Monday, 16 December, 2019
امریکی صدر مسلمانوں کو تقسیم کرنے نکلے ہیں، پیر اعجاز ہاشمی

امریکی صدر مسلمانوں کو تقسیم کرنے نکلے ہیں، پیر اعجاز ہاشمی

گوجرانوالہ ۔ جمعیت علما پاکستان کے مرکزی صدر پیر اعجا ز احمد ہاشمی نے ریاض میں اسلامی ممالک کے اجلاس سے خطاب میں امریکی صدر کی تقریر پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے اس کی ایران کو تنہا کرنے کی خواہش کی مذمت کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ مسلمانوں کو سنی شیعہ کے نام پر تقسیم کرنے کے لئے نکلے ہیں۔ جس کا افسوسناک پہلو یہ ہے کہ کچھ مسلمان ممالک ہی اس کے لئے استعمال ہورہے ہیں۔ ہمیں اپنے ایجنڈے کو اسلام کی بنیاد پر طے کرنا چاہیے۔ مضحکہ خیز بات ہے کہ دہشت گرد امریکہ اسلام کے ماننے والوں کو دہشت گردی کے خلاف خطبے دے رہا ہے۔ اسلام کی بہتری، وقار اور امت کا مفاد مسلمان ممالک اور سنی شیعہ مکاتب فکر کے درمیان اتحاد میں ہے۔ قرآنی حکم ہے کہ یہودو نصاریٰ کبھی تمہارے دوست نہیں ہوسکتے۔ تو ڈونلڈ ٹرمپ مسلمانوں کا خیر خواہ کیسے بن گیا؟ جو منافقت کا منبع اور جھوٹ کا پلندہ ہے۔ امریکہ کی پالیسیاں ہمیشہ اسلام اور مسلمانوں کے خلاف رہی ہیں۔ان سے توقع رکھنا کہ وہ دہشت گردی کو ختم کردیں گے، عبث ہے۔

میڈیا ٹیم سے گفتگو میں پیر اعجاز ہاشمی نے واضح کیا کہ ڈیڑھ ارب فرزندان توحید واشنگٹن کے ساتھ نہیں، قرآن و سنت کے پیروکار ہیں۔ ہمارے لئے رول ماڈل پیغمبر اکرم حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہٰ وسلم کی ذات گرامی ہے، کوئی اور نہیں۔ جو خود کو مسلمان سمجھتا اور امریکہ سے بھلائی کی توقع رکھتا ہے، غلط فہمی کا شکار ہے۔

انہوں نے کہا کہ امریکی صدرکی اپنے ملک میں کوئی حیثیت نہیں، تو دوسرے ممالک کو کیا درس دے گا؟

ان کا کہنا تھا کہ امریکہ ہمیشہ اپنے مفادات کو عزیز رکھتا ہے۔ جس نے داعش اور القاعدہ کوعرب ممالک کے ساتھ خود مل کر بنایا، اب ان کی دہشت گردی ختم کرنے کی باتیں کرکے منافقت سے کام لے رہے ہیں۔ اگر امریکہ دہشت گردی کے خاتمے میں اتنا ہی مخلص ہے تو فلسطین میں اسرائیل اور مقبوضہ کشمیر میں بھارتی دہشتگر دی کو ختم کروائے، مگر دونوں ابلیس امریکہ کے دوست ہیں۔ 

پیر اعجاز ہاشمی نے کہا کہ فلسطین کی آزادی کی جنگ لڑنے والی حماس اور حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیمیں قراردینا واضح کررہا ہے کہ امریکہ کس کا دوست اور کس کا دشمن ہے؟ حزب اللہ نے ہمیشہ اسرائیل کو ناکوں چنے چبوائے ہیں، جو امریکہ کو پسند نہیں۔ 

انہوں نے واضح کیا کہ سعودی عرب اور ایران کے اختلافات میں امت کے مفادات یرغمال نہیں بننے چاہیں۔ عرب اور فارس کی جنگ کو سنی شیعہ جنگ کا تاثر دینا غلطی ہے، اس سے پہلے بھی بہت نقصان ہوچکا ہے۔ مزید ہونے کا خدشہ ہے۔ دونوں مالک ہوش کے ناخن لیں۔ امت کے حال پر رحم کریں، مذاکرات کے ذریعے اپنے تنازعات حل کریں۔ سعودی عرب اور ایران کو ایک دوسرے کے خلا ف محاذ کھڑے کرنے کی بجائے، صلح اور اتحاد کا راستہ اختیار کرنا چاہیے۔ اگر رویے درست نہ کئے گئے تو امت کا مزید نقصان ہوگا۔

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  65018
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے زیر اہتمام ’’مودی کا دورہ اسرائیل اور مسئلہ کشمیر‘‘ کے موضوع پر ایک روزہ سیمینار پرسوں 18 تاریخ بروز منگل بوقت 4 بجے سہ پہر نیشنل پریس کلب، اسلام آباد میں منعقد کیا جائے گا۔
ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے زیر اہتمام ’’مودی کا دورہ اسرائیل اور مسئلہ کشمیر‘‘ کے موضوع پر ایک روزہ سیمینار رواں ماہ کے 18 تاریخ بروز منگل بوقت 4 بجے سہ پہر نیشنل پریس کلب، اسلام آباد میں منعقد کیا جائے گا۔
مجلے میں معروف محقق ثاقب اکبر کا ایک علمی مقالہ انسانی اعضاء کی پیوندکاری کے حوالے سے شامل ہے۔ اس مقالے میں تمام اسلامی مکاتب فکر کے جدید افکار کا احاطہ کیا گیا ہے۔
آل پاکستان اخبار فروش فیڈریشن کے تاحیات سیکرٹری جنرل ٹکا خان کے برادرِ اصغراورعمرحیات عباسی کے بڑے بھائی محمد یونس عباسی کی رسمِ قُل گزشتہ روزجامع مسجد صدیق اکبر چک شہزاد میں ادا کی گئی،علامہ عبدالغنی نقشبندی نے دعا کرائی

مقبول ترین
معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ اگر لاڑکانہ میں بھٹو زندہ ہے تو غریب مر چکے ہیں۔ بلاول نے کرپشن سے اپنا رشتہ ابھی تک نہیں توڑا۔ پیپلز پارٹی نے بھٹو کے نظریے کو ختم کر دیا ہے۔
نریندر مودی کی اگلی جیت ہندوستانی شہریت کا ترمیمی ایکٹ ہے، جس نے آسام اور پورے ہندوستان کے مسلمانوں کے اندر بے چینی کو جنم دے دیا ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ مودی جی اور کون کون سی غلطیوں کی اصلاح کرتے ہیں۔ ناگالینڈ، ٹیپورہ، خالصتان بھی مودی کا منہ تک رہے ہیں۔ امید ہے فاتح ہندوستان جلد یا بدیر ان غلطیوں کی اصلاح کی بھی کوشش کرینگے۔ آئینی جنگ تو وہ شاید جیت جائیں، تاہم انکے ان اقدامات کے سبب وہ وقت دور نہیں کہ جب ہندوستان کی ساجھے کی ہانڈی بھرے چوراہے میں پھوٹے گی اور تاریخ ایک مرتبہ پھر ہندوستان کی تقسیم کا منظر اپنی آنکھوں سے مشاہدہ کریگی۔
بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) مینگل کے سربراہ سردار اختر مینگل کا کہنا ہے کہ ہم چاہتے ہیں جنوبی پنجاب بھی برابرکا ترقی یافتہ ہو، سی پیک سے لاہور میٹروٹرین چلائی گئی لیکن بلوچستان میں کیکڑا بس بھی نہیں دی گئی۔
کوئٹہ میں ورکرز کنونشن سے خطاب میں بلاول بھٹو زرداری کا کہناتھا کہ اس وقت بلوچستان میں لوگوں کو حقوق نہیں دیےجارہے، بلوچستان میں دیگر صوبوں سے زیادہ وسائل ہیں، مگربدقسمتی سے بلوچستان کے لوگ محروم ہیں، نالائق اور نااہل

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں