Tuesday, 07 April, 2020
کورونا وائرس: جمعہ اور باجماعت نماز پر پابندی عائد، فتویٰ جاری

کورونا وائرس: جمعہ اور باجماعت نماز پر پابندی عائد، فتویٰ جاری

لاہور ۔ چین سے پھیلنے والے کررونا وائرس کے وباء کے پیش نظر جامعہ الازہر نے فتویٰ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ انسانی زندگیوں کے تحفظ کی خاطر باجماعت اور جمعہ کی نماز کی ادایئگی پرپابندی عائد کی جاتی ہے۔ میڈیا کے مطابق صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے اسلام آباد میں مصر کے سفیر کے ذریعے شیخ الازہر سے کورونا وائرس کی وباء کے سلسلے میں مذہبی فرائض کی ادائیگی کے حوالے سے رہنمائی کرنے کی درخواست کی تھی۔

اس سلسلے میں جامعہ الازہر کے علماء کی سپریم کونسل نے مصدقہ طبی معلومات اور انسانی زندگی کے تحفظ کے عظیم تر مقصد کو مد نظر رکھتے ہوئے با جماعت اور جمعہ کی نماز کی ادائیگی پر پابندی کرنے کے حوالے سے باضابطہ فتویٰ جاری کر دیا ہے۔ صدر مملکت نے فتویٰ کے اجراء پر شیخ الازہری کا شکریہ بھی ادا کیا۔

فتویٰ میں قرار دیا گیا ہے کہ تمام شواہد واضح طور پر اس امر کی نشاندہی کرتے ہیں کہ عوامی جاتماعت بشمول با جماعت نماز کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا باعث بنتے ہیں، مسلمان ممالک میں سرکاری حکام کو با جماعت نماز جمعہ کی نمازوں کو منسوخ کرنے کا پورا اختیار ہے۔

اس سلسلہ میں در پیش حالات کو مد نظر رکھا جائے، مؤذن حضرات کو صلوۃ فی بیوتکم (گھروں میں نماز ادا کریں) کے ساتھ ترمیم شدہ اذان دینی چاہیے جبکہ اہل خانہ اپنے گھروں میں با جماعت نماز کا اہتمام کر سکتے ہیں، مسلمانوں کے فرائض میں شامل ہے کہ وہ بالخصوص بحران کی صورتحال میں طبی احتیاطی تدابیر کے حوالہ مجاز ریاستی حکام کے احکامات کی پیروی کریں اور غیر سرکاری ذرائع سے اطلاعات اور افواہوں پر عمل سے گریز کریں۔

فتویٰ میں کہا گیا ہے کہ حالیہ کورونا وائرس اور اس کے متعلق مصدقہ طبی معلومات ہیں کہ یہ وائرس بڑی آسانی اور تیزی سے پھیلتا ہے اور یہ کہ انسانی زندگیوں کو بچانا اور انہیں تمام خطرات و نقصانات سے محفوظ رکھنا اسلامی قانون کے عظیم مقاصد میں سے ہے۔

ان مقاصد کی تکمیل کے لئے علماء سپریم کونسل یہ فتویٰ جاری کرتی ہے کہ ہر مسلمان ملک میں ریاستی عہدیداروں کو اجازت ہے کہ وہ تمام عوامی اجتماعات بشمول با جماعت نماز اور جمعہ کی نمازوں پر وائرس کے پھیلاؤ اور لوگوں کی اموات کے خدشہ کے پیش نظر قانونی طور پر پابندی لگا سکتے ہیں۔

مزید کہا گیا کہ معمر افراد اپنے گھروں پر رہیں، با جماعت اور جمعہ کی نمازوں میں شرکت نہ کریں اور رائج طبی رہنما اصولوں کی پیروی کریں کیونکہ تمام شواہد واضح طور پر اس کی نشاندہی کرتے ہیں کہ عوامی اجتماعت بشمول نمازیں اس وائرس کے پھیلاؤ کا باعث بنتے ہیں، اسلامی قانون تمام مسلمانوں کی فلاح اور حفاظت یقینی بناتا ہے جیسا کہ دو صحیحین حدیثوں میں بیان کیا گیا ہے کہ جن میں کہا گیا ہے کہ عبد اللہ ابن عباس ؓ نے اپنے مؤذن کو ہدایت کی کہ وہ اذان میں ترمیم کریں تاکہ لوگ گھروں پر نماز ادا کر سکیں اور بارش میں مسجد جانے سے اجتناب کریں جیسا کہ یہ وباء بارش سے زیادہ خطرناک ہے۔ اس لیے با جماعت اور جمعہ کی نمازوں پر پابندی کی اجازت ہے۔

مزید برآں ابو داؤ نے ابن عباسؓ سے روایت کیا ہے کہ پیغمر اسلام حضرت محمد ؐ نے فرمایا کہ بیماری کا خوف با جماعت نماز چھوڑنے کے لیے عذر ہے۔ اسی طرح عبدالرحمن بن عوف نے بیان کیا کہ پیغمبر نے ان لوگوں کو مسجد میں نماز ادا کرنے سے منع فرمایا جو دوسرے لوگوں کے لیے ناگوار بدبو کا باعث ہوں تاکہ دوسرے لوگ اس (بدبو) سے محفوظ رہ سکیں۔

لٰہذا ان شواہد کی بناء پر الازہر کے علماء کی سپریم کونسل نے فتویٰ دیا ہے کہ مسلمان ممالک میں سرکاری حکام کو باجماعت نماز و جمعہ کی نمازوں کو منسوخ کرنے کا پورا اختیار ہے۔ صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے اس فتویٰ کی بنیاد پر علماء کرام اور حکومت سے درخواست کی ہے کہ جلد از جلد ان ہدایات روشنی میں احکامات صادر کیے جائیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

 

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  93483
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
ترکی میں صدر رجب طیب اردوان کے نظریاتی مخالفین نے سابق وزیر داخلہ میرل اکسنیر کی سربراہی میں نئی سیاسی جماعت تشکیل دیدی ہے ۔ نئی پارٹی کا نام ‘‘ اچھی جماعت ’’ رکھا گیا ہے ، جبکہ سابق خاتون وزیر داخلہ میرل اکسنیرنے پارٹی کی سربراہ منتخب ہوتے ہی ملک کو ترقی یافتہ بنانے
روسی اور شامی حکومت نے اعلان کیاہے کہ ان کا شام میں جنگ بندی کیلئے اپوزیشن جماعتوں اور باغیوں کے ساتھ معاہد ہ طے پا گیا ہے جس میں روس اور ترکی ضامن ہیں ۔
حسینہ واجد سرکار نے جماعت اسلامی بنگلہ دیش کے رہنما میر قاسم علی کو ڈھاکا کی جیل میں پھانسی دیدی۔ ان پر 71 کی جنگ میں پاکستان کا ساتھ دینے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا من گھڑت الزام عائد کیا گیا تھا۔

مزید خبریں
مسجد اقصیٰ کے امام وخطیب الشیخ اسماعیل نواھضہ نے برما میں مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کی شدید مذمت کی اور عالم اسلام پر زور دیا کہ وہ روہنگیا مسلمانوں کو ریاستی جبر وتشدد سے نجات دلانے کے لیے موثر اقدامات کریں

مقبول ترین
قومی کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 397 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 3278 ہوگئی جن میں 259 صحت یاب ہوگئے ہیں۔
کورونا کا شکار برطانوی وزیراعظم بورس جانسن کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔ برطانیہ میں مہلک وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 4 ہزار 934 ہو گئی۔ برطانیہ میں کورونا وائرس بے قابو ہوتا جا رہا ہے، برطانوی وزیراعظم کو حالت خراب ہونے پر ہسپتال
تحریک انصاف کے رہنما ڈاکٹر شہباز گل نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے بڑے فیصلے کرتے ہوئے رپورٹ کی روشنی میں کابینہ میں بڑی تبدیلیاں کر دی ہیں۔ یہ بات انہوں نے اپنی ٹویٹ میں کہی، بعد ازاں مقامی نشریاتی ادارے دنیا نیوز سے خصوصی گفتگو
خالد مقبول صدیقی کا استعفیٰ منظور، شہزاد ارباب کو مشیر کے عہدے سے ہٹا دیا گیا، فخر امام غذائی تحفظ، امین الحق انفارمیشن ٹیکنالوجی، حماد اظہر کو صنعت وپیداوار کی وزارت دیدی گئی جبکہ بابر اعوان کو مشیر برائے پارلیمانی امور مقرر کر دیا گیا ہے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں