Friday, 16 November, 2018
ضمانت کیس، شرجیل میمن کی درخواست پر نیب کو نوٹس جاری

ضمانت کیس، شرجیل میمن کی درخواست پر نیب کو نوٹس جاری

اسلام آباد ۔ سپریم کورٹ نے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے رہنماء اور سابق صوبائی وزیر شرجیل انعام میمن کی ضمانت کی درخواست پر قومی احتساب بیورو (نیب) کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت جنوری کے پہلے ہفتے تک ملتوی کردی تاہم اس کی حتمی تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں سابق وزیراطلاعات سندھ شرجیل میمن کی درخواست ضمانت کیس کی سماعت ہوئی، جسٹس اعجازافضل کی سربراہی میں عدالت عظمی کے تین رکنی بینچ نے سماعت کی۔
اس موقع پر شرجیل میمن کے وکیل لطیف کھوسہ نے عدالت کو بتایا کہ سندھ میں ملزم سے ضمانتی مچلکے نہیں لئے جاتے بلکہ انہیں قید کر دیا جاتا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ انعام اکبر نے چیئرمین نیب کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کے اختیار کو چیلنج کر رکھا ہے جس پر عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ایک کیس میں نوٹس جاری ہو چکا تاہم باقی افراد کے لیے بھی کیسز بھی جاری کر دیتے ہیں۔ جبکہ انعام اکبر نے چیئرمین نیب کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کے اختیار کو چیلنج کرنے پر دلائل دئیے۔

عدالت نے دلائل سننے کے بعد رجیل میمن کی درخواست ضمانت اورانعام اکبر اور دیگر ملزمان کی درخواستوں پر بھی نیب کو نوٹسز جاری کرتے ہوئے سماعت جنوری کے پہلے ہفتے تک ملتوی کردی تاہم اس کی حتمی تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا ہے۔

سماعت کے بعد میڈیا سے گفتگو میں لطیف کھوسہ نے نیب کو تنقید کا نشانہ بناتے کہا کہ اداروں کو امتیازی سلوک روا نہیں رکھنا چاہئے، کچھ لوگ نیب زادے جبکہ کچھ نیب زدہ ہیں، جس میں صرف نیب زدہ ہی جیل جاتے ہیں۔ کچھ لوگ عدالتوں میں ایسے پیش ہوتے ہیں جیسے شاہی دربار میں آتے ہوں۔انہوں نے بتایا کہ سندھ اسمبلی میں اس سلوک کے حوالے سے قرارداد بھی پیش کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ رواں برس 23 اکتوبر کو سندھ ہائی کورٹ نے صوبائی محکمہ اطلاعات میں 5 ارب 76 کروڑ روپے کی مبینہ بدعنوانی کے معاملے پر شرجیل انعام میمن سمیت دیگر ملزمان کی درخواست ضمانت مسترد کردی تھی جس کے بعد نیب کی ٹیم نے انہیں عدالت سے باہر آتے ہی گرفتار کرلیا تھا۔
سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس احمد علی ایم شیخ کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے پی پی پی رہنما سمیت 13 ملزمان کی ضمانت کی درخواست مسترد کردی تھی۔

بعد ازاں شرجیل میمن نے چھبیس نومبر کو شرجیل میمن نے لطیف کھوسہ کے توسط سے سندھ ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف اپیل سپریم کورٹ میں جمع کرائی تھی، درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ سندھ ہائیکورٹ نے ان کی درخواست ضمانت پر حقائق و قانون کے برخلاف فیصلہ دیا کیونکہ نیب کے پاس شرجیل میمن کے خلاف کوئی ثبوت نہیں، ان کی گرفتاری نیب قوانین کی خلاف وزری ہے۔ 

درخواست میں کہا گیا تھا کہ شرجیل میمن کے خلاف عہدہ سنبھالنے کے صرف پانچ روز بعد ہی نیب کو شکایت جمع کرائی گئی اور درخواست گزار زینت جہاں نے بھی صرف ٹرانسفر، پوسٹنگ اور خواتین کو ہراساں کرنے سے متعلق شکایت کی تھی۔ ایسی درخواست پر کرپشن کی تحقیقات کیسے کی جاسکتی تھیں لہذا سندھ ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے۔

درخواست میں باور کرایا گیا تھا کہ سپریم کورٹ اسی ریفرنس میں دوسرے ملزم انعام اکبر کو عبوری ضمانت دے چکی ہے اس لئے شرجیل انعام میمن کی ضمانت کے بھی احکامات جاری کئے جائیں۔

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  8936
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
سپریم کورٹ نے تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے نومبر 2017 میں فیض آباد دھرنے کے معاملے پر لیا گیا از خود نوٹس سماعت کے لیے مقرر کردیا۔ جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ 16 نومبر کو کیس کی سماعت کرے گا جب کہ
وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ احتجاج کے دوران آئین، عوام، سیاسی اور فوجی قیادت کی توہین کی گئی ریاست اسے بھولے گی نہیں اور یہ معاملہ مسلک کا نہیں بغاوت کا ہے۔ کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری نے کہا کہ احتجاجی
وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات نے کہا ہے کہ پاکستان کا آئین قران وسنت کے تابع ہے، ہم پاکستان کو بنانا ری پبلک نہیں بننے دیں گے۔ ریاست کو چیلنج کرنا بغاوت کے زمرے میں آتاہے، کوئی اس گمان میں نہ رہے کہ ریاست کمزور ہے۔
چیف جسٹس پاکستان نے آئی جی اسلام آباد کے تبادلے کا نوٹس لے لیا۔ سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ ایک کیس کی سماعت کررہا تھا تو اس دوران چیف جسٹس نے انسپکٹر جنرل پولیس اسلام آباد

مزید خبریں
میڈیا کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس علی اکبر قریشی نے اظہر صدیق ایڈوووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی۔ جس میں سگریٹ نوشی پر پابندی کے قوانین کی پاسداری نہ کرنے کی نشاندہی دہی کی گئی۔
صوبہ بلوچستان کے ضلع تربت میں کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھنے والے 15 اہم کمانڈروں سمیت تقریباً 200 فراری ہتھیار ڈال کر قومی دھارے میں شامل ہوگئے ہیں۔ تقریب کے مہمان خصوصی وزیراعلیٰ بلوچستان میرعبدالقدوس بزنجو تھے۔ اب تک ایک ہزار 8 سو کے قریب فراری ہتھیار ڈال کر قومی دھارے میں شامل ہوچکے ہیں۔
سابق وزیراعظم اور حکمران جماعت کے سربراہ میاں محمد نواز شریف کی کل سعودی عرب روانگی کا امکان ہے۔ جہاں وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف پہلے سے موجود ہیں۔ جبکہ وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق بھی پی آئی اے کی پرواز کے ذریعے اہلخانہ کے ہمراہ سعودی عرب روانہ ہوگئے ہیں
وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف پورے عزم سے لڑ رہے ہیں ، دہشت گردوں کا نیٹ ورک توڑ دیا ہے ، آخری دہشت گرد کے خاتمے تک جنگ لڑیں گے۔ وزیر اعظم نواز شریف سے پشاور میں مسلم لیگ ن کے سینیٹرز اور ارکان قومی

مقبول ترین
لاپتہ ہونے والے ڈپٹی ڈائریکٹر ایاز خان خان پورڈیم پر تعینات تھے، سی ڈی اے کے افسر ایازخان کی بیٹی کی کل شادی ہے۔ اہلیہ نے پولیس کو بیان دیتے ہوئے کہا جمعرات کی شام ساڑھے 4 بجے میرے خاوند دفتر سے نکلے، خاوند نے جی 13 میں واقع اپنے گھر آنا تھا
سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں زلفی بخاری کے بطور معاون خصوصی وزیراعظم تقرری کی نااہلی کے لیے درخواستوں پر چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار کی سربراہی میں سماعت ہوئی، زلفی بخاری سماعت کے دوران عدالت میں وکیل اعتزاز احسن
سپریم کورٹ آف پاکستان میں تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے نومبر 2017 میں فیض آباد دھرنے کے معاملے پر لیے گئے از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران اٹارنی جنرل کی غیرموجودگی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ
غیر ملکی خبر ایجنسیوں کے مطابق ٹرمپ انتظامیہ نے جمال خاشقجی کے قتل کے ردِ عمل میں پہلی مرتبہ عملی قدم اٹھاتے ہوئے ان 17 سعودی شہریوں پر پابندیاں عائد کی ہیں جو صحافی کے قتل کا منصوبہ بنانے اور اسے عملی جامہ پہنانے والی ٹیم کا حصہ تھے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں