتہ دیتا ہے تا کہ کائنات کی رنگینی میں نئے آنکھ کھولنےوالے اسی قلمی ورثے کی بنیاد پر اپنے شب و روز کو استوار کر سکیں اور خود میں وقت کی تیز دھاری کے مقابلے میں کھڑا کرنے کے لیے بہتر انداز میں تیار کر سکیں۔

 چنانچہ اسی چنگاری کو سینوں میں بھڑکاۓ پاکستان فیڈرل یونین آف کالمسٹ جو چند نوجوانوں  پر مشتمل ملک بھر کے لکھاریوں کی ایک نمائندہ تنظیم ہے جس کا مقصد آج کے مادیت زدہ دور میں جہاں اسلحہ اور نسل کشی کے لیے اسی قسم کی دیگر خرافات موجود ہیں نوجوانوں کو قلم کے زیور سے آراستہ کرنا ہے تاکہ اختلاف کو نفرت کے بجاۓ باہمی قلم قرطاس پر ثبت ہونے والے الفاظ کا مختلف زاویوں سے فہم اور فرق تصور کیا جاۓ عدم برداشت کے بڑھتے رجحان کو برداشت کا پل باندھ کر محدود کیا جاۓ ملی وحدت کو حقیقت کی لڑی میں پرویا جاۓ طبقاتی تقسیم کو حقیقت کی چادر اوڑھا کر برابر کی صف بندی کیجاۓ تاکہ اقبال کے اس شعر کی عملی تصویر نظر آۓ
 
ایک ہوں مسلم حرم کی پاسبانی کے لیے 
نیل کے ساحل سے لیکر تابخاک کاشغر

انہوں نے اپنے سفر کا آغاز ہی اس جذبے کے ساتھ کیا تھا کہ ہماری منزل شعور و آگہی ہے اس نعرے کے ساتھ کہ آئیے اگر آپ لکھنا چاہتے ہیں تو آئیے اگر آپ تحریر کرنا تو چاہتے ہیں مگر جھجک محسوس کرتے ہیں تو ہم آپ کی آواز بنیں گے آپکے جذبوں کو مہمیز دیں گے اور آپ کے تحریر کردہ الفاظ کے باعث آپکا تعارف اور توقیر بنیں گے اس لیے کہ 

بے وجہ تو لفظوں میں تاثیر نہیں ملتی 
بے علم کو دنیا میں توقیر نہیں ملتی 

اپنے مشاہدات تجربات اور علم کو پھیلائیے تا کہ معاشرہ روشن ہوسکے اسی سفر کے راہیوں نے مل بیٹھ کر راہ نکالی اور شہر اقتدار کے عین وسط اسلام آباد ہوٹل میں  ایک ورکشاپ کا انعقاد کر دیا جس میں ملک بھر کے نامور لکھاریوں اور قلمکاروں کو مدعو کیا ہر وہ نام جو فن کے اعتبار سے اپنی مثال آپ ہے جس کی قلمی داستان نہ صرف طویل ہے بلکہ اتنا کہوں گا کہ انکے لیے الفاظ کا استعمال و انتخاب جوۓ شیر لانے کے مترادف ہے ہر شعبہاۓ تحریر کے لکھاری پختہ ادب اور گہری زبان کی بات ہو تو خورشید احمد ندیم کا کوئی ثانی نہیں تحریر میں تحقیق کی جولانیاں دیکھنی ہوں تو فتح ملک صاحب کا نام اپنی مثال آپ ہے طنز و مزاح کی بات کیجاۓ تو گل نوخیز اختر باکمال نوجوان لکھاری ہیں آسان مگر ابلاغ میں وسعت دیکھنی ہو تو یاسر پیرزادہ کسی تعارف کے محتاج نہیں تاریخ کا مطالعہ کر کے اگرنتیجہ اخذ کرنا چاہیں فرنود عالم لا جواب ہیں اسی طرح اگر انٹرنیشنل افیئرز پر بات کرنی ہو تو ثاقب اکبر اپنی نظیر نہیں رکھتے یعنی پی ایف یو سی نے  ایک ایسا گلدستہ سجایا کے دل باغ باغ ہو گیا اور الفاظ کو اپنی من مرضی پر رقص بسمل کی مانند استعمال کرنے والی ان شخصیات نے الفاظ کا ایسا سماں باندھاکہ عزم و ہمت میں بلا کا اثر اور فکر و نظر میں نئی امنگ پیدا ہو گئی اور کچھ کر گزرنے کو نئی منزل مل گئی سامعین میں سے ہر شخص نہ صرف نئے نکات لیے اپنی تحریر کو جاذب اور پر اثر بنانے کے گر سیکھ رہا ہے بلکہ لفظوں کے سحر میں سر دھنتا ہوا تادم واپسی یہی کہتا ہوا نظر آیا کہ ویلڈن پی ایف یو سی شکریہ پی ایف یو سی اور خوش آئند بات راقم بھی اس کار خیر میں پیش پیش رہا اس اقبالی جملے کے ساتھ 

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری 
زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری 
دور دنیا کا میرے دم سے اندھیرا ہو جاۓ 
ہر جگہ میرے چمکنے سے اجالا ہو جاۓ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  84835
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
فلسطین کی ستر سالہ تاریخ کا مطالعہ کیا جائے تو فلسطینیوں پر گزرنے والا ہر دن ہی یوم نکبہ سے کم نہیں ہے، یوم نکبہ فلسطینیوں کے لئے ایک ایسا دن ہے جسے فلسطین کی گزشتہ اور موجودہ نسل کسی طور فراموش کر ہی نہیں سکتی
بلی تھیلے سے باہر آنے کے بعد بٹ بٹ دیکھ رہی ہے اور اپنے آقاؤں کو ڈھونڈ رہی ہے کیونکہ سابق وزیراعظم گیلانی کی بااختیار اور رعب دارپرنسپل سیکریٹری نرگس سیٹھی کے دستخط سے جاری کیا گیا خط منظر عام پر اگیا ہے جس سے پتہ چلتا ہے کہ
اگر ہم پاکستان کی مسلح افواج کے یمن پر سعودی جارحیت میں شرکت کے مخالف ہیں تو اس کی وجوہات اصولی ہیں:
پاکستان کے دارالحکومت میں بھی ایک انقلاب جنم لے چکا ہے۔ اس کے بھی دو سر ہیں اور دو ہی دماغ۔ ظاہری طور پر اس انقلاب کی سانس کی نالی بھی ایک ہے۔ جس کے ذریعے یہ نام نہاد انقلاب اپنی آخری سانسیں لے رہا ہے۔ معاشرتی حکیموں اور میڈیا کے عطائیوں کے نزدیک اس انقلاب کا بچنا بھی مشکل دکھائی دیتا ہے۔

مزید خبریں
دنیا بھر میں بولی اور سمجھی جانی والی زبانوں میں سے اردو ہندی دنیا کی دوسری بڑی زبان بن چکی ہے، جبکہ اول نمبر پر آنے والی زبان چینی ہے اور انگریزی کا نمبر تیسرا ہے۔ روزنامہ ’واشنگٹن پوسٹ‘ نے یونیورسٹی آف ڈیسلڈرف الرچ کی 15 برس کی مطالعاتی رپورٹ
ہمارے نیم حکیموں کو کون سمجھائے کہ بلکتے، سسکتےعوام کو جمہوریت سے بدہضمی ہونے کا خوف دلانا چھوڑ دیجئے حضور! 144 معالجین کے مطابق انسانی معدے کی خرابی تمام بیماریوں کی ماں ہوتی ہے اور معدے کی خرابی سے ہی بدہضمی، ہچکی، متلی، قے، ہاتھوں میں جلن کا احساس، بھوک کا نہ لگنا، پژمردگی اور چہرے پر افسردگی کے اثرات چھائے
یہ سوال انتہائی اہم ہے کہ پارلیمنٹ لاجز میں ہونے والی غیر اخلاقی حرکتوں کے متعلق جمشید دستی کو کس نے ویڈیو ثبوت اور ”ناقابل تردید“ ثبوت فراہم کیے ہیں؟ یہ سوال بھی اہم ہے کہ آخر جمشید دستی نے یہ ا یشو کیوں چھیڑا ؟ اس کے نتیجے میں جو صورتحال پیش آسکتی ہے اس کے دور رس نتائج نکل سکتے ہیں۔
دہشت گردوں کی طرف سے جنگ بندی کے اعلان کے صرف 48 گھنٹے بعد ہی دارالحکومت اسلام آباد کودہشت گردی کا نشانہ بنادیا گیا۔

مقبول ترین
جنگ کسی بھی معاشرے کیلئے نہ صرف بربادی کا سامان فراہم کرتی ہے بلکہ جنگ زدہ علاقے معاشی طور پر بھی ترقی اور تعمیر کے عمل میں پیچھے رہ جاتا ہے۔ جنگوں کی وجہ سے تقسیم ہونے والے خاندانوں کے دل کی کیفیت اور کرب تو وہی لوگ سمجھ سکتے ہیں
امریکی کانگریس نے قرارداد منظور کی ہے کہ امریکہ یمن سعودی جنگ میں سعودی عرب کی حمایت سے دستبردار ہو جائے.امریکہ کی وزارت خارجہ کے وزیر پومپیو نے کہا کہ ہم امریکی کانگریس کی منظور کی گئی قرارداد کا احترام کریں گے.
سابق صدر آصف زرداری نے کہا ہے کہ گرفتار ہوا تو کیا ہوگا، جیل دوسرا گھر ہے، ان کو غلط فہمی ہے کہ ہم خوف میں مبتلا ہیں، اداروں کو کمزور نہیں کرنا چاہتے۔ سیاست سوچ سمجھ کر کی جاتی ہے، ان کو کھیلنا آتا ہی نہیں، یہ انڈر 16 کھلاڑی ہیں۔
پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سانحہ اے پی ایس کے شہدا اور والدین کو سلام اور خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم سانحہ آرمی پبلک سکول (اے پی ایس) کے شہدا کو نہیں بھولے

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں