Monday, 27 September, 2021
کوئی مانے یا نہ مانے سندھ میں بہترین کام ہوئے ہیں، بلاول بھٹو زرداری

کوئی مانے یا نہ مانے سندھ میں بہترین کام ہوئے ہیں، بلاول بھٹو زرداری

کراچی ۔ کراچی میں بے نظیر بھٹو کی سالگرہ کی مناسبت سے منعقدہ تقریب سے خطاب کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہمیں جمہوری پاکستان میں محنت کرنے والے کو پھل دینا ہے، ملک میں غریب سے روٹی ،کپڑا اور مکان چھیننا جارہا ہے، ہمیں 1973کے آئین، اپنے انسانی، جمہوری اور معاشی حقوق کا دفاع کرنا ہے، ہم بینظیر بھٹو کے نظریے پر حملہ کرنے والوں کے اقدام کو ناکام بنائیں گے۔

چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ سندھ پر معاشی حملے ہورہے ہیں، اسے وسائل نہیں دئیے جارہے، وفاقی حکومت ایک صوبے کو نشانہ بنا کراس کے ہر اسکیم کو ختم کررہی ہے، وعدہ کیا گیا تھا کہ کراچی کے لئے وفاق اور صوبہ مل کر کام کرے گا، کراچی کے لئے ایک کھرب روپے پیکیج کی بات ہوئی مگر ملا کچھ نہیں، وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے اپنا کیس عوام کے سامنے رکھا۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ 60 سال بعد پانی کی سب سے بڑی کمی کا سامنا کرنا پڑا، حال ہی میں ارسا کے خلاف پانی کے معاملے پر پیپلز پارٹی نے آواز اٹھائی، پیپلز پارٹی کے احتجاج کی وجہ سے وفاق کو اپنے مؤقف سے پیچھے ہٹنا پڑا۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے کہا کہ کوئی مانے یا نہ مانے سندھ میں بہترین کام ہوئے ہیں، سندھ میں باقی صوبوں کی نسبت زیادہ معاشی ترقی ہوئی مگر ہم واویلا نہیں کرتے، سندھ میں سب سے زیادہ کام پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے تحت کیا گیا، ہمارے دور میں کوئی سرکاری ملازم بےروزگا ر نہیں ہوا نہ ہوگا، اسٹیل مل سے 10 ہزار لوگوں کو بے روزگار کیا گیا، مزید بے روزگار ہونے کا خدشہ ہے۔

اس سے قبل بے نظیر بھٹو کے یومِ پیدائش کی مناسبت سے اپنے پیغام میں بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ایک منتخب وزیراعظم کی حیثیت سے بے نظیر بھٹو نے آئین و پارلیمان کی بالادستی کے لیے ہم آہنگی پیدا کی، عوام دوست طرز حکمرانی کے لیے ادارے قائم کیئے، اور تعیلم، صحت و روزگار کے مواقع جیسی بنیادی حقوق تک پسماندہ طبقات کی رسائی کو یقینی بنایا۔ بے نظیر بھٹو نے حکومت میں ہوں یا اپوزیشن میں، انہوں نے عوام کو ہمیشہ سب سے بڑھ کر امید دی۔ عوام دشمن قوتوں کی جانب سے بے نظیر بھٹو پر کیئے جانے والے مظالم پر انسانیت ہمیشہ شرمندہ رہے گی۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ بے نظیر بھٹو ایک تحریک کا نام ہے اور عوامی تحریکیں تاریخ کی مائیں ہوتی ہیں، نئے ادوار کو جنم دیتی ہیں،سال گذریں یا صدیاں، بینظیر بھٹو کی طویل جدوجہد، عظیم قربانی اور انسان دوست فلسفہ لازوال ہیں، بے نظیر بھٹو کی جدوجہد، قربانی اور فلسفے کی بدولت پاکستانی عوام کی حتمی فتح اب قریب ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ آج پاکستان میں گورننس ڈی ریل، ادارے یرغمال اور عوام سفاک کارٹیلز کے رحم و کرم پر ہیں، ایسے بدترین حالات میں ہر محبِ وطن پاکستانی کا دخترِ مشرق کے عوام دوست ویژن کی کمی کو محسوس کرنا فطری ردعمل ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  58024
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ قائد کے مزار پرنعرے لگانے پر اتنا طوفان کھڑا ہوگیا، کل جو معاملہ ہوا وہ انتہائی شرمناک ہے، اس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے، میں شرمندہ ہوں اور اپنا منہ دکھانے کے قابل نہیں ہوں
کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے چئیرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ نیشنل سیکیورٹی کے ایشو پر ہم متحد ہیں۔ نیشنل سیکیورٹی کے نام پر میٹنگ پر بحث نہیں کر سکتا۔ اجلاس میں ایک لفظ نہ بولنے والے ٹی وی چینلز پر باتیں کرتے ہیں۔ یہ جس کا بھی ترجمان ہے
بلاول بھٹو زرداری نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ عمران خان تو کہتے تھے کہ ریل کے حادثے پر ریل کے وزیر استعفیٰ دیں جبکہ جہاز حادثے پر وزیر ہوا بازی کو ہٹا دینا چاہیے، اب وہ طیارہ حادثے کا الزام پائلٹ اور ایئر ٹریفک کنٹرولر پر لگا رہے ہیں۔
پاکستان تحریک انصاف بلوچستان کے سابق نائب صدر صدیق خان ترین نے کہا کہ کرونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی تعداد میں اضافہ تشویشناک ہے انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس عالمی وبا سے بچاو اور پھیلاؤ کی روک تھام کیلئے موثر کردار ادا کرنا از حد ضروری ہے

مقبول ترین
نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کے بعد انگلینڈ کرکٹ ٹیم کا دورہ پاکستان بھی منسوخ ہوگیا۔ نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کی جانب سے سیکیورٹی وجوہات کو جواز بناکر اچانک دورہ پاکستان ختم کردیا گیا تھا اور اب آئندہ ماہ انگلینڈ کی میزبانی کی امیدوں پر بھی پانی پھر گیا۔
طالبان نے کابل فتح کرنے کے چار دن بعد افغانستان میں اسلامی حکومت تشکیل دینے کا اعلان کردیا۔ روسی نیوز چینل ’’آر ٹی‘‘ کی انگریزی ویب سائٹ کے مطابق افغانستان میں اسلامی حکومت یعنی امارتِ اسلامی قائم کرنے کا اعلان، افغان طالبان کے ترجمان
افغانستان کی حکومت نے طالبان کے سامنے سرنڈر کر دیا ہے۔ غیر ملکی میڈٰیا کا کہنا ہے کہ صدر اشرف غنی اپنی ٹیم کے ہمراہ ملک چھوڑ کر جا چکے ہیں۔ خبریں ہیں کہ ملک چھوڑنے سے قبل صدر اشرف غنی نے امریکی
افغانستان میں طالبان تیزی سے شہروں کا کنٹرول حاصل کرنے لگے،19 صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کر لیا، ہرات کے بعد قندھار اور لشکر گاہ کا بھی کنٹرول حاصل کر لیا ،ہرات میں طالبان سے بر سرپیکار ملیشیا کمانڈر اسماعیل خان، گورنر ہرات اور صوبائی پولیس چیف کو طالبان نے گرفتار کر لیا۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں