Saturday, 20 August, 2022
''سازش کا امریکی فلیور''

''سازش کا امریکی فلیور''
ناصرمغل کا کالم

 

پاکستان میں ایک بہت ہی مرغوب اور من بھاتاکھاجاہے:''سازش''۔ یہ ایسی چیونگم ہے جسے سبھی شوق سے چباتے ہیں۔ اس کے کئی فلیورزہیں۔ امریکی سازش، بھارتی سازش، یہودی سازش،یورپی سازش وغیرہ۔سازشی تھیوری کے بغیر ہمیں ماحول بے رنگ لگتاہے۔ جب تک اس پر سازش کا چھڑکائو نہ ہوسنسنی پیدانہیں ہوتی، فضا مردہ سی رہتی ہے۔ 

تحریک انصاف کی حکومت نے حزب اختلاف کی طرف سے عدم اعتماد لائے جانے کے بعد سرتوڑکوشش کی کہ کسی طرح نمبر گیم اس کے حق میں ہوجائے۔ اس مقصدکے لیے عمران خان بنفس نفیس اتحادیوں کے پاس جاتے رہے، ان سے باربارملاقات کرتے رہے، انہیں قائل کرنے کی سعی میں کوئی کس نہیں چھوڑی لیکن کوئی ہاتھ نہیں آیا۔ایسے میں مقابلہ بدمزہ ساہونے لگاتھا۔میچ یک طرفہ نظرآرہاتھا۔عمران خان بھی جان گئے کہ حکومت جانے کو ہے توانہوں نے بریک تھروکاحربہ آزمانے کا فیصلہ کرلیا۔چنانچہ پریڈگرائونڈ جلسے میں کپتان ایک سفید کاغذلہراتے ہیںاور کہتے ہیں کہ دھمکی آئی ہے۔ بس پھرکیاتھاماحول ایک دم بدل گیا، میچ میں جان پڑگئی۔کیوں کہ سازش کا انکشاف ہوگیاتھا ،اب تو مرادبرآئی تھی۔ دیکھتے ہی دیکھتے ہرطرف گہماگہمی کی لہردوڑگئی۔
ہمارے ہاں بہت سے ایسے حلقے ہیں جن کا مانناہے کہ امریکی سازش کے بغیر پاکستان میں بارش بھی نہیں ہوتی (یازیادہ ہوتی ہے،حسب ضرورت یہ بیانیہ ایڈجسٹ کیاجاسکتاہے) ۔ان حلقوںکے نزدیک ملک میں کوئی بھی سیاسی پیش رفت یاتبدیلی جس کا تعلق حکومت سے ہے ،اس کے پیچھے امریکہ کارفرماہوتاہے۔

حیرت ہے کہ امریکہ کو باربار نوازشریف کی حکومت گرانے میں بھی دل چسپی رہی، ان کی حریف بے نظیر بھٹو کو اقتدارسے چلتاکرنے میں بھی کوئی امریکی مفاد تھا،یوسف رضاگیلانی کو نااہل قراردلوانے میں بھی واشنگٹن کو مزہ آیا،اب وہ عمران خان کے پیچھے پڑاہواہے۔

پاکستانی سیاست دانوں کو بھی بات میں زورپیداکرنے اور ہانڈی کو مزے داربنانے کے لیے سازش اور بالخصوص امریکی سازش کا تڑکا لگانا پڑتا ہے۔اس کے بغیر وہ عوام کی توجہ حاصل نہیں کرپاتے۔اس میں شک نہیں کہ امریکہ سمیت دنیاکے تمام بڑے ملک سازشیں کرتے ہیں لیکن انہیں اپناملک بھی تو چلاناہوتاہے ،صبح شام کوئی کیسے پوری دنیاکے خلاف یا صرف ایک ہی ریاست کے خلاف سازش میں لگارہ سکتاہے؟۔

سازشی تھیوری کے پرستاروں کا یہ بھی کہناہے کہ پاکستان کی عسکری قیادت امریکی مفادات کا بہت خیال رکھتی ہے۔اگر ایساہے تو پھر امریکہ روزروزکیوں سازش کرنے پر مجبور ہوجاتاہے۔یہ بات بھی ناقابل فہم ہے۔نظریاتی اور غیرحقیقی ،لایعنی فلسفیانہ باتوں سے ہٹ کر دیکھاجائے تو پاکستان کا کوئی ایسا پوٹینشل بھی نہیںکہ دنیاکو خطرہ یاخوف محسوس ہو۔خوابوں اور خیالوں کی دنیامیں توضروراس بات کا چرچاہے کہ پاکستان اسلام کاقلعہ وغیرہ ہے اور ساراعالم صرف ایک ہی ملک سے کانپتاہے وہ ہے پاکستان،لیکن اس عقیدے کا حقائق سے کوئی واسطہ نہیں۔گفتارکے غازیوں کوکردار کے میدان کافاتح بنناکبھی نصیب نہیں ہوتا۔ہم نے اپنے اعمال پر کبھی نگاہ نہیں دوڑائی جوہماری آنکھ کاشہتیرہے البتہ دوسروں کی آنکھ میںسازش کا تنکا ضرور دیکھ لیتے ہیں۔

جہاں تک تحریک انصاف کی حکومت کا سوال ہے تو ایسی بے وقعت ، بے مایہ اور ذہنی مفلس جماعت کے خلاف سازش کرنے والاان سے زیادہ نااہل ہوگا۔ پی ٹی آئی نے اقتدارمیں آنے کے بعد خودہی اپنے خلاف سازشیں شروع کردی تھیں تو امریکہ کو کیاپڑی کہ دنیاکے سب سے نامراد ٹولے کے خلاف اپناوقت ضائع کرے۔ جو لوگ ساڑھے تین سال میں کچھ کرہی نہیں پائے، قوم کو کچھ دینے کی پوزیشن میں ہی نہیں، معیشت سنبھالنے کے لائق نہیں،اپنے ہی کسی ایک دعوے یاوعدے پر پورانہیں اترسکتے،ان کے خلاف سازش کے لیے امریکہ کو مداخلت کرناپڑی یعنی جو کچھ کردکھانے ،کچھ بنانے یاکسی کا کچھ بگاڑنے کی صلاحیت نہیں رکھتے انہیں سازش سے ہٹانے کا فیصلہ ہوا۔کیسا بھونڈااوربے تکا مفروضہ ہے۔

ایک سفارتی مراسلے کو بنیادبناکر سازش کا مجسمہ تعمیر کردیاگیا ،صرف اس لیے کہ تحریک عدم اعتمادکاسامناکرنے کے لیے حکومت کواکثریت حاصل نہیں رہی تھی۔اس مبینہ سازش کا ذکر قومی سلامتی کمیٹی کے اعلامیہ میں سرے سے ہی نہیں۔ ایسامبہم اعلامیہ آنا ضرور اسرائیلی سازش رہی ہوگی!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کالم نگار، بلاگر یا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ بھی ہمارے لیے کالم / مضمون یا اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر اور مختصر تعارف کے ساتھ [email protected] پر ای میل کریں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  23224
کوڈ
 
   
مقبول ترین
ملک بھر میں چودہ اگست کا آغاز ہوتے ہی 75 ویں آزادی کا جشن بھرپور عقیدت اور احترام سے منانے کا سلسلہ شروع ہوگیا اور فضا قومی نعروں اور ملی نغموں سے گونج اٹھی ہے۔
لاہور کے نیشنل ہاکی اسٹیٹڈیم میں ’حقیقی آزادی‘ جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں امریکا اور برطانیہ کو زیادہ تر پاکستانیوں سے بہتر جانتا ہوں، میں کسی ملک کا دشمن نہیں، امریکا سے دوستی چاہتا ہوں۔
وزیراعظم شہباز شریف نے قوم سے خطاب میں ایک بار پھر میثاق معیشت کی پیش کش کردی۔ قوم سے خطاب میں شہباز شریف کا کہنا تھاکہ آج محض ایک مبارکباد کافی نہیں، ہم ہرسال دھوم دھام سے یوم آزادی مناتےہیں، لاکھوں قربانیوں کے بعد پاکستان حاصل کیا گیا اور حققت یہ ہےکہ 75برس سے ان دنوں کو منایا ہے
سانحہ لسبیلہ ہیلی کاپٹر حادثہ و شہداء سے متعلق سوشل میڈیا پر منفی پراپیگنڈے کی تحقیقات کے معاملے پر جوائنٹ انکوائری ٹیم کا دائرہ کار بڑھا کر انٹیلجنس ایجینسز کے دو افسران بھی ٹیم میں شامل کر لیے گئے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں