Sunday, 16 June, 2019
’’قومی اسمبلی میں نہ پہنچنے والے 11 پارٹی سربراہان‘‘

’’قومی اسمبلی میں نہ پہنچنے والے 11 پارٹی سربراہان‘‘

 

 

انتخابات 2018 کے دوران حیران کن طور پر کئی پارٹی سربراہان اپنی شکست پر کامیاب نہ ہوسکے جس کے بعد وہ قومی اسمبلی کی دوڑ سے باہر ہوگئے۔ یہ پہلا موقع ہے کہ گزشتہ کئی انتخابات میں کامیاب ہوکر اسمبلی میں پہنچنے والے پارٹی سربراہان اس بار قومی اسمبلی کا حصہ نہیں ہوں گے۔ان میں نمایاں نام کچھ اس طرح ہیں :

1۔ مولانا فضل الرحمان (سربراہ ایم ایم اے)
مذہبی جماعتوں کے اتحاد متحدہ مجلس عمل کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے قومی اسمبلی کی 2 نشستوں پر انتخاب لڑا اور انہیں دونوں پر شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

این اے 38 ڈیرہ اسماعیل خان سے مولانا فضل الرحمان کو تحریک انصاف کے علی امین گنڈا پور نے شکست دی ہے، فاتح امیدوار علی امین گنڈا پور نے 80236 ووٹ حاصل کیے اور انہوں نے مولانا فضل الرحمان کو 34 ہزار 779 ووٹوں سے شکست ہوئی اور وہ 45457 ووٹ حاصل کرسکے۔

مولانا فضل الرحمان کو این اے 39 ڈیرہ اسماعیل خان سے بھی شکست کا سامنا کرنا پڑا اور اس نشست پر بھی تحریک انصاف کے امیدوار کامیاب ہوئے۔

پی ٹی آئی کے یعقوب شیخ نے 79150 ووٹ لیے جب کہ ان کے مدمقابل مولانا فضل الرحمان 51920 ووٹ حاصل کرسکے۔

2۔ اسفند یار ولی (سربراہ عوامی نیشنل پارٹی)
عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی نے قومی اسمبلی کا انتخاب اپنے آبائی علاقے چار سدہ سے لڑا لیکن وہ اس بار اپنی نشست پر کامیاب نہ ہوسکے۔

حلقہ این اے 24 چار سدہ سے اسفند یار ولی کو تحریک انصاف کے فضل محمد خان نے شکست دی، فاتح امیدوار نے 83495 ووٹ حاصل کیے جن کے مقابلے میں اسفند یار ولی 59483 ووٹ حاصل کرسکے۔

3۔ محمود خان اچکزئی (سربراہ پشتونخوا ملی عوامی پارٹی)
پشتونخوا ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی نے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 263 قلعہ عبداللہ سے انتخاب لڑا جنہیں متحدہ مجلس عمل کے صلاح الدین نے شکست دی۔

 ایم ایم اے کے صلاح الدین 37974 ووٹ کے ساتھ کامیاب قرار پائے جبکہ ان کے مقابلے میں محمود خان اچکزئی 21400 ووٹ ہی حاصل کرسکے۔

4۔ سراج الحق (امیر جماعت اسلامی، امیدوار ایم ایم اے)
متحدہ مجلس عمل کے امیدوار اور امیر جماعت اسلامی سراج الحق بھی قومی اسمبلی کا الیکشن ہار گئے، انہیں آبائی حلقے این اے 7 لوئر دیر سے تحریک انصاف کے امیدوار محمد بشیر خان نے شکست دی۔

5۔ آفتاب شیر پاو ( سربراہ قومی وطن پارٹی)
قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب احمد خان شیرپاو نے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 23 چارسدہ سے انتخاب لڑا لیکن وہ اپنی سیٹ نہ بچا سکے۔

اس نشست پر تحریک انصاف کے امیدوار انور تاج نے کامیابی حاصل کی اور انہوں نے آفتاب شیرپاو کو بڑے فرق سے شکست دی۔

6۔ جام کمال خان ( صدر بلوچستان عوامی پارٹی)
سربراہ بلوچستان عوامی پارٹی جام کمال خان نے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 272 لسبیلہ کم گوادر سے انتخاب لڑا جنہیں آزاد امیدوار محمد اسلم بھوتانی نے شکست دی۔

قومی اسمبلی کے لیے ناکام ہونے والے دیگر پارٹی سربراہان میں پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفی کمال، عوامی راج پارٹی کے چیئرمین جمشید دستی کو چار حلقوں سے شکست ہوئی۔

تحریک انصاف گلالئی کی سربراہ عائشہ گلالئی کو چار حلقوں سے شکست ہوئی، مہاجر قومی موومنٹ کے آفاق احمد اور سنی تحریک کے سربراہ ثروت اعجاز قادری بھی کراچی سے ایک ایک نشست پر الیکشن ہار گئے۔ بشکریہ جیو نیوز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  58254
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پیپلزپارٹی نے حکومت کیخلاف فوری طور پر احتجاجی تحریک نہ چلانے پر اتفاق کیا ہے۔ اپوزیشن ذرائع نے جیونیوز کو بتایا کہ پاکستان پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے بیک ڈور رابطوں میں فوری طور پر کسی قسم کی احتجاجی
چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ انصاف میں تاخیر کی ایک وجہ عدلیہ کی نااہلی بھی ہے لہذا ہمیں اپنے گربیان میں جھانکنا پڑے گا۔ لاہور میں سپریم کورٹ بار سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس پاکستان کا کہنا تھا کہ آج سب سے زیادہ
چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ پاناما جے آئی ٹی میں ایجنسی والوں کو صرف تڑکا لگانے کیلیے رکھا ہوگا۔ سپریم کورٹ میں جعلی اکاؤنٹس کیس کی سماعت ہوئی جس کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ اس کیس میں بھی جے آئی ٹی تشکیل
پاکستان الیکٹرونک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی یعنی پیمرا نے تمام سیٹلائٹ ٹی وی چینلوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ نئے ڈیموں کی تعمیر کے لیے فنڈ جمع کرنے کی خاطر مفت اشتہارات چلائیں اور طویل دورانیے کی خصوصی نشریات کا اہتمام کریں۔

مقبول ترین
لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید کو ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی تعینات کردیا گیا ہے جب کہ دیگر 5 لیفٹیننٹ جنرل کے بھی تبادلے کیے گئے ہیں۔ پاک فوج کے تعلقات عامہ کے ادارے آئی ایس پی آر کے مطابق پاک فوج میں اعلیٰ سطح پر معمول کے تبادلے کیے گئے ہیں
پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ جتنے کیس بنانے ہیں بنا لیں، میرے پورے خاندان کو جیل بھیج دیں، 1973 کے آئین، عوامی حقوق، لاپتاافراد ، سول کورٹس اور 18ویں ترمیم پر موقف نہیں بدلیں گے۔
قومی احتساب بیورو (نیب) نے میگا منی لانڈرنگ کیس میں سابق صدر آصف علی زرداری کی ہمشیرہ فریال تالپور کو گرفتار کر لیا ہے۔ نیب نے فریال تالپور کے طبی معائنہ کیلئے ڈاکٹرز کی ٹیم کو طلب کر لیا ہے، انھیں کل احتساب عدالت میں پیش
سابق وزیراعظم نواز شریف کا کہنا ہے کہ عمران خان کا وقت پورا ہوچکا ہے اور وہ جلد انجام کو پہنچنے والے ہیں۔ کوٹ لکھپت جیل میں مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے سابق وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کی، اس موقع پر رہنماؤں سے

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں