Thursday, 14 November, 2019
چیئرمین سینیٹ کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی قرارداد جمع

چیئرمین سینیٹ کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی قرارداد جمع

اسلام آباد ۔ اپوزیشن نے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف  تحریک عدم اعتماد جمع کرادی۔ اپوزیشن جماعتوں نے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف تحریک عدم اعتماد سیکرٹری سینیٹ کے پاس جمع کرادی، تحریک عدم اعتماد راجا ظفر الحق، جاوید عباسی، شیری رحمان  اور غفور حیدری نے جمع کرائی۔ تحریک کے ساتھ اپوزیشن کی جانب سے سینیٹ کا اجلاس بلانے کی ریکوزیشن بھی جمع کرائی گئی ہے۔

قرارداد میں کہا گیا ہے کہ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی ایوان کے کسٹوڈین کے طور پر اعتماد نہیں رکھتے۔ ایوان اس عزم کا اظہار کرتا ہے کہ موجودہ چیئرمین سینیٹ ایوان کے ممبران کا اعتماد کھو چکے ہیں۔

اس سے قبل پارلیمنٹ ہاؤس کے کمیٹی روم میں سینیٹ میں قائد حزب اختلاف سینیٹر راجا  ظفرالحق کی صدارت میں اپوزیشن جماعتوں کا اجلاس ہوا جس میں سینیٹر مشاہد اللہ خاں، شیری رحمان، مولاناعطاالرحمان، عثمان کاکڑ، آصف کرمانی، میر کبیر محمد شاہی، پرویزرشید، ستارہ ایاز، رحمان ملک، سسی پلیجو اور بہرمند خان تنگی نے شرکت کی تاہم جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد اور سینیٹر سراج الحق اجلاس میں شریک نہیں ہوئے۔

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف قرارداد شیری رحمان اور (ن) لیگی سینیٹر جاوید عباسی نے تیار کی جس پر حزب اختلاف کی جماعتوں کے مختلف سینیٹرز نے دستخط کئے۔

سیکریٹری سینیٹ نے اس حوالے سے بتایا کہ ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ کسی چیئرمین سینیٹ کے خلاف تحریک عدم اعتماد آئی ہے، قانون کی رو سے جس دن یہ عدم اعتماد کی قرارداد پیش ہوگی چیئرمین سینیٹ صرف اس دن اجلاس کی صدارت نہیں کرسکیں گے اپوزیشن کی ریکوزیشن پر اجلاس بلانے کا اختیار چیئرمین سینیٹ کے پاس ہے۔

واضح رہے کہ اپوزیشن کی رہبر کمیٹی نے چیئرمین سینیٹ کا منصب مسلم لیگ (ن) کو دینے پر اتفاق کیا ہے جب کہ ڈپٹی چیئرمین کا عہدہ پیپلز پارٹی ہی کے پاس رہے گا۔ رہبر کمیٹی کا اگلا اجلاس 11 جولائی کو ہوگا اور اسی روز نئے چیئرمین سینیٹ کے نام کا اعلان کیا جائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  33345
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد کی کامیابی کیلئے اپوزیشن کو 53 ووٹ درکار تھے، 64 اراکین نے ہاتھ کھڑے کرکے یقین دہانی کرائی لیکن صرف 50 ووٹ پڑے۔ میڈیا کے مطابق سینیٹ کے معرکے میں متحدہ اپوزیشن
وادی نیلم میں طوفانی بارش اور سیلاب سے تبلیغی جماعت کے 18 افراد سمیت 22 افراد جاں بحق جبکہ 7 زخمی ہوگئے۔ حکام کے مطابق مظفرآباد سے 70 کلومیٹر شمال مشرق میں وادی نیلم میں لیسوا بالا گاؤں میں کلاؤڈبرسٹ (طوفانی بارش) سے مسجد
قومی اسمبلی میں اسپیکر اسد قیصر کی صدارت میں اجلاس جاری ہے جس میں اپوزیشن نے وفاقی بجٹ کو مسترد کرکے حکومت سے دوبارہ بجٹ پیش کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت قومی اسمبلی کے بجٹ اجلاس کا آغاز ہوا تو چیئرمین
وفاقی کابینہ نے ڈپٹی چیئرمین نیب حسین اصغر کو تحقیقاتی کمیشن کا سربراہ بنانے کی منظوری دے دی ہے۔ میڈیا کے مطابق وفاقی کابینہ نے سابق پولیس افسر حسین اصغر کو گزشتہ 10 سالوں میں لیے ئے قرضوں کی تحقیقات کیلئے بنائے گئے

مقبول ترین
وزیراعظم عمران خان نے کرتار پور راہداری اور دنیا کے سب سے بڑے گوردوارے دربار صاحب کا افتتاح کردیا۔ کرتار پور راہداری کے افتتاح کے موقع پر سکھ مت کے بانی بابا گرونانک دیو جی کے 550 ویں جنم دن کی تقریبات میں شرکت کے
بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے مرکزی حکومت کو حکم دیا کہ 3 سے 4 ماہ کے اندر اسکیم تشکیل دے کر زمین کو مندر کی تعمیر کے لئے ہندووں کے حوالے کرے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق چیف جسٹس رنجن
وزیراعظم عمران خان نے حکومتی مذاکراتی ٹیم سے ملاقات میں کہا ہے کہ میں کسی بھی صورت میں اپنا استعفیٰ نہیں دوں گا، اگر شرط صرف استعفیٰ کی ہے تو پھر مذاکرات کا کیا فائدہ ہے؟ وزیردفاع پرویز خٹک کی سربراہی میں حکومتی مذاکرات
رہبر کمیٹی کے رکن اور رہنما جے یو آئی (ف) اکرم درانی کا کہنا ہے کہ آزادی مارچ 2 روز کے بعد نیا رخ اختیار کرے گا۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران اپوزیشن رہبر کمیٹی کے رکن اکرم درانی کا کہنا تھا کہ افسوس ہے موسم کے حوالے

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں