Wednesday, 22 January, 2020
مبصر پر اشتہار کیوں؟؟؟؟

کیا آپ کسی دکان، کاروبار، کتاب یا گاڑی کو فروخت کرناچاہتے ہیں؟
کیا آپ کسی ادارے، سکول، کمپنی یا مصنوعات کی تشہیر کرنا چاہتے ہیں؟
کیا آپ کسی خاص مضمون یا پوسٹ کو وسیع پیمانے پر لوگوں تک پہنچانا چاہتے ہیں؟
کیا آپ کسی سیاستدان، دوست یا کاروباری حضرات کو مبارکباد دینا چاہتے ہیں؟
کیا آپ کسی حکومتی ادارے یا متعلقہ ذمہ داروں سے کوئی اپیل کرنا چاہتے ہیں؟

تو

انتہائی کم معاوضے پر مبصر پر اشتہار دیجئے اور ہزاروں، لاکھوں لوگوں تک اپنا پیغام پہنچائیں۔
مذید معلومات کے لئے مبصر کے مقامی دفاتر یا براہ راست مرکزی دفتر سے رابطہ کریں۔

مبصر کے میڈیا ڈیپارٹمنٹ کو آپکی خدمت کر کے خوشی ہو گی۔
مزید تفصیلات اور معلومات کے لئے ہم سے رابطہ کریں۔


اشتہارات کے نرخ | اشتہارات کی پالیسی

مقبول ترین
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جلد پاکستان کا دورہ کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے وزیراعظم عمران خان کے دورہ ڈیوس سے متعلق بیان میں کہا کہ صدر ٹرمپ سے ایک گھنٹے
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ افغان جنگ کے باعث معاشرے میں کلاشنکوف اور منشیات کا کلچر آیا، دہشتگردی کیخلاف جنگ میں 70 ہزار جانوں کی قربانی دی، دہشتگردی کے خلاف جنگ میں بے پناہ نقصان اٹھایا، ہم نے فیصلہ کیا ہے اب
ماں۔۔۔۔مجھے معلوم تھا کہ آپ میرے اس عارضی دنیا میں واپس آنے کے لیے کتنی پرجوش تھیں۔۔۔۔۔یہ لیں، آج آپ کی دیرینہ خواہش پوری کیے دے رہی ہوں۔۔۔۔ارے دیرینہ یوں بولا ہے کہ جب سے میرا آپ کا ساتھ چھوٹا، وہ بندھن ٹوٹا جس نے مجھے آپ کی سانسوں کی ڈور سے باندھ رکھا تھا،تب سے محسوس ہونے لگا کہ اب مجھ میں کچھ باقی نہیں رہا۔
وزیراعظم عمران خان اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان ورلڈ اکنامک فورم کے موقع پر اہم ملاقات ہوئی جس میں باہمی دلچسپی کے امور اور اہم ایشوز پر تبادلہ خیالات کیا گیا۔ ورلڈ اکنامک فورم کی سائیڈ لائنز پر ہونے والی اس اہم ملاقات میں امریکی

’’پاکستان نیوی کا فائر پاور کا مظاہرہ 2019ء‘‘
میرے پڑھنے والو،میں ایک عام سی،نا سمجھ ایک الہڑ سی لڑکی ہوا کرتی تھی، بات بات پہ رو دینا تو جیسے میری فطرت کا حصہ تھا، اور پھربات بے بات ہنسنا میری کمزوری، یہ لڑکی دنیا کے سامنے وہی کہتی اور وہی کرتی تھی جو یہاں کے لوگ سن اور سمجھ کر خوش ہوتے تھے، نجانے اس عجب سراب کے پرکشش مکینوں کو خوش کرتے کرتے کب میں اس عمر کو پہنچی کہ جہاں مجھے احساس ہوا،کہ نہیں اس دنیا میں کچھ ایسا بھی ہے جو میرے اند بہت ر مختلف ہے، جسے یہ دنیا چاہ کر بھی بدل نہیں پائی۔۔۔
ماں۔۔۔۔مجھے معلوم تھا کہ آپ میرے اس عارضی دنیا میں واپس آنے کے لیے کتنی پرجوش تھیں۔۔۔۔۔یہ لیں، آج آپ کی دیرینہ خواہش پوری کیے دے رہی ہوں۔۔۔۔ارے دیرینہ یوں بولا ہے کہ جب سے میرا آپ کا ساتھ چھوٹا، وہ بندھن ٹوٹا جس نے مجھے آپ کی سانسوں کی ڈور سے باندھ رکھا تھا،تب سے محسوس ہونے لگا کہ اب مجھ میں کچھ باقی نہیں رہا۔
صبح سویرے اسکول جاتے وقت ہم عجیب مسابقت میں پڑے رہتے تھے پہلا مقابلہ یہ ہوتا تھا کہ کون سب سے تیز چلے گا دوسرا شوق سلام میں پہل کرنا۔ خصوصاً ساگری سے آنیوالے اساتذہ کو سلام کرنا ہم اپنے لیے ایک اعزاز تصور کرتے تھے۔

کیا تعلیمی اداروں میں لسانی اور قومی بنیاد پر کونسلز بنانے کی اجازت ہونی چاہیے ؟
نتائج ملاحظہ کریں
پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں