Monday, 25 May, 2020
معرکۂ تلعفر، عراق میں داعش کی شکست کا آخری مرحلہ

معرکۂ تلعفر، عراق میں داعش کی شکست کا آخری مرحلہ
تحریر: ثاقب اکبر

 

عراق میں داعش کی شکست کے آخری مرحلے کا آغاز معرکۂ تلعفر سے ہوگیا ہے۔ تلعفر داعش کے ہاتھوں میں رہ جانے والا آخری اہم قصبہ ہے۔ اس کے علاوہ دو چھوٹے قصبے مزید اس کے قبضے میں ہیں۔ تکفیری دہشت گرد گروہ داعش سے تلعفر کو آزاد کروانے کے لئے 20 اگست 2017ء بروز اتوار عراق کی سرکاری فوج نے حملے کا آغاز کیا ہے، جسے اینٹی ٹیررزم فورس، عراق کی فیڈرل پولیس اور عباس بریگیڈ کی حمایت حاصل ہے۔ یاد رہے کہ عباس بریگیڈ عوامی رضاکار فورس کا حصہ ہے، جسے الحشد الشعبی کے نام سے جانا جاتا ہے۔ حملے کا آغاز عراق کے وزیراعظم اور مسلح افواج کے سپریم کمانڈر حیدر العبادی کے اعلان سے ہوا۔

انہوں نے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ تلعفر کو آزاد کروانے کے لئے معرکہ شروع ہو رہا ہے اور عراقی ایک اور کامیابی کے نزدیک پہنچ گئے ہیں۔ اب تلعفر بھی ان علاقوں سے آملے گا جو دہشت گرد گروہ داعش سے آزاد ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں داعش سے کہتا ہوں کہ مجاہد قوتوں کے مقابلے میں ان کے پاس دو ہی راستے ہیں، ہتھیار ڈال دیں یا مرنے کے لئے تیار ہو جائیں۔ انہوں نے کہا کہ اس حقیقت کو سامنے رکھتے ہوئے کہ ہم تمام میدانوں میں کامیاب رہے ہیں، جبکہ انہوں نے تمام معرکوں میں شکست کھائی ہے، اب بھی شکست ان کے مقدر میں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ تمام مسلح افواج، حشد الشعبی، اینٹی ٹیررزم فورس اور فیڈرل پولیس تلعفر کی آزادی کے لئے تیار ہیں، انہیں فضائیہ نیز میڈیکل اور انجینئرنگ کے شعبوں کی مکمل مدد حاصل ہے۔ انہوں نے مسلح افواج سے کہا کہ حق آپ کے ساتھ ہے اور ساری دنیا آپ کے ساتھ ہے۔ ہمارے بیٹے تمام صوبوں سے اکٹھے ہوئے ہیں، تاکہ تلعفر کو آزاد کروائیں، داعش عراقی عوام میں تفرقہ پیدا نہیں کرسکتی۔ عراق کے تمام لوگ داعش کے خلاف اور عراق کی زمین کو آزاد کروانے کے لئے متحد ہوچکے ہیں۔

تلعفر موصل سے 55 کلو میٹر مغرب میں واقع ہے۔ اس پر حملے سے پہلے اور عراقی وزیراعظم کی تقریر سے بھی چند گھنٹے قبل عراقی فضائیہ نے شہر پرچیاں گرائیں، جن میں شہریوں کو خبردار کیا گیا تھا کہ آخری حملے کے لئے تیار ہو جائیں، جنگ شروع ہونے والی ہے، جس میں ہمیں فتح نصیب ہوگی، ان شاء اللہ۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ رواں برس جولائی میں موصل داعش کے ہاتھ سے نکل گیا تھا، جسے اس نے اپنی جعلی خلافت کا دارالخلافہ قرار دے رکھا تھا۔ موصل میں داعش کی شکست کے بعد توقع کی جا رہی تھی کہ اس کے خلاف جلد تلعفر کی آزادی کے لئے کارروائی شروع کی جائے گی۔ مختلف ذرائع کے مطابق تلعفر میں داعش کے جنگجوؤں کا حوصلہ موصل کی نسبت خاصا کمزور ہوچکا ہے۔ گذشتہ ماہ ایک سینیئر عراقی کمانڈر جو تلعفر کے میئر بھی رہ چکے ہیں، نے بتایا تھا کہ داعشی جنگجوؤں کے اہل خانہ شہر چھوڑ چکے ہیں۔ میجر جنرل جبوری نے یہ بھی کہا تھا کہ جہادی تھکے ہارے اور دلبرداشتہ ہیں اور انہیں موصل کی طرح کسی سخت جنگ کی توقع نہیں ہے۔ گذشتہ چند ہفتوں میں کئی ہزار شہری پہلے ہی تلعفر کو چھوڑ چکے ہیں۔ سکیورٹی فورسز نے سول آبادی کے مزید انخلاء کے لئے ایک محفوظ راستہ فراہم کر دیا ہے۔ شہر میں خوراک، پانی اور دیگر بنیادی ضروریات کی سخت کمی ہے۔ ان حقائق کے پیش نظر یہی توقع کی جا رہی ہے کہ دہشت گرد جلد ہتھیار ڈال دیں گے، جبکہ عراقی فورسز کو ایک نفسیاتی برتری بھی حاصل ہے۔

آج (21 اگست 2017) جب ہم یہ سطور سپرد قلم کر رہے ہیں، تازہ ترین اطلاعات کے مطابق گذشتہ 30 گھنٹوں میں عراق کی مسلح افواج اور اس کی حمایت میں لڑنے والی فورسز نے تلعفر کی طرف حیران کن پیش رفت کی ہے۔ یہ معرکہ جسے قادمون یا تلعفر (اے تلعفر ہم آرہے ہیں) میں پہلے ہی دن عراقی افواج نے بہت سے دیہات اور پہاڑی علاقے آزاد کروا لئے ہیں۔ آزاد کروائے گئے علاقوں کے نام ابرالنجار، ابراہنش، ابراکبیر، ابرا صغیر، بطیشہ، العلم، خفاجہ، حلبیہ علیا، شاہراہ المحلبیہ، قیوی قرل قیو، کسر محراب اور مرازیف شامل ہیں۔ عراقی افواج نے داعشی دہشت گردوں کے خلاف محاصرہ تنگ کر دیا ہے، تاکہ وہ شام کی طرف فرار نہ کرسکیں۔ تازہ ترین پیشرفت کے مطابق عراقی افواج نے داعش سے 250 میٹر لمبی سرنگ قبضے میں لی ہے۔ یہ سرنگ داعش کے اہم عسکری مرکز اور تربیتی پناہ گاہ کے طور پر استعمال ہوتی تھی۔ جنگ کے دوسرے دن عراقی فضائیہ نے شہر میں مزید پرچیاں گرائی ہیں، جن میں داعشی دہشت گردوں سے کہا گیا ہے کہ ان کے پاس ہتھیار ڈالنے یا مرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں۔ جس رفتار سے عراقی افواج اور اس کی اتحادی فورسز تلعفر کی آزادی کے لئے پیشرفت کر رہی ہیں، اس سے اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ تلعفر کی آزادی کی خبر چند دنوں کے فاصلے پر ہے۔ اس میں سب سے مشکل مرحلہ یقیناً سول آبادی کی حفاظت کا ہے۔ تلعفر میں اگرچہ گنجان آباد علاقے بہت کم ہیں، تاہم چند محلے تنگ گلیوں پر مشتمل ہیں، جہاں تکفیری دہشت گرد عوام کو اپنی شیلڈ بنا سکتے ہیں۔ اس لئے ان علاقوں کی آزادی کے لئے عراقی فوج کو احتیاط سے پیش رفت کرنا ہوگی۔

اس معرکے کا یقیناً ایک قابل ذکر پہلو الحشد الشعبی کے 20 ہزار جوانوں کی عراق کی باقاعدہ مسلح افواج کے ساتھ پشت پناہی ہے۔ الحشد الشعبی جو عراق کے دینی مرجع آیت اللہ سیستانی کے حکم پر عوامی حمایت کی بنیاد پر معرض وجود میں آئی تھی، کا کردار موصل کی آزادی میں بہت حوصلہ افزا رہا ہے۔ شاید یہی وجہ ہے کہ امریکہ اور علاقے میں اس کے اتحادی نہیں چاہتے کہ عراق میں آئندہ اس عوامی رضاکار فورس کا کوئی کردار باقی رہے۔ تلعفر کا معرکہ شروع ہونے سے پہلے بھی عراق کے اندر اور باہر سے الحشد الشعبی کے خلاف آوازیں اٹھتی رہی ہیں، لیکن عراق کے وزیراعظم حیدرالعبادی نے ایسی تمام آوازوں کو نظرانداز کر دیا، کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ یہ رضاکار فورس اپنے جذبہ ایمانی سے جو کردار ادا کرتی ہے، وہ کسی اور کے بس میں نہیں۔ عراق کی پارلیمینٹ پہلے ہی الحشد الشعبی کو عراق کی مسلح افواج کا حصہ قرار دے چکی ہے۔ اس لئے اس رضا کار فورس کو ایک قانونی تحفظ حاصل ہے۔ اس رضا کار فورس میں عراق کے تمام مذہبی گروہوں سے افراد شامل ہیں اور عراق کے تمام علاقوں سے عوام نے اس کے لئے اپنے نام لکھوائے اور ان میں سے لاکھوں جوانوں کو باقاعدہ تربیت دی گئی۔ تلعفر کے معرکے کا ایک اہم پہلو یہ ہے کہ اس میں امریکہ کا کوئی قابل ذکر کردار نہیں۔ اس معرکے میں عراقی افواج کی کامیابی اس امر کو زیادہ محکم طریقے سے ثابت کر دے گی کہ عراق کے مستقبل میں امریکی افواج کا کوئی کردار نہیں اور امریکہ کی بچی کھچی فوج کو جلد عراق سے نکلنا ہوگا۔ دوسری طرف امریکی ترجمان خود اعلان کرچکے ہیں کہ شام میں آئندہ ان کا کوئی کردار نہیں ہوگا، جبکہ شام سے بھی دہشت گردوں کی مسلسل ہر محاذ پر شکست کی خبریں آرہی ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کالم نگار، بلاگر یا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ بھی ہمارے لیے کالم / مضمون یا اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر اور مختصر تعارف کے ساتھ info@mubassir.com پر ای میل کریں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  86415
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
سعودی عرب کے ایک ایم بی سی چینل پر رمضان کے شروع میں ایک ڈرامہ "ام ہارون" کے نام سے نشر کیا جا رہا ہے، جس میں یہودیت کو مظلوم بنا کر پیش کیا گیا ہے۔
گذشتہ کئی عشروں سے صہیونی ریاست کے قبضے میں انبیاءکی سرزمین نہ صرف سرزمین فلسطین بلکہ مسلمانوں کے قبلہ اول بھی عالمی سازش کے تحت قبضے میں ہے۔ مسئلہ فلسطین مسلمانوں کا اساسی اور بنیادی مسئلہ ہے جس نے دنیا میں بسنےوالے ہر مسلمان کو بے چین کر کے رکھا ہوا ہے۔
عالمی یوم آزادیِ صحافت کے حوالے سے خصوصی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ تیس برس میں انیس صحافی فرائض کی ادائیگی کے دوران جاں بحق ہوچکے ہیں۔ بھارتی فورسز کے مظالم اجاگر کرنے پر صحافیوں کو گرفتار کیاجاتا ہے اور تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔
یکم مئی' یومِ مزدور' وہ دن جسے مزدور کے علاوہ سب مناتے ہیں' اس بار شائد وہ رنگ نہ جما سکے کہ کورونا کے دربار میں سبھی ایک ہوئے ہیں مگر متاثر صرف مزدور۔ مزدور کہ جسے دو وقت کی روٹی کے لالے پڑے ہوتے تھے اب وقت کی بے رحم موجوں کے سہارے زندگی اور موت کی جنگ سے نبرد آزما ہے۔ خیر یہ قصہ پھر سہی ابھی فی الحال ایک طائرانہ نظر اس دن کی مناسبت سے۔

مزید خبریں
کورونا وائرس پاکستان ہی نہیں ہی دنیا بھر میں اپنی پوری بدصورتی کے ساتھ متحرک ہے ، تشویشناک یہ ہےاس عالمی وباء کے نتیجے میں ہمارے ہاں اموات کا سلسلہ بھی شروع ہوچکا،
کی سڑک کے کنارے ایک ہوٹل میں چائے پینے کے لیے رکا تو ایک مقامی صحافی دوست سے ملاقات ہوگئی جنہیں سب شاہ جی کہتے ہیں سلام دعا کے بعد شاہ جی سے پوچھا کہ ٹیکنالوجی کی وجہ سے پاکستان کتنا تبدیل ہوچکا ہے تو کہنے لگے کہ سوشل میڈیا کی وجہ سےعدم برداشت میں بہت اضافہ ہوا ہے۔
میرے پڑھنے والو،میں ایک عام سی،نا سمجھ ایک الہڑ سی لڑکی ہوا کرتی تھی، بات بات پہ رو دینا تو جیسے میری فطرت کا حصہ تھا، اور پھربات بے بات ہنسنا میری کمزوری، یہ لڑکی دنیا کے سامنے وہی کہتی اور وہی کرتی تھی جو یہاں کے لوگ سن اور سمجھ کر خوش ہوتے تھے
صبح سویرے اسکول جاتے وقت ہم عجیب مسابقت میں پڑے رہتے تھے پہلا مقابلہ یہ ہوتا تھا کہ کون سب سے تیز چلے گا دوسرا شوق سلام میں پہل کرنا۔ خصوصاً ساگری سے آنیوالے اساتذہ کو سلام کرنا ہم اپنے لیے ایک اعزاز تصور کرتے تھے۔

مقبول ترین
مسلم لیگ نواز خیبرپختونخوا کے صوبائی صدر امیر مقام کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا ہے۔
چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور اس کی متنازعہ حیثیت ختم کرنے کی کسی بھی کوشش کا بھرپور جواب دیا جائے گا، جنوبی ایشیاءمیں عدم استحکام پیدا کرنے کے نتائج سنگین ہوں گے۔
امریکہ کی جانب سے 6 ملین ڈالر کی امداد پاکستان کے ہسپتالوں میں کورونا کے مریضوں کی دیکھ بھال اور طبی عملے کی تربیت پر خرچ کی جائے گی۔
ملک بھر میں آج عیدالفطر کورونا وائرس اور طیارہ حادثے کے باعث سادگی کے ساتھ منائی جارہی ہے۔ملک بھر میں عید الفطر کے موقع پر مساجد، عید گاہ اور امام بارگاہوں میں نماز عید کے چھوٹے بڑے اجتماعات ہوئے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں