Sunday, 20 September, 2020
’’مسئلہ کشمیر کا پر امن حل تلاش کرنا چاہیے، چین‘‘

’’مسئلہ کشمیر کا پر امن حل تلاش کرنا چاہیے، چین‘‘
ترجمان چینی دفتر خارجہ

بیجنگ: چینی دفترخارجہ کے ترجمان گینگ شوانگ نے ہفتہ وار پریس کانفرنس کے دوران سوالوں کے جوابات دیتے ہوئے کہا کہ مسئلہ کشمیر ایک تاریخی مسئلہ ہے جسے اقوام متحدہ کے چارٹر اور سلامتی کونسل کی متعلقہ قراردادوں کی روشنی میں پر امن طریقے سے حل کرنا چاہیے۔ 

انھوں نے مزید بتایا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں پاکستان کی درخواست پر 15جنوری کو مسئلہ کشمیر کا جائزہ لیا گیا۔ اس موقع پر سلامتی کونسل کے اکثر ممبرممالک نے کشمیریوں پر بھارتی مظالم پر انتہائی تشویش کا اظہار کیا اور اس بات کا اعادہ کیا کہ مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے اقوام متحدہ کے چارٹر اور سلامتی کونسل کی قرار دادوں کے ذریعے حل کیا جائے۔ 

چینی دفتر خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ سلامتی کونسل کو مسئلہ کشمیر کو جلد از جلد حل کرانے کے لیے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ خطے میں پائی جانے والی کشیدگی کم ہو سکے۔ انھوں نے مزید کہا کہ چین خطے میں امن و امان کی صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہے اور خطے کے امن کے لیے کوششیں کرتا رہے گا۔ انھوں نے یہ بھی واضح کیا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے چین بھارت سے رابطے میں ہے۔ 

اس موقع پر مزید بات کرتے ہوئے انھوں نے بھارت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ بھارت کو سلامتی کونسل کے اراکین کی جانب سے ظاہر کردہ تشویش کو سنجیدہ لینا چاہیے اور سلامتی کونسل کو اس حوالے سے مثبت جواب دینا چاہیے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  9688
کوڈ
 
   
مقبول ترین
ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے کہا کہ امریکی رپورٹ میں پاکستان کے دہشت گردی کے خلاف اٹھائے گئے اقدامات کو متنازع بنایا گیا ہے۔ القاعدہ کی خطے میں ناکامی کو تو تسلیم کیا گیا لیکن اس کے خلاف پاکستان کی کاوشوں کو نظر انداز کیا گیا۔ پاکستان میں
رینٹل پاور کیس میں سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف سمیت 10 ملزمان نے بریت کی درخواست دائر کر رکھی تھی اور نیب ترمیمی آرڈیننس کے تحت تمام درخواستیں دائر کی گئی تھیں۔ جس پر احتساب عدالت اسلام آباد نےفیصلہ محفوظ کر رکھا تھا تاہم آج احتساب
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہم سے جواب مانگا جارہا ہے جواب ان سے مانگا جائے جو ملک کو اس حال میں چھوڑ کرگئے۔ قومی اسمبلی کے اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس کی وبا پھیلنے کے بعد
سپریم کورٹ میں کورونا از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوان چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیے کہ وزیراعظم کہتےہیں ایک صوبے کا وزیراعلیٰ آمر ہے، اس کی وضاحت کیا ہوگی؟ چیف جسٹس نے کہا کہ وزیراعظم اور وفاقی

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں