Sunday, 18 February, 2018
کرپشن کے الزام میں گرفتاربیشترسعودی شہزادے ڈیل کرنے پر رضامند

کرپشن کے الزام میں گرفتاربیشترسعودی شہزادے ڈیل کرنے پر رضامند

ریاض ۔ انسداد کرپشن مہم میں گرفتار سعودی شہزادے اور دیگر افراد رہائی کے بدلے ڈیل کرنے پر رضامند ہوگئے ہیں۔ کرپشن کے الزام میں قید 320 افراد نے سعودی حکومت سے ڈیل کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔کرپشن کے الزام میں قید سعودی شہزادوں اور تاجروں سے ڈیل ولی عہد محمد بن سلمان آئندہ چند ہفتوں میں کریں گے۔ 

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق سعودی عرب کے پبلک پراسیکیوٹر سعود المعجب کا کہنا ہے کہ بیشتر افراد معاملہ نمٹانے پر راضی ہوچکے ہیں اور اس سلسلے میں ضروری کارروائی عمل میں لائی جارہی ہے۔ کرپشن کے الزام میں قید سعودی شہزادوں اور تاجروں سے ڈیل ولی عہد محمد بن سلمان آئندہ چند ہفتوں میں کریں گے۔ 

سرکاری پراسیکیوٹر کے مطابق زیرِ حراست افراد کے خلاف کارروائی کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے، پہلے مرحلے میں جو لوگ لوٹی ہوئی قومی دولت واپس کرنے پر رضا مند ہیں، ان کی رہائی عمل میں لائی جارہی ہے جبکہ جو افراد تصفیے پر تیار نہیں ان کے خلاف مقدمہ چلایا جائے گا۔ ڈیل کرنے والے پر تمام چارچز ختم کرکے تحقیقات بھی ختم کردی جائیں گی۔

پبلک پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ کرپشن کے خلاف قائم کئے گئے کمیشن نے 320 افراد کو معلومات فراہم کرنے کی پیشکش کی، جبکہ 159 افراد زیر حراست رہیں گے، جن میں سے متعدد کو مقدمے کی کارروائی کے لیے پبلک پراسیکیوشن کے سپرد کردیا گیا ہے۔

گزشتہ دنوں کرپشن کے الزام میں قید سعودی شہزادہ متعب بن عبداللہ ایک ارب ڈالر کے عوض رہائی حاصل کرچکے ہیں۔

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ 4 نومبر کو سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی سربراہی میں انسداد کرپشن کمیٹی نے موجودہ اور سابق وزراء سمیت کئی شہزادوں کو گرفتار کیا تھا۔ گرفتار سعودی شہزادوں میں ولید بن طلال بھی شامل تھے، جنہوں نے دنیا کے نامور ترین مالیاتی اداروں میں سرمایہ کاری کررکھی ہے، وہ شاہ سلمان کے سوتیلے بھتیجے ہیں جن کا شمار دنیا کے امیر ترین افراد میں ہوتا ہے۔ شہزادہ ولید بن طلال پر منی لانڈرنگ اور رشوت ستانی کے الزامات عائد کئے گئے ہیں۔

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  5710
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
سعودی عرب کے سینیئر فقہا کی کونسل کے ايک رکن شیخ عبداللہ المطلق نے کہا ہے کہ مملکت میں خواتین کو عوامی مقامات پر عبایہ پہنے کی ضرورت نہیں ہے، ان کے لیے ایسا لباس زیب تن کرلینا کافی ہے جو مناسب اور اسلامی اصولوں کے مطابق ہو۔
سعودی عرب میں محنت اور سماجی ترقی کے وزیر علی الغفیص نے مملکت میں لیبر سسٹم کی خلاف ورزیوں اور سزاؤں کے نئے چارٹ کی توثیق کر دی ہے ۔ ایک ہی نوعیت کی خلاف ورزی کے دْہرائے جانے کی صورت میں دی جانے والی سزا ہر مرتبہ گزشتہ خلاف ورزی سے دْگنی ہو جائے گی۔
آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے ملاقات کی ہے۔ ملاقات میں باہمی امور اور دو طرفہ فوجی تعاون پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ ملاقات کے موقع پر کونسل آف منسٹرز کے نائب صدر اور وزیر دفاع بھی موجود تھے۔
چھ ارب ڈالر جرمانہ دے کر بھی سعودی شہزادہ ولید بن طلال کی جان نہ چھوٹی، برطانوی اخبارنے اپنی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ سعودی شہزاد ے کو گھر میں نظر بند رکھا گیا ہےجبکہ انہیں تاحال بیرون ملک اثاثوں تک بھی رسائی نہیں ملی ہے۔

مزید خبریں
مسجد اقصیٰ کے امام وخطیب الشیخ اسماعیل نواھضہ نے برما میں مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کی شدید مذمت کی اور عالم اسلام پر زور دیا کہ وہ روہنگیا مسلمانوں کو ریاستی جبر وتشدد سے نجات دلانے کے لیے موثر اقدامات کریں
سعودی عرب کے فرمانروا شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز نے ایک شاہی فرمان کے ذریعے انٹیلی جنس چیف شہزادہ بندر بن سلطان کو ان کی علالت کے پیش نظر عہدے سے ہٹا دیا ہے اور ان کی جگہ ان کے نائب یوسف الادریسی کو محکمہ سراغرسانی کا قائم مقام سربراہ مقرر کیا ہے۔
سعودی مفتی صالح الفیضان نے بوفے کیخلاف فتویٰ جاری کردیا۔جمعے کوسعودی مفتی نے سرکاری ٹی وی پرفتویٰ جاری کرتے ہوئے بوفے کوغیرشرعی قراردے دیا۔
سعودی ولی عہد شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز نے چین پر زور دیا ہے کہ وہ دیرینہ فلسطینی تنازعے اور شام میں جاری بحران کو حل کرانے میں کردار ادا کرے۔

مقبول ترین
آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ دہشت گردوں کے منظم کیمپ پاکستان میں نہیں،افغانستان میں ان کے محفوظ ٹھکانے موجود ہیں۔ نجرمنی کے شہر میونخ میں میں عالمی سیکیورٹی کانفرنس سے خطاب میں آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان فخر
سابق صدر اور پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز کے سربراہ آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ سابق ایس ایس پی راؤ انوار سے متعلق ریمارکس گفتگو کی روانی کے دوران ان کی زبان سے سہواً ادا ہوئے۔
سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ (ن) کے صدر میاں محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ لودھراں کے عوام نے ثابت کردیا کہ فیصلے امپائر کی انگلی نہیں عوام کے انگوٹھے کرتے ہیں۔ مخالفین نے جھوٹ بولنے اور بہتان تراشی کے سواء کچھ نہیں کیا، الیکشن کے بعد آپ لوگوں کو کچھ بڑے فیصلے کرنے ہیں،
انسداد دہشتگردی عدالت نے محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے ملزم عمران کوزینب کو اغوا کرنے، زیادتی کرنے اور قتل کرنے پر سزائے موت کا حکم سنا دیااور دفعہ 780 کے تحت بدفعلی پر سزائے موت اور 10 روپے جرمانہ کی سزا سنائی ہے،جبکہ لاش کو گندگی میں چھپانے پر 7 سال قید اور 10 لاکھ روپے جرمانہ کی سزاسنا ئی ہے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں