Tuesday, 15 October, 2019
’’سینیٹر فرحت اللہ بابر سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع سے مستعفی‘‘

’’سینیٹر فرحت اللہ بابر سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع سے مستعفی‘‘
فائل فوٹو

اسلام آباد ۔ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) سے تعلق رکھنے والے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع سے استعفیٰ دے دیا۔ فرحت اللہ بابر نے سینیٹ کمیٹی کے جی ایچ کیو کے دورے کی مخالفت کرتے ہوئے زور دیا کہ پارلیمنٹ کو جی ایچ کیو نہیں جانا چاہیے۔

معلوم ہوا ہے کہ فرحت اللہ بابر کی جگہ سینیٹر فاروق ایچ نائیک کو نامزد کردیا گیا ہے۔

جیونیوز کے مطابق فرحت اللہ بابر نے استعفے کی کوئی ٹھوس وجہ نہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ کچھ وجوہات کی بنا پر اب دفاع کمیٹی کا ممبر نہیں ہوں۔ فرحت اللہ بابر نے مستعفی ہونے کی وجوہات بتانے سے گریز کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ نہ پوچھا جائے کہ استعفیٰ کیوں دیا

البتہ فرحت اللہ بابر کا کہنا تھا کہ میں نے کہا تھا جی ایچ کیو والے پارلیمان میں آکر بریفنگ دیں، جب 2003 میں سینیٹرتھا تب بھی کہا تھا کہ پارلیمان کوجی ایچ کیونہیں جانا چاہیے، تو اس وقت انہوں نے کہا کہ سیکیورٹی معاملات ہیں، ہم بریفنگ کا مواد دکھانا چاہتے ہیں جس پر میں نے کہا تھا جی ایچ کیو کا مواد 15 کلومیٹر کے فاصلے پر لانا کوئی مسئلہ نہیں ہونا چاہیے۔ 

ڈان نیوز کے مطابق فرحت اللہ بابر نے سوال اٹھایا کہ ’’کیا جی ایچ کیو حساس دستاویزات 15 کلومیٹر تک بھی نہیں لا سکتا؟ کیا جی ایچ کیو ان دستاویزات کی 15 کلومیٹر تک بھی حفاظت نہیں کر سکتا؟‘‘۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کرسکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  80836
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
یہ ایک عام تاثر ہے کہ انٹرنیٹ قدرے غیر محفوظ پلیٹ فارم ہے اور یہ خیال کسی حد تک درست بھی ہے، مگر ساتھ ہی انٹرنیٹ کے پلیٹ فارم کو غیر محفوظ بنانے کی ہم خود ہی اجازت دیتے ہیں۔

مقبول ترین
وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ پاکستان خطے میں امن اور استحکام کے لئے اپنا کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔ ایرانی صدر سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا کہ پاکستان اور
اسلام آباد میں وزیراعظم آفس کے سامنے مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم کیخلاف انسانی زنجیر بنائی گئی۔ وزیراعظم عمران خان نے بھی اس تقریب میں شرکت کی اور قوم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی فوج نے مقبوضہ کشمیر میں
برطانوی پولیس نے 2016 میں برطانیہ سے بیٹھ کر پاکستان میں نفرت انگیز تقریر کرنے سے متعلق تفتیش میں متحدہ قومی مومنٹ (ایم کیو ایم) کے بانی الطاف حسین پر دہشت گردی کی دفعہ کے تحت فرد جرم عائد کردی۔
وزیراعظم کی چین کے صدر شی جن پنگ سے ملاقات ہوئی جس میں مقبوضہ کشمیر کی صورت حال اور علاقائی سیکیورٹی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزیراعظم عمران خان اور چین کے صدر شی جن پنگ کے درمیان بیجنگ کے اسٹیٹ گیسٹ ہاؤس میں ملاقات ہوئی۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں