Wednesday, 21 August, 2019
چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کیخلاف تحاریک عدم اعتماد ناکام

چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کیخلاف تحاریک عدم اعتماد ناکام

اسلام آباد ۔ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد کی کامیابی کیلئے اپوزیشن کو 53 ووٹ درکار تھے، 64 اراکین نے ہاتھ کھڑے کرکے یقین دہانی کرائی لیکن صرف 50 ووٹ پڑے۔ میڈیا کے مطابق سینیٹ کے معرکے میں متحدہ اپوزیشن کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے کیونکہ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد ناکام ہو گئی ہے۔

قرارداد کی حمایت میں 50 اور مخالفت میں 45 ووٹ پڑے جبکہ 5 ووٹ مسترد ہوئے۔ پریذائیڈنگ آفیسر بیرسٹر سیف نے چیئرمین سینیٹ کیخلاف تحریک عدم اعتماد ناکام ہونے کا اعلان کیا۔

خیال رہے کہ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد کی کامیابی کیلئے 53 ووٹ چاہیے تھے لیکن حق میں صرف 50 ووٹ پڑے۔

اس سے قبل صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کی سمری پر بلائے گئے سینیٹ اجلاس کی صدارت پریزائیڈنگ افسر کے فرائض سرانجام دینے والے بیرسٹر سیف نے کی۔

قائد حزب اختلاف راجہ ظفر الحق نے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد پیش کی تو اس کی حمایت میں اپوزیشن کے 64 اراکین اپنی نشستوں پر کھڑے ہو گئے اور اپنی حمایت کی یقین دہانی کرائی۔

ووٹنگ کا طریقہ کار بتاتے ہوئے پریزائیڈنگ افسر بیرسٹر سیف نے ہدایت جاری کیں کہ بیلٹ پیپر پر مہر کے علاوہ کوئی نشان، موبائل فون یا کسی آلے سے اس کی تصویر کھینچنا منع ہے، ایسا کرنے والے کو گارڈز کے حوالے کیا جائے گا۔ انہوں نے ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ ووٹنگ کا عمل مکمل ہونے تک کسی بھی رکن کو ایوان سے باہر جانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ تاہم تاخیر سے آنے والے رکن کو ہال میں آنے کی اجازت ہوگی لیکن وہ ووٹنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد ہی ایوان سے باہر جا سکے گا۔

اس کے بعد تحریکِ عدم اعتماد پر خفیہ رائے شماری کے ذریعے ووٹنگ کی گئی۔ ووٹنگ میں 100 ارکان نے حصہ لیا، جماعت اسلامی کے دو سینیٹرز سراج الحق اور مشتاق احمد جبکہ مسلم لیگ ن کے چوہدری تنویر اجلاس میں شریک نہیں ہوئے۔ مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر حافظ عبدالکریم نے پہلا ووٹ کاسٹ کیا۔

اپنی فتح کے بعد میڈیا سے گفتگو میں چیئرممین سینیٹ صادق سنجرانی کا کہنا تھا کہ ووٹ دینے پر حکومتی اور اپوزیشن سینیٹرز کا مشکور ہوں۔ صحافی نے ان سے سوال کیا کہ حزب اختلاف کے کون سے ارکان نے آپ کو ووٹ ڈالا؟ تو چیئرمین سینیٹ نے کوئی جواب نہیں دیا اور کہا کہ ووٹ دینے پر حکومتی اور اپوزیشن سینیٹرز کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادار

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  46336
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
وادی نیلم میں طوفانی بارش اور سیلاب سے تبلیغی جماعت کے 18 افراد سمیت 22 افراد جاں بحق جبکہ 7 زخمی ہوگئے۔ حکام کے مطابق مظفرآباد سے 70 کلومیٹر شمال مشرق میں وادی نیلم میں لیسوا بالا گاؤں میں کلاؤڈبرسٹ (طوفانی بارش) سے مسجد
اپوزیشن نے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف تحریک عدم اعتماد جمع کرادی۔ اپوزیشن جماعتوں نے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف تحریک عدم اعتماد سیکرٹری سینیٹ کے پاس جمع کرادی، تحریک عدم اعتماد راجا ظفر الحق
قومی اسمبلی میں اسپیکر اسد قیصر کی صدارت میں اجلاس جاری ہے جس میں اپوزیشن نے وفاقی بجٹ کو مسترد کرکے حکومت سے دوبارہ بجٹ پیش کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت قومی اسمبلی کے بجٹ اجلاس کا آغاز ہوا تو چیئرمین
وفاقی کابینہ نے ڈپٹی چیئرمین نیب حسین اصغر کو تحقیقاتی کمیشن کا سربراہ بنانے کی منظوری دے دی ہے۔ میڈیا کے مطابق وفاقی کابینہ نے سابق پولیس افسر حسین اصغر کو گزشتہ 10 سالوں میں لیے ئے قرضوں کی تحقیقات کیلئے بنائے گئے

مقبول ترین
پاک فوج نے لائن آف کنٹرول (ایل او سی) پر بھارتی فوج کی بلااشتعال فائرنگ اور سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزیوں کا منہ توڑ جواب دیا جس کے نتیجے میں ایک افسر سمیت 6 بھارتی فوجی ہلاک اور 2 بنکرز تباہ ہوگئے۔
پاکستان نے مسئلہ کشمیر کو عالمی عدالت انصاف میں لے جانے کا اصولی فیصلہ کر لیا ہے۔ میڈیا کے مطابق آئندہ ماہ جنیوا میں انسانی حقوق کمیشن اجلاس بلانے کیلئے وزارت خارجہ نے تیاری شروع کر دی ہے اور اس سلسلے میں سابق سیکرٹری
وزیراعظم عمران خان نے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں 3 سال کی توسیع کردی۔ وزیراعظم آفس کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے عہدے کی موجودہ مدت مکمل ہونے کے بعد انہیں مزید 3 سال کیلئے آرمی چیف مقرر
بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت سے متعلق آرٹیکل 370 ختم کیے جانے کے بعد سے وزیراعظم عمران خان نے شدید تشویش کا اظہار کیا تھا اور وہ کشمیر کے معاملے پر بین الاقوامی برادری سے مسلسل رابطے میں ہیں۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں