Monday, 16 December, 2019
بھارتی فوج کو اراضی الاٹ کرنا کشمیریوں کے خلاف گہری سازش ہے''

بھارتی فوج کو اراضی الاٹ کرنا کشمیریوں کے خلاف گہری سازش ہے''

سری نگر۔ جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر کا کہنا ہے کہ کٹھ پتلی حکمرانوں کی طرف سے ضلع بڈگام کے علاقے ہمہامہ میں بھارتی فوج کو درپردہ 1600 کنال اراضی الاٹ کرنا فلسطین کی طرز پر مقامی باشندوں کو اٴْن کی اراضی سے بے دخل کرنے کی ایک گہری سازش ہے جو انتہائی تشویشناک اور افسوسناک معاملہ ہے ۔

کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق جماعت اسلامی کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ یہ خبر ذرائع ابلاغ میں نمایاں طور پر شائع ہونے کے باوجود کٹھ پتلی انتظامیہ کی اس پر خاموشی معنی خیز ہے۔

انہوں نے کہاکہ اس طرح کی کارروائیاں ماضی میں بھی ہوتی رہی ہیں جس کے نتیجے میں وادی کشمیر میں جگہ جگہ فوجی چھائونیاں اور کیمپ قائم ہیں اور وادی کے زرخیز اور جاذب نظر علاقوں پربھارتی فوجیوں نے قبضہ جمایاہوا ہے۔ 

انہوں نے کہاکہ ان کارروائیوں میں یہاں کے کٹھ حکمران برابر کے شریک ہیں۔

انہوں نے ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن سے اپیل کی کہ وہ اس اہم اور نازک مسئلے کا باریک بینی سے جائزہ لے کر اس کی قانونی چارہ جوئی کے لیے ضروری اقدامات کریں۔ 

ترجمان نے کہاکہ کشمیریوں کے حقیقی نمائندوں کو اس مسئلے کی طرف فوری توجہ دینے کی ضرورت ہے تاکہ یہاں کے باشندوں کے حقوق کا تحفظ یقینی بنایا جاسکے۔

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  43516
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
دفتر خارجہ کی جانب سے اس دورے کا اہتمام کیا گیا تاکہ آزاد کشمیر میں دہشت گردوں کے اڈے تباہ کرنے کے بھارتی جھوٹ کو بے نقاب کیا جاسکے۔ اس موقع پر ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل بھی موجود تھے۔
لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج کی بلااشتعال فائرنگ کے نتیجے میں پاک فوج کا ایک جوان شہید ہوگیا۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ایل او سی پر بھارت کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف
مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جبری پابندیوں اور لاک ڈاؤن کو ایک ماہ گزر گیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ وادی میں ایک ماہ سے سب کچھ بند، مواصلاتی رابطے معطل ہیں جس کے باعث بیرونی دنیا سے رابطہ منقطع ہے۔
وادی میں بھارتی فوج کے خلاف زبردست مظاہرہ کیا گیا، کشمیری نوجوانوں نے سر پر کفن باندھ لیا۔ خواتین بھی احتجاج میں شریک ہوئیں، بھارتی فوج کی فائرنگ اور پیلٹ گن سے درجنوں کشمیری زخمی ہوگئے۔ ظالم بھارتی فوج نے گھروں میں محصور

مقبول ترین
16 دسمبر 1971ء پاکستان کی تاریخ کا سب سے المناک، عبرتناک اور ہولناک دن تھا۔ جب پاکستانی فوج کے ایک بزدل اور بے غیرت جرنیل نے ڈھاکا کے ریس کورس گرائونڈ میں اپنے بھارتی ہم منصب کے آگے سرنڈر کرتے ہوئے
بھارت میں مسلم مخالف متنازع قانون کے خلاف احتجاج وسیع اور پرتشدد ہوگیا ہے جس کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 6ہوگئی ہے جس میں ایک طالب علم بھی شامل ہے جو پولیس کی فائرنگ کانشانہ بنا۔احتجاج کے چوتھے روز دارالحکومت
16 دسمبر سال 2014ء کا روز، تاریخ میں سیاہ ترین دن کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ جب سفاک دہشت گردوں نے پشاور کے آرمی پبلک اسکول میں وحشت اور بربریت کی انتہا کر دی اور 149 گھروں میں صف ماتم بچھا دی گئی۔
معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ اگر لاڑکانہ میں بھٹو زندہ ہے تو غریب مر چکے ہیں۔ بلاول نے کرپشن سے اپنا رشتہ ابھی تک نہیں توڑا۔ پیپلز پارٹی نے بھٹو کے نظریے کو ختم کر دیا ہے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں