Thursday, 14 November, 2019
’’وفاقی حکومت نے میڈیا کورٹس بنانے کا اعلان کر دیا‘‘

’’وفاقی حکومت نے میڈیا کورٹس بنانے کا اعلان کر دیا‘‘

کراچی ۔ پاکستان میں تحریک انصاف کی حکومت نے ذرائع ابلاغ سے متعلق مقدمات کو سننے کے لیے میڈیا کورٹس کے قیام کا فیصلہ کیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان نے کراچی میں ٹی وی چینلز کے مالکان کی تنظیم پاکستان براڈ کاسٹرز ایسوسی ایشن (پی بی اے) کے وفد سے ملاقات کے بعد ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ انہوں نے میڈیا کورٹس بنانے کے لیے چینلز مالکان کو تجویز پیش کی ہے۔

فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ میڈیا عدالتوں کا مقصد میڈیا انڈسٹری کے تنازعات کو ان خصوصی عدالتوں کے ذریعے جلد حل کرنا ہے۔ ’جب حکومت یا پیمرا ٹی وی چینلز اور کیبل آپریٹرز کے خلاف کوئی ایکشن لیتی ہے تو وہ عدالت چلے جاتے ہیں اور پھر سالہا سال مقدمات چلتے ہیں۔ اس لیے حکومت پیمرا کے ساتھ مل کر میڈیا کورٹس بنانے جا رہی ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’میڈیا کورٹس صرف اور صرف میڈیا سے متعلق مقدمات کو سنیں گی۔ فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ میڈیا ورکرز کو مسائل کا سامنا ہے اور اس حوالے سے ان کی پی بی اے کے ساتھ تفصیلی بات چیت ہوئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ نئی ایڈورٹائزنگ پالیسی لائی جارہی ہے جس پر جلد علمدرآمد کیا جائے گا۔

وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات نے کہا کہ وزارت اطلاعات میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کے ساتھ مل کر ڈیجیٹلائزیشن پالیسی بھی لے کر آرہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت میڈیا ورکرز کی تنخواہوں پر سمجھوتہ نہیں کرے گی۔ 

اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ ان کی میڈیا چینلز کے مالکان سے ملاقات میں اہم باتیں ہوئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا مالکان بہت زیادہ محب وطن ہیں اور ’ہندوستان کے ساتھ میڈیا وار میں چینل مالکان کی تنظیم ملک کے دفاع کی پہلی دیوار ہے۔‘

فردوس عاشق اعوان نے امریکی صدر ٹرمپ کے کشمیر پر ثالثی کے بیان کو اجاگر کرنے پر ٹی وی چینل کے مالکان کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ میڈیا میں بیٹھے ہمارے فوجی اور سپاہی ہیں جو پاکستان کی سلامتی، خودمختاری اور شناخت کے تحفظ میں ریاست کے ساتھ کھڑے ہو کر حکومت کے بیانیے کو عوام تک پہنچانے میں پارٹنر کا کردار ادا کر رہے ہیں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ میڈیا ورکرز چینلز میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں اور ان کی مشکلات پر بھی مالکان سے بات کی ہے۔ ’حکومت نے تمام شراکت داروں کی رائے لینے کے بعد اشتہارات کی نئی پالیسی رائج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔‘

انہوں نے کہا کہ الیکٹرانک میڈیا کو ریگولیٹر پیمرا ہے جس سے چینل مالکان کو شکایات ہیں۔ ’حکومت چینل مالکان اور پیمرا کے درمیان ثالث کا کردار ادا کرے گی تاکہ ضابطہ اخلاق پر بھی عمل ہو اور کسی کے ساتھ ناانصافی بھی نہ ہو۔‘

دوسری طرف سی پی این ای نے میڈیا کورٹس کی تجویز مسترد کر دی ہے اور کہا ہے کہ سی پی این ای میڈیا سے متعلق امتیازی قوانین سازی کی سخت مخالف ہے، سی پی این ای نے پیمرا کے مسودے کو بھی مسترد کیا تھا، سی پی این ای کی طرف سے جاری کردہ بیان میں‌ کہا گیا ہے کہ میڈیا سے متعلق تنازعات کو نمٹانے کے لیے ادارے، قوانین اورقواعد موجود ہیں، اظہارکی آزادی کےفروغ کے لیے میڈیا پردباؤ کا خاتمہ ضروری ہے،

میڈیا کے معاملات کو ملک کےعام قوانین کے تحت ہی چلایا جائے، میڈیا کورٹس جیسے امتیازی اقدامات کی تجاویز کو فوری واپس لیا جائے، پاکستان میں میڈیااورصحافی بلواسطہ اوربراہ راست دباؤ کا شکار ہیں، جمہوری حکومت کا فرض بنتا ہےکہ وہ میڈیا کو درپیش دباؤ سے نجات دلائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  55207
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ اپوزیشن کے کسی جلسے اور ریلی کو نہیں روکا جائے گا۔ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس ہوا جس میں وزیراعظم نے دورہ امریکا پر حکومتی
قومی احتساب بیورو (نیب) لاہور نے شہباز شریف خاندان کیخلاف بڑی کارروائی کرتے ہوئے ان کے 150 بینک اکاؤنٹس کو منجمد کر دیا ہے۔ میڈیا کے مطابق نیب کی جانب سے اس معاملے پر سٹیٹ بینک آف پاکستان کو خط لکھا
لاہور ہائیکورٹ نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا اینڈ ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کے چیئرمین ابصار عالم کی تعیناتی کالعدم قرار دے دی۔ فیصلہ کے بعد ابصار عالم چیئرمین پیمرا کے عہدے سے سبکدوش ہوگئے۔
عدالتی حکم نامے میں کہا گیا تھا کہ ‘سیکریٹری داخلہ، گستاخانہ مواد اور غیر اخلاقی مواد کی تشہیر میں مصروف این جی اوز کی نشاندہی کریں جنہیں پاکستان کے اندر اور باہر سے فنڈنگ حاصل ہو رہی ہے۔

مقبول ترین
وزیراعظم عمران خان نے کرتار پور راہداری اور دنیا کے سب سے بڑے گوردوارے دربار صاحب کا افتتاح کردیا۔ کرتار پور راہداری کے افتتاح کے موقع پر سکھ مت کے بانی بابا گرونانک دیو جی کے 550 ویں جنم دن کی تقریبات میں شرکت کے
بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے مرکزی حکومت کو حکم دیا کہ 3 سے 4 ماہ کے اندر اسکیم تشکیل دے کر زمین کو مندر کی تعمیر کے لئے ہندووں کے حوالے کرے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق چیف جسٹس رنجن
وزیراعظم عمران خان نے حکومتی مذاکراتی ٹیم سے ملاقات میں کہا ہے کہ میں کسی بھی صورت میں اپنا استعفیٰ نہیں دوں گا، اگر شرط صرف استعفیٰ کی ہے تو پھر مذاکرات کا کیا فائدہ ہے؟ وزیردفاع پرویز خٹک کی سربراہی میں حکومتی مذاکرات
رہبر کمیٹی کے رکن اور رہنما جے یو آئی (ف) اکرم درانی کا کہنا ہے کہ آزادی مارچ 2 روز کے بعد نیا رخ اختیار کرے گا۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران اپوزیشن رہبر کمیٹی کے رکن اکرم درانی کا کہنا تھا کہ افسوس ہے موسم کے حوالے

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں