Monday, 16 December, 2019
بھارتی فورسز نے انسانی حقوق تنظیم کے چیئرمین کوگرفتار کرلیا

بھارتی فورسز نے انسانی حقوق تنظیم کے چیئرمین کوگرفتار کرلیا

سرینگر ۔ فورم فار جسٹس اینڈ ہیومن رائٹس جموں کشمیر کے چیئرمین محمد احسن انتو کر بھارتی فورسز نے گرفتار کرلیا، کہوٹی باغ تھانہ میں بند ، محمد احسن انتو کو پرتاب پارک سرینگر سے گرفتار کیا گیا، کہوٹی باغ تھانہ میں بند کردیا۔ 

چیئرمین محمد احسن انتو انسانی حقوق کے عالمی دن کے حوالے سے مقبوضہ کشمیر میںجاری بھارتی فورسز کی جانب سے قتل و غارت گری کیخلاف احتجاج کرنے کیلئے جارہے تھے کہ بھارتی فورسز اور پولیس کی جانب سے انہیں احتجاج سے قبل ہی گرفتار کرلیا گیا۔ 

دریں اثناء وائس چیئرمین فورم مشتاق الاسلام نے چیئرمین محمد احسن انتو کی گرفتاری کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے بھارتی بوکھلاہٹ قرار دیا اور کہا ہے کہ بھارتی اوچھے ہتھکنڈے کشمیریوں کے جذبہ آزادی کو سرد نہیں کرسکتے۔ 

مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں جاری ہیں جس پر مقبوضہ جموں کشمیر میں انسانی حقوق پامال کرنیوالوں کیخلاف احسن انتو نے احتجاج کی کال دے رکھی تھی بھارتی فورسز اور پولیس کی جانب سے احتجاج سے قبل ہی انہیں گرفتار کرلیا گیا ہے جس کی مذمت کرتے ہیں۔ 

انہوںنے کہا کہ کشمیریوں کو بھارتی چنگل سے آزادی مل کر رہے گی، بھارتی فورسز کے یہ اقدام بھارتی جمہوریت کے منہ پر طمانچہ ہیں ۔ اقوام عالم اور عالمی انسانی حقوق پر کام کرنیوالی تنظیمیں اس کا نوٹس لیں۔ 

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  18571
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
دفتر خارجہ کی جانب سے اس دورے کا اہتمام کیا گیا تاکہ آزاد کشمیر میں دہشت گردوں کے اڈے تباہ کرنے کے بھارتی جھوٹ کو بے نقاب کیا جاسکے۔ اس موقع پر ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل بھی موجود تھے۔
لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج کی بلااشتعال فائرنگ کے نتیجے میں پاک فوج کا ایک جوان شہید ہوگیا۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ایل او سی پر بھارت کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف
مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جبری پابندیوں اور لاک ڈاؤن کو ایک ماہ گزر گیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ وادی میں ایک ماہ سے سب کچھ بند، مواصلاتی رابطے معطل ہیں جس کے باعث بیرونی دنیا سے رابطہ منقطع ہے۔
وادی میں بھارتی فوج کے خلاف زبردست مظاہرہ کیا گیا، کشمیری نوجوانوں نے سر پر کفن باندھ لیا۔ خواتین بھی احتجاج میں شریک ہوئیں، بھارتی فوج کی فائرنگ اور پیلٹ گن سے درجنوں کشمیری زخمی ہوگئے۔ ظالم بھارتی فوج نے گھروں میں محصور

مقبول ترین
16 دسمبر 1971ء پاکستان کی تاریخ کا سب سے المناک، عبرتناک اور ہولناک دن تھا۔ جب پاکستانی فوج کے ایک بزدل اور بے غیرت جرنیل نے ڈھاکا کے ریس کورس گرائونڈ میں اپنے بھارتی ہم منصب کے آگے سرنڈر کرتے ہوئے
بھارت میں مسلم مخالف متنازع قانون کے خلاف احتجاج وسیع اور پرتشدد ہوگیا ہے جس کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 6ہوگئی ہے جس میں ایک طالب علم بھی شامل ہے جو پولیس کی فائرنگ کانشانہ بنا۔احتجاج کے چوتھے روز دارالحکومت
16 دسمبر سال 2014ء کا روز، تاریخ میں سیاہ ترین دن کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ جب سفاک دہشت گردوں نے پشاور کے آرمی پبلک اسکول میں وحشت اور بربریت کی انتہا کر دی اور 149 گھروں میں صف ماتم بچھا دی گئی۔
معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ اگر لاڑکانہ میں بھٹو زندہ ہے تو غریب مر چکے ہیں۔ بلاول نے کرپشن سے اپنا رشتہ ابھی تک نہیں توڑا۔ پیپلز پارٹی نے بھٹو کے نظریے کو ختم کر دیا ہے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں