Saturday, 17 April, 2021
’’کرپشن: سابق فرانسیسی صدر کو 3سال قید کی سزا سنا دی گئی‘‘

’’کرپشن: سابق فرانسیسی صدر کو 3سال قید کی سزا سنا دی گئی‘‘

 

پیرس ۔ فرانس کے سابق صدر نکولس سرکوزی کو کرپشن الزامات ثابت ہونے پر تین سال قید کی سزا سنادی گئی۔ سرکوزی نے صدارت کے دوران ایک جج کو بہترعہدے کی آفر کے بدلے اپنے کیس سے متعلق معلومات حاصل کیں، سابق صدر کی انتخابی کیمپین کی فنانسنگ سے متعلق انکوائری چل رہی تھی۔

عدالت نے کرپشن کے الزام میں سرکوزی کو تین سال قید کی سزا سنائی جس میں سے دوسال کی سزا معاف کردی۔ سرکوزی کے سابق وکیل تھیری ہرزوگ اور ایزربرٹ کو بھی اسی جرم میں سزا دی گئی ہے۔

2007 سے 2012 تک فرانس کے صدر رہنے والے 66 سالہ نکولس سرکوزی کو اپنے دو ساتھیوں سمیت سزا ہوئی ہے۔

اپنے فیصلے میں جج نے کہا کہ سرکوزی جیل میں سزا پوری کرنے کے بجائے گھر میں الیکٹرانک ٹیگ لگا کر یہ سزا پوری کر سکتے ہیں۔ توقع ہے کہ سابق صدر اس کے خلاف اپیل کریں گے۔

یہ دوسری جنگِ عظیم کے بعد فرانس میں ہونے والا ایک تاریخ ساز عدالتی فیصلہ ہے۔ اس کے علاوہ اس طرح کی واحد مثال سرکوزی کے دائیں بازو کے پیشرو ژاک شیراک کے خلاف مقدمہ تھا، جنھیں پیرس کے میئر ہونے کے دوران سیاسی اتحادیوں کے لیے پیرس سٹی ہال میں جعلی ملازمتیں دینے کا الزام ثابت ہونے پر دو سال کی معطل سزا سنائی گئی تھی۔ شیراک کا 2019 میں انتقال ہو گیا تھا۔

استغاثہ نے درخواست کی تھی کہ سارکوزی کو چار سال کی سزا دی جائے، جس میں سے آدھی معطل کر دی جانی تھی۔

اس کیس کا مرکز ایزربرٹ اور ہرزوگ کے مابین ہونے والی گفتگو تھی، جسے تفتیش کاروں نے اس وقت ٹیپ کیا تھا جب وہ ان دعوؤں کی تصدیق کر رہے تھے کہ کیا سرکوزی نے 2007 کے صدارتی انتخاب میں لوریئل کی وارث لیلیان بیٹنکورٹ سے غیر قانونی رقوم لی تھیں۔

انھوں نے جس فون لائن کو ٹیپ کیا وہ پال سمتھ نامی ایک فرضی شخص کے نام پر ایک خفیہ نمبر تھا، جس کے ذریعے سرکوزی نے اپنے وکیل سے بات کی تھی۔

17 مارچ سے 15 اپریل تک سرکوزی پر ایک علیحدہ مقدمہ بھی شروع ہو رہا ہے، جو کہ نام نہاد ’بیمالیئن افیئر‘ سے متعلق ہے۔ سرکوزی پر الزام ہے کہ انھوں نے اپنی 2012 کی صدارتی مہم میں فراڈ کرتے ہوئے زیادہ پیسے خرچ کیے تھے۔ وہ 2007 تک فرانس کے صدر رہے لیکن 2012 میں ان کی صدارتی مہم ناکام رہی۔ قانونی الجھنوں کے باوجود سرکوزی دائیں بازو کے حلقوں میں اب بھی بہت مقبول ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: مبصر ڈاٹ کام ۔۔۔ کا کسی بھی خبر سے متفق ہونا ضروری نہیں ۔۔۔ اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔ علاوہ ازیں آپ بھی اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر info@mubassir.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ ادارہ

اپنا تبصرہ دینے کے لیے نیچے فارم پر کریں
   
نام
ای میل
تبصرہ
  82173
کوڈ
 
   
مقبول ترین
عوامی نیشنل پارٹی نے اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) سے راہیں جدا کرنے کا فیصلہ کرلیا جس کے نتیجے میں اتحاد ٹوٹ گیا اور اے این پی رہنماؤں نے پی ڈی ایم کے تمام عہدے چھوڑ دیے۔ پشاور میں اے این پی کی مرکزی
وفاقی حکومت نے وفاقی وزیر خزانہ عبد الحفیظ شیخ کو عہدے سے ہٹا دیا جبکہ ان کی جگہ حماد اظہر لیں گے۔ سینیٹر شبلی فراز نے تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ وفاقی وزیر خزانہ عبد الحفیظ شیخ کو عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے، جبکہ قلمدان حماد اظہر کو تفویض
لاہور میں موٹروے پر خاتون کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزمان کو سزائے موت سنا دی گئی۔میڈیا کے مطابق چند روز قبل موٹروے زیادتی کیس کی سماعت مکمل ہوئی تھی، انسداد دہشت گردی عدالت کے ایڈمن جج ارشد حسین بھٹہ کیمپ جیل میں فیصلہ سنانے
مولانا فضل الرحمان کی سربراہی میں ہونے والے پی ڈی ایم کے اہم اجلاس میں اپوزیشن جماعتوں میں استعفوں اور لانگ مارچ سے متعلق اختلافات کھل کر سامنے آگئے۔ سربراہی اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سربراہ پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں