Saturday, 20 August, 2022
افغانستان میں انسانی بحران سے دہشتگردی کی نئی لہرجنم لےسکتی ہے، شاہ محمود قریشی

افغانستان میں انسانی بحران سے دہشتگردی کی نئی لہرجنم لےسکتی ہے، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد - وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ افغانستان میں انسانی بحران کےپاکستان پراثرات مرتب ہوں گے ، بحران سے دہشت گردی کی نئی لہرجنم لےسکتی ہے۔

میڈیا کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے او آئی سی وزرائےخارجہ کونسل اجلاس پر بیان میں کہا ہے کہ 19دسمبرکواو آئی سی وزرائے خارجہ کونسل اجلاس منعقدکیاجارہا ہے، اس اجلاس کا واحد ایجنڈا افغانستان کی صورتحال ہوگا۔

شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ افغانستان میں ابھرتاانسانی بحران سنگین صورتحال اختیارکرسکتاہے، افغانستان کامعاشی انہدام واضح دکھائی دےرہاہے، اس بحران سے نہ صرف پاکستان بلکہ پوراخطہ متاثرہوگا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ میں نے ملاقاتوں میں افغانستان کی مخدوش صورتحال کی جانب توجہ دلائی، یورپی یونین کے خارجہ امور کے سربراہ سے افغانستان صورت حال پر تبادلہ خیال کیا، بحران سےنہ صرف خطےکےممالک متاثرہوں گے بلکہ یورپ بھی متاثرہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ آج اقوام متحدہ، ورلڈبینک، آئی ایم ایف ہماری بات دہرارہےہیں، افغانستان میں کوئی بینکنگ نظام نہیں ہے، توجہ نہ دی گئی تو 2022 کے وسط تک 97 فیصد افغان سطح غربت سے نیچے ہوں گے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اس وقت 95 فیصدافغانوں کے پاس کھانےکو کچھ نہیں ہے، ہم اپنی ذمہ داری نبھارہے ہیں لیکن پاکستان تنہا ذمہ داری نہیں اٹھاسکتا، افغانستان میں بارشیں نہیں ہوئیں قحط کی صورتحال ہے، ان کے پاس سرکاری ملازمین کودینے کے لیے تنخواہیں نہیں، فوری فیصلے نہ کیے گئے تو بڑا بحران آئے گا۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ اس مناسب ہوگا افغان اتھارٹیز کا نقطہ نظربھی سامنے رکھا جائے، پورا خطہ سردی کی لپیٹ میں آنےوالاہے، پاکستان کہتا آرہا ہے کہ افغانستان کا سیاسی حل تلاش کریں۔

انھوں نے مزید کہا کہ دنیا کوباورکراناچاہتےہیں کہ افغانستان میں حالات بگڑرہے ہیں، دنیا کوافغانستان کےمعاملات میں فوری مداخلت کرنا ہوگی اور افغانستان کو انسانی بحران سے بچانا ہوگا۔

شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ افغانستان میں انسانی بحران کےپاکستان پراثرات مرتب ہونگے، 40لاکھ افغان مہاجرین کی آج بھی خدمت کررہےہیں، مزیدافغان مہاجرین کابوجھ اٹھانےکی استطاعت نہیں۔

وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ افغانستان میں انسانی بحران کا پڑوسیوں پر بھی اثر پڑے گا، دہشت گردی کی نئی لہرجنم لےسکتی ہے، وزیر اعظم عمران خان نے ہر فورم پر افغانستان کا معاملہ اٹھایا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمارےہاں افغانستان کی صورتحال پرقومی اتفاق رائےموجودہے، انسانی بحران کےنتیجےمیں افغان مہاجرین کی ایک یلغارسامنےآ سکتی ہے، صورتحال خراب ہونے سے دہشت گردوں کو پنپنے کا موقع مل جائے گا اور دہشت گردی کےخلاف کی گئی کاوشیں ملیامیٹ ہوجائیں گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر [email protected] پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  19335
کوڈ
 
   
متعلقہ خبریں
پاکستان نے برطانوی نشریاتی ادارے سے جھوٹی اور من گھڑت خبر شائع کرنے پر وضاحت طلب کرلی ہے۔ میڈیا کے مطابق پاکستان نے بی بی سی اردو پر 10 اپریل 2022 کو شائع ہونے والی خبر کا نوٹس لیتے ہوئے برطانوی نشریاتی ادارے
پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے نگران وزیراعظم کے لیے سابق چیف جسٹس جسٹس (ر) گلزار احمد کا نام تجویز کر دیا۔ سابق وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر لکھا کہ صدر مملکت
پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ اور جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ ایسے حالات آرہے ہیں کہ عوام بغاوت کی طرف جارہے ہیں، اب فیصلے کی گھڑی ہے، ملکی معیشت کو قبضے میں لے کر بین
سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک بیان میں پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ میرے جیسے مرضی تعلقات ہوں لیکن ہمیشہ سچ بولنا چاہیے۔ میں نے نیا پاکستان بنانے کے لئے جس حد تک ہوسکتا تھا تحریک انصاف کی مدد کی۔

مقبول ترین
ملک بھر میں چودہ اگست کا آغاز ہوتے ہی 75 ویں آزادی کا جشن بھرپور عقیدت اور احترام سے منانے کا سلسلہ شروع ہوگیا اور فضا قومی نعروں اور ملی نغموں سے گونج اٹھی ہے۔
لاہور کے نیشنل ہاکی اسٹیٹڈیم میں ’حقیقی آزادی‘ جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں امریکا اور برطانیہ کو زیادہ تر پاکستانیوں سے بہتر جانتا ہوں، میں کسی ملک کا دشمن نہیں، امریکا سے دوستی چاہتا ہوں۔
وزیراعظم شہباز شریف نے قوم سے خطاب میں ایک بار پھر میثاق معیشت کی پیش کش کردی۔ قوم سے خطاب میں شہباز شریف کا کہنا تھاکہ آج محض ایک مبارکباد کافی نہیں، ہم ہرسال دھوم دھام سے یوم آزادی مناتےہیں، لاکھوں قربانیوں کے بعد پاکستان حاصل کیا گیا اور حققت یہ ہےکہ 75برس سے ان دنوں کو منایا ہے
سانحہ لسبیلہ ہیلی کاپٹر حادثہ و شہداء سے متعلق سوشل میڈیا پر منفی پراپیگنڈے کی تحقیقات کے معاملے پر جوائنٹ انکوائری ٹیم کا دائرہ کار بڑھا کر انٹیلجنس ایجینسز کے دو افسران بھی ٹیم میں شامل کر لیے گئے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں