Monday, 18 November, 2019
’’ملکی ایجنسیاں کر کیا رہی ہیں؟ جسٹس فائز عیسیٰ‘‘

’’ملکی ایجنسیاں کر کیا رہی ہیں؟ جسٹس فائز عیسیٰ‘‘

اسلام آباد ۔ فیض آباد دھرنے کے خلاف از خود نوٹس کی سماعت کے دوران جسٹس فائز عیسیٰ آئی ایس آئی اور آئی بی پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئےاستفسار کیا کہ ملکی ایجنسیاں کر کیا رہی ہیں؟ کیا ہرکام میں تفریق ڈالنا ہی رہ گیاہے؟
فیض آباد دھرنے کے خلاف از خود نوٹس کی سماعت سپریم کورٹ کا دو رکنی بینچ کررہا ہے۔

سماعت کے دوران پولیس ، آئی ایس آئی اور آئی بی نے سربمہر رپورٹس سپریم کورٹ میں جمع کرادیں۔

جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا کہ آرمی حکومت کا حصہ ہے ،حکومت اور آرمی عوام کے پیسے پر پلتے ہیں، اس معاملے پر آئی ایس آئی خاموش کیوں ہے؟

جسٹس فائز عیسیٰ نےآئی ایس آئی کے نمائندے سے کہا آپ کی بنیادی ذمہ داری پاکستان کو بچانا ہے، کیا پاکستان محفوظ ہے؟ ہر چیز سیاسی ایجنڈا نہیں ہوتی، کبھی ملک کے لیے بھی سوچا کریں، جو کچھ ہوا، نہ اسلام اور نہ پاکستان کی خدمت ہوئی۔
جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا کہ اسلامی ملکوں کا حال دیکھ لیں ، عراق ،شام ، یمن اور دیگر ملکوں میں افراتفری نہیں دیکھی؟ ہم اسلام سے اتنے دور کیوں چلے گئے؟ من میں جو مرضی ہو کرلیں یہ کس کا ایجنڈا ہے؟ یہ تو وہ جانیں جنہیں آزادی کی قدر معلوم ہو۔روہنگیامسلمانوں سے پوچھیں آزادی کی قدر کیا ہوتی ہے؟

عدالت میں ڈپٹی اٹارنی جنرل نے آئی ایس آئی اور آئی بی کی رپورٹ جمع کرائی ۔ سپریم کورٹ نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سے سوال کیا کہ فیض آباد آپریشن میں کتنی اموات ہوئیں؟

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ اسلام آباد میں ہلاکت کا کوئی واقعہ نہیں ہوا، واقعہ میں 173پولیس اہلکار زخمی ہوئے۔ جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا کہ ہم نے از خود نوٹس ایک شہر کے لیے نہیں لیا تھا، رپورٹ دی جائے ، بتایاجائے کیا ہوا؟ صحافی آپ کو بتادیں گے میٹرو کا کتنا نقصان ہوا، لوگوں کا کتنا نقصان ہوا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کرسکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  36943
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
وزیراعظم عمران خان نے ورلڈ بینک کی رپورٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا آسان کاروبار سے متعلق ہمارے منشور کا ايک اور وعدہ پورا ہوا، پاکستان نے عالمی بينک کی رينکنگ ميں تاريخ کی سب سے بڑی بہتری حاصل کی۔
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان اپنی ڈوبتی سیاست بچا رہے ہیں اور وہ مدارس میں اصلاحات پر زیادہ پریشان ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت حکومتی و پارٹی ترجمانوں کا اجلاس ہوا جس میں ملکی سیاسی
اسلام آباد میں نئے عدالتی سال کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس آصف کھوسہ کا کہنا تھا کہ میں نے تقاضا کیا تھا کہ انتظامیہ اور قانون سازعدالتی نظام کی تنظیم نو کے لیے نیا تین تہی نظام متعارف کروائیں لیکن حکومت اور پارلیمنٹ
پاکستان، آزاد کشمیر اور دنیا بھر میں بھارت کا یوم آزادی آج یوم سیاہ کے طور پر منایا گیا۔ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور وادی میں قابض فوج کے مظالم کے خلاف پاکستان نے فیصلہ کیا تھا کہ 15 اگست

مقبول ترین
وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ عدلیہ طاقتور اور کمزور کےلیے الگ قانون کا تاثر ختم کرے۔ ہزارہ موٹروے فیز 2 منصوبے کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پچھلے دنوں کنٹینر
لاہور ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد میاں محمد نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالتے کا حکم دیتے ہوئے انہیں 4 ہفتے کیلئے بیرون ملک جانے کی اجازت دیدی جبکہ عدالت کی طرف سے کوئی گارنٹی نہیں مانگی گئی۔
وفاقی دارالحکومت اسلام آباداور کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں جمعیت علماء اسلام (ف) کے کارکنوں نے دھرنے دے کر سڑکیں بلاک کردیں۔ مولانا فضل الرحمان کے آزادی مارچ کے ’پلان بی‘ کے تحت ملک بھر میں دھرنوں کا سلسلہ
وفاقی حکومت اور نیب کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا تھا کہ لاہور ہائیکورٹ کو درخواست پر سماعت کا اختیار نہیں جبکہ نواز شریف کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ عدالت کے پاس کیس سننے کا پورا اختیار ہے۔ عدالت نے درخواست کو قابل سماعت قرار

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں