Sunday, 21 April, 2019
بھارت کی سفارتی دہشتگردی اور ویانا کنونشن
یہ حقیقت کسی تشریح اور وضاحت کی محتاج نہیں ہے کہ مودی سرکار کی اشتعال انگیز بلکہ جارحانہ پالیسی کے نتیجے میں پاکستان اور بھارت کے درمیان سفارتی اور عسکری سطح پر کشیدگی میں تشویشناک حد تک اضافہ ہو چکا ہے۔
جنوبی ایشیاء میں بھارت کا گھناؤنا کردار

’’شہید رانی محترمہ بے نظیر بھٹو‘‘
27 دسمبرپاکستان کی تاریخ کا ایک ایسا سیاہ باب ہے جس کے گھٹاٹوپ اندھیرے آج بھی ملکی سیاست،معیشت و معاشرت اورعام آدمی کی زندگی پر گہرے منفی اثرات مرتب کررہے ہیں۔27دسمبر کو پاکستان پیپلزپارٹی کے بانی شہید ذوالفقارعلی بھٹو کی شہزادی
’’بانئی پاکستان قائد اعظمؒ محمد علی جناح‘‘
1857 ء میں برصغیر پاک وہند کے لوگ کمزور ترین مغل بادشاہ بہادرشاہ ظفرکے ساتھ اٹھ کھڑے ہوئے اور برطانیہ میں معراج کے خلاف انقلاب کی بنیاد ڈالی۔ برطانیہ نے اس بغاوت کوکچل دیااور مسلمانوں کے لیے تاریکی کادور شروع ہوگیا ایسے حالات میں جب
’’سانحہ اے پی ایس کے شہداء کو خراج تحسین‘‘
16دسمبر2014ء تاریخ کا وُہ سیاہ ترین دِن ہے جس دِن دُشمن نے وطن عزیز پاکستان کے پھولوں کے شہر پشاور میں وطن عزیز کے معصوم بچوں،ننھی کلیوں کو خون میں نہلا دیا،واقعہ میں بچوں،اساتذہ ودیگر سمیت 147افراد شہید اور متعدد زخمی ہوئے
’’ترجمان ماضی، شان حال‘‘
وطن عزیز کے سیاسی اور سماجی احوال پر نگاہ رکھنے والے خوب جانتے ہیں کہ ملک و قوم اپنی تاریخ کے ایک اہم دوراہے پر کھڑا ہے۔ ملک دشمن عناصر کی بھرپور کوشش ہے کہ متنازعہ مسائل اور اختلافات کو ہوا دے کر قومی اتحاد کو نقصان پہنچایا جائے۔
’’آئیڈیاز 2018ء‘‘ اور قومی تقاضے
اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ موجودہ دور میں ہر ملک اور قوم کو اپنی آزادی اور خودمختاری کو محفوظ اور یقینی بنانے کے لئے عسکری اور تذویراتی تناظر میں تسلی بخش اقدامات اور انتظامات کرنے ہوتے ہیں۔ اس حوالے سے یہ امر واقعہ نہایت
جب امریکہ نے پاکستان پر حملہ کر دیا
عالمی امور اور خاص طور پر پاک امریکہ تعلقات کے حوالے سے 26 نومبر 2011ء کو غیر معمولی حیثیت حاصل ہو چکی ہے۔ اس روز افغانستان میں موجود امریکی اور نیٹو افواج نے پاکستان پر حملہ کر دیا۔ ہوا یوں کہ مذکورہ افواج پاک افغان سرحد پر واقع مہمند
شعبہ صحت تبدیلی کی طرف گامزن
شعبہ صحت تبدیلی کی طرف گامزن، تحریر: راؤ شکیل
’’وادی سوات میں امن کا نیا دور‘‘
اہل وطن کے لئے یہ خبر ہر اعتبار سے مسرت انگیز اور اطمینان ثابت ہوئی کہ گذشتہ دنوں سوات میں دہشت گردی کے خلاف آپریشن کے 11 سال بعد پاک فوج نے انتظامیہ کے اختیارات سول احکام کے حوالے کر دیئے۔ پاک فوج کے بریگیڈیر نسیم نے انتظامی
پاک فوج کی جرأت مندانہ للکار
بین الاقوامی برادری میں یہ تاثر عام ہے کہ بھارتی قیادت علاقائی بالادستی حاصل کرنے کے زعم میں یوں مبتلا ہو چکی ہے کہ اس پر کسی نفسیاتی غلبہ اور سیاسی و سفارتی عارضہ کا گمان ہوتا ہے۔ وزیراعظم مودی نے اپنے دور حکومت میں نیپال، بنگلہ دیش
ٹرمپ دودھ ختم ہونیکے بعد گائے کا کیا کرینگے
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنی انتخابی مہم کے دوران میں سعودیہ کے لئے دودھ دینے والی گائے کا لفظ استعمال کرچکے ہیں۔ انھوں نے کہا تھا کہ وہ ہمارے لئے ایک دودھ دینے والی گائے ہے، ہم جب بھی چاہیں گے، اس سے سونا اور ڈالر
ریاستِ مدینہ کا تصور اور قیامِ امام حسین ؑ
تحریر: علامہ سید ساجد علی نقوی قائدِ ملت جعفریہ پاکستان
ریاستِ مدینہ کا تصور اور قیامِ امام حسین ؑ
اگرچہ خلقتِ انسان کے بعد مختلف زمانوں میں مختلف انبیاء و رسل نے انسانی معاشروں کی اصلاح اور رہنمائی کے لیے اللہ کے احکامات کے تحت اجتماعی نظام قائم کیے اور ریاست و حکومت کے ذریعے لوگوں کے اندر عدل و انصاف کو رواج دیا لیکن تکمیلِ دین و اکمالِ
’’مقاصد امام حسینؑ‘‘
امام حسینؑ نے اپنے خطبوں اور مکتوبات میں اپنے قیام اور اقدام کے مقاصد بہت واضح طور پر بیان کئے ہیں۔ آپ نے اپنے بھائی حضرت محمد حنفیہ کے نام اپنے ایک مکتوب میں صراحت سے لکھا کہ میں امربالمعروف اور نہی عن المنکر کیلئے جارہا ہوں
یزید کے خلاف امام حسینؑ کی چارج شیٹ
امام حسینؑ نے یزید کی بیعت سے انکار کردیا، یہ جانتے ہوئے کہ اس کا نتیجہ سوائے موت کے کچھ نہیں نکلے گا جیسا کہ تارمتعدد مواقع پراس کی شہادت دیتی ہے۔ یہاں تک کہ جب امام حسینؑ مدینہ سے ہجرت کرکے مکہ تشریف لے گئے تو وہاں پر بھی آپ کو قتل کرنے
’’قیام امام حسین ؑ کے مقاصد‘‘
امام عالی مقام سید الشہدؑ اء کے قیام کے مقاصد کیا تھے، اس سلسلے میں آپؑ کی شہادت کے دن سے گفتگو جاری ہے اوررہتی دنیا تک جاری رہے گی۔یہ واقعہ ہی اتنا اہم ہے کہ اس کی طرف سے صرف نظر کر کے تاریخ گزر سکتی تھی نہ تاریخ کے تجزیہ نگار
مقبول ترین
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ 18 اپریل کو سرحد پار سے 15 دہشت گرد داخل ہوئے، دہشت گردوں نے فرنٹیئر کور کی وردی پہن رکھی تھی ، جنہوں نے بس کو روکا اورشناخت کرکے 14 پاکستانی شہید کیے
وزیراعظم نے اپنی حکومتی ٹیم میں مزید تبدیلیوں کا اشارہ دیتے ہوئے کہا ہےکہ کپتان کا مقصد ٹیم کو جتانا ہوتا ہے اور بطور وزیراعظم ان کا مقصد اپنی قوم کو جتانا ہے اس لیے جو وزیر ملک کے لیے فائدہ مند نہیں ہوگا اسے تبدیل کردیا جائے گا۔
وزیر اعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ میں بڑے پیمانے پر ردوبدل کرتے ہوئے فواد چوہدری سمیت دیگر وزراء سے ان کے قلمدان واپس لے لیے۔ وزیراعظم ہاؤس کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق فواد چوہدری سے وزارت اطلاعات واپس لے کر
وزیر خزانہ اسد عمر نے وزارت چھوڑنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے وزرا کے قلمدانوں میں ردو بدل کرنے کا فیصلہ کیا ہے، وہ مجھ سے وزارت خزانہ واپس لے کر وزارت توانائی کا قلمدان دینا چاہتے تھے

براہ راست نشریات
برطانوی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور ان کے بیٹے اور ملک کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے مابین یمن میں جنگ سمیت دیگر اہم مسائل پر ’شدید اختلافات‘ جنم لے چکے ہیں۔
پاکستان کا المیہ یہ ہے کہ پاکستانی معاشرے میں ہر سو کالے دھن اور اندھیر نگری کا راج ہے اور اس مروجہ نظام کے باعث معاشرہ نہ صرف ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو چکا ہے بلکہافراتفری اور انتشار کی جیتی جاگتی تصویر بھی بن گیا ہے ایسے حالات میں وطن عزیز
گلگت بلتستان کا ریاست جموں کشمیر سے دو سوسالہ سیاسی اور قانونی رشتے کی داستان اندوہناک بھی ہے اور عجیب غریب بھی۔ 1840 سے 1947 تک کی تاریخ میں کہیں نظر نہیں آتا کہ گلگت بلتستان اور لداخ کے لوگ مہاراجہ کی حکومت سے خوش رہا ہو

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں