Wednesday, 29 January, 2020
'لوگ کیاکہیں گے' :کامران احمدکے ناول کی تقریبِ رونمائی

'لوگ کیاکہیں گے' :کامران احمدکے ناول کی تقریبِ رونمائی

 

ایڈیشنل کمشنرکوارڈینیشن راولپنڈی طارق محمودطارق نے کہا ہے کہ تحریروں کے ذریعے سماجی مسائل کی عکاسی کرنا کمالِ فن ہے۔انھوں نے یہ بات راولپنڈی آرٹس کونسل کے زیراہتمام ادبی بیٹھک میں منعقدہ نوجوان ناول نگارکامران احمدکے ناول 'لوگ کیاکہیں گے' کی تقریبِ رونمائی کے موقع پربطورمہمانِ خصوصی کہی ۔

ملک کے معروف دانشوراورمصنف حمیدشاہدنے تقریب کی صدارت کی۔ پروفیسرڈاکٹرروش ندیم مہمانِ اعزازتھے۔

ایڈیشنل کمشنر طارق محمودطارق نے کہا کہ ایک مصنف معاشرے کا عکاس ہوتا ہے اوراپنے حساس پن کی وجہ سے تمام چیزیں کومحسوس کرتا ہے۔ کامران احمدکے ناول میںبھی یہی کچھ دیکھنے کوملا ہے اور 'لوگ کیا کہیں گے 'ہمارے معاشرے کا المیہ اورتلخ حقیقت ہے۔

معروف افسانہ نگارحمیدشاہدنے کہا کہ نوجوان ناول نگارکامران احمدنے معاشرے کو جس نظرسے دیکھا ہے کم لوگ اس کی صلاحیت رکھتے ہیں۔انھوں نے کہا کہ ناول نگاری کی دنیامیں ان کا پہلا قدم بہت موثرثابت ہواہے اورمستقبل میں یہ نوجوان کامیابی کے جھنڈے گاڑھے گا۔
پروفیسرڈاکٹرروش ندیم نے کہا کہ کامران احمدنے معاشرے کی ترجمانی کرتے ہوئے ناول کا نام 'لوگ کیا کہیں گے'رکھا جومعاشرے کی عکاسی کرتا ہے۔

سینئرشاعرنسیمِ سحرنے بھی کامران احمدکے ناول پرسیرحاصل گفتگوکی۔

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  73972
کوڈ
 
   
مقبول ترین
عرب میڈیا کے مطابق سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے امریکی صدر کی جانب سے مشرق وسطیٰ میں اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازع کے خاتمے کے لیے امن منصوبہ ’ ڈیل آف سینچری‘ پیش کرنے اور فریقین کے درمیان امریکی سرپرستی میں
فلسطین کے صدر محمود عباس نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مشرق وسطیٰ کے امن منصوبے کو ’’صدی کا تھپڑ‘‘ قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا برطانوی خبررساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر کے اعلان کے بعد سے غزہ
دفتر خارجہ نے ہندوستانی وزیراعظم نریندر مودی کے حالیہ متشدد بیانات کو سختی سے مسترد کرتے ہوئے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس کا نوٹس لے۔ دفتر خارجہ کی جانب سے جاری اہم بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارتی انتہا پسند بیانیہ
مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا ہے کہ صدر ٹرمپ جسے امن منصوبے کا نام دے رہے ہیں وہ دراصل” امن کے خلاف جنگ“ (War Against Peace )ہے ۔اسے عالمی قوانین کی

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں