Saturday, 25 November, 2017
جمہوریت سے متعلق مواد تعلیمی نصاب میں شامل کرنے کی سفارش

جمہوریت سے متعلق مواد تعلیمی نصاب میں شامل کرنے کی سفارش

 

اسلام آباد ۔ ایک ایسے وقت میں جب پاکستان کی بڑی جامعات کے طلبہ میں انتہا پسند رجحانات کے کچھ عملی نمونے سامنے آنے پر تشویش کے ساتھ ساتھ تعلیمی نظام و نصاب پر توجہ دینے کی باتیں کی جا رہی ہیں، ملک کے ایوان بالا 'سینیٹ' نے ایک ایسی قرارداد منظور کی ہے جس میں جمہوریت اور جمہوری اقدار کو نصاب تعلیم میں شامل کرنے کا کہا گیا ہے۔

قرارداد میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ شہریوں کو ان کے جمہوری حقوق کے ساتھ ساتھ فرائض کی تعلیم اور مہذب معاشرے میں جمہوریت کی اہمیت اسکول سے ہی دینا شروع کی جائے۔

یہ قرارداد پیپلزپارٹی سے تعلق رکھنے والی سینیٹر سحر کامران نے پیش کی تھی جسے پیر کو ایوان نے منظور کیا تھا۔

منگل کو وائس آف امریکہ سے بات کرتے ہوئے سینیٹر سحر کامران کا کہنا تھا کہ یہ بہت ضروری ہے کہ نوجوان نسل جس نے ملک کی باگ ڈور سنبھالنی ہے اسے اپنی ذمہ داریوں، بنیادی حقوق اور پاکستان کے خدوخال واضح کرنے والے آئین کے بارے میں آگاہی ہو۔

"اس کے بہت دور رس نتائج ہوں گے۔ آئین پڑھایا جائے۔ شہری حقوق و فرائض کی تعلیم ہو۔ جمہوریت کو پڑھایا جائے۔۔ آج کل جو لگتا ہے کہ لوگ اپنے بنیادی حقوق کے لیے کھڑے نہیں ہوتے تو اس کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ ان کو آگاہی نہیں ہے اور اسی وجہ سے بار بار جمہوری عمل کو دھچکا لگتا ہے۔ اسی لیے ہم صحیح سمت میں سفر نہیں کر سکے۔"

قرارداد کی ایوان سے منظوری ایک اچھی پیش رفت تو ہے لیکن ان مندرجات کو عملی طور پر نافذ کرنا ایک مشکل اور وقت طلب معاملہ ہے جس سے یہ قرارداد پیش کرنے والی سینیٹر بھی اتفاق کرتی ہیں۔

سینیٹر سحر کامران نے کہا کہ وہ قائمہ کمیٹی برائے وفاقی تعلیم کی بھی رکن ہیں لہذا وہ پوری کوشش کریں گی کہ اس عمل کو تیز کرنے کے لیے اقدام کیے جائیں، کیونکہ ان کے بقول کل کا پاکستان اگر مضبوط بنانا ہے تو یہ کرنا ہوگا۔ آنے والی نسل کو شعور دینا ہوگا اور ایسا نہیں ہوتا تو یہ بہت بڑی ناانصافی ہوگی۔

"تعلیمی اداروں میں جو شدت پسندی کی طرف رغبت نظر آ رہی ہے اس کی وجہ یہی ہے کہ ہم نے ان کو جو بنیادی ذمہ داریاں ہیں، بنیادی حقوق ہیں، آئین کے مطابق جو بنیادی ضابطہ اخلاق ہے وہ سکھایا ہی نہیں۔ وہ ذمہ داریاں اور حقوق سب بتانا ہوگا اور اسکول سے سکھانا ہوگا تاکہ ہم اچھے مضبوط ذہن کے ساتھ اپنے آنے والی نسل کو پروان چڑھائیں جو ذمہ داری کے ساتھ اپنا کردار ادا کریں۔" بہ شکریہ وائس اف امریکہ اردو

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  46974
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
سعودی سرکاری خبر رساں ایجنسی SPA کے حوالہ سے بتایا ہے کہ برطانوی وزیر خارجہ نے باغی حوثی ملیشیا کی جانب سے ریاض شہر پر بیلسٹک میزائل داغے جانے کی شدید مذمت کی اور شہریوں کو دانستہ طور پر نشانہ بنانے کی کوشش کو قابل ملامت قرار دیا۔
قطرکی جانب سے کہا گیا ہے کہ قطری نیوایجنسی کی ویب سائٹ کو نا معلوم ہیکرز نے ہیک کرلیا تھا جس پرجعلی اورجھوٹی خبریں پوسٹ کی گئیں جبکہ بعد میں ان خبروں اوررپورٹس کو ویب سائٹ سے ہٹا دیا گیا۔

مقبول ترین
اسلام آباد انتظامیہ کی جانب سے دھرنے کے شرکاء کو دی گئی 12 بجے کی ڈیڈ لائن ختم ہوگئی ہے تاہم فیض آباد کے مقام پر مظاہرین کی جانب سے دھرنا جاری ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ انتظامیہ ڈیڈ لائن میں اضافہ کردیا ہے اور کہا ہے
دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لیے سعودی عرب کی سربراہی میں قائم اسلامی ممالک کی افواج کے اتحاد کی سرکاری ویب سائٹ متعارف کرا دی گئی ہے۔ دہشت گردی مخالف اسلامی فوجی اتحاد‎ (آئی ایم سی ٹی سی) کی ویب
سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کا کہنا ہے کہ کرپشن کے خلاف سعودی عرب میں ہونے والی حالیہ کارروائی کو تخت حاصل کرنے کی کوشش قرار دینا مضحکہ خیز ہے۔ انہوں نے ایران کے رہبرِ اعلیٰ آیت اللہ خامنہ ای کے بارے میں
اسلام آباد انتظامیہ نے دھرنے کے شرکا کو آج رات 12 بجے تک فیض آباد خالی کرنے کی وارننگ جاری کردی جب کہ حکم پر عملدرآمد نہ ہونے کی صورت میں آپریشن کا عندیہ دیا گیا ہے۔ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ آپریشن کی تمام ذمہ

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں