Sunday, 20 September, 2020
ایک تازہ غزل
اِک شعلۂ بسمل کہ چراغ سحری دیکھ اِک منظر وارفتگی و جاں سپری دیکھ
شکوہ؟

حافظ شیرازی کی ایک غزل اور اردو مفہوم
هر نکته‌ای که گفتم در وصف آن شمایل هر کو شنید گفتا للهِ دَرُّ قائل
قابلِ رحم ہے وہ قوم
جس کے پاس عقیدے تو بہت ہیں مگر دل یقیں سے خالی ہیں
کرونا کا تقاضا ہے:
کرونا کا تقاضا ہے:"چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں"
ثاقب اکبر کی کتاب زلیخا عشق مجازی سے عشق حقیقی تک شائع ہو گئی
علمی و تحقیقی ادارے البصیرہ کے صدر نشین، معروف محقق و دانشور ، شہرہ آفاق کتاب” پاکستان کے دینی مسالک “کے مصنف نیز دسیوں دیگر تحقیقی و علمی کتب کے لکھاری ثاقب اکبر کی ایک اور اچھوتی اور امتیازی تحریر ”زلیخا عشق مجازی سے عشق حقیقی تک “منظر عام پر آگئی ہے۔
’’البصیرہ کے زیر اہتمام محفل مسالمہ کا انعقاد‘‘
گزشتہ دنوں اسلام آباد میں ایک یادگار اور ایمان پرور محفل مسالمہ معروف علمی تحقیقاتی ادارے البصیرہ کے زیر اہتمام منعقد ہوئی۔یہ محفل مسالمہ ہر سال سلسلہ نوشاہی قادری کے روحانی بزرگ
’’کافر ہوں سر پھرا ہوں مجھے مار دیجئے‘‘
شہادت سے قبل سوشل میڈیا پر کیپٹن احمد مبین نے ایک نظم پوسٹ کی جس کا عنوان ’’کافر ہوں سر پھرا ہوں مجھے مار دیجئے‘‘ تھا۔ مرحوم نے جو آخری نظم شیئر کی وہ درج ذیل ہے ۔
فیض کا 106 واں یوم پیدائش آج منایا جارہا ہے
فیض 13 فروری 1911 کو شاعر مشرق علامہ اقبال کے شہرسیالکوٹ میں پیدا ہوئے، انہوں نے تدریسی مراحل اپنے آبائی شہر سیالکوٹ اور لاہور میں مکمل کیا، اپنے خیالات کی بنیاد پر 1936 میں ادبا کی ترقی پسند تحریک
پروین شاکر کی برسی آج منائی جارہی ہے
خوشبو سے لب و لہجے والی منفرد شاعرہ پروین شاکر کی22 ویں برسی آج منائی جارہی ہے۔ اس سلسلے میں پروین شاکر کے مداحوں نے شاعرہ کو خراج تحسین پیش کرنے کیلئے ملک بھر میں مختلف تقاریب کے انعقاد کا اہتمام کیا ہے
معروف شاعر احمد فراز کو بچھڑے 8 برس بیت گئے
احمد فراز کا اصل نام سید احمد شاہ تھا۔ وہ 12 جنوری 1931ء کو نوشہرہ میں پیدا ہوئے ۔ احمد فراز نے اردو، فارسی اور انگریزی ادب میں ایم اے کیا اور ریڈیو پاکستان سے عملی زندگی کا آغاز کیا۔ بعدازاں وہ پشاور یونیورسٹی سے بطور لیکچرار منسلک ہو گئے۔
اکادمی ادبیات نئے لکھاریوں کے لیے ورکشاپس کرے گی
پہلی تربیتی ورکشاپ ''فکشن''(نثری تخلیقی ادب) کے حوالے سے 10تا12اگست 2016بروز بدھ تا جمعتہ المبارک ، صبح 10بجے تاشام 5بجے تک ، اکادمی ادبیات پاکستان کے کانفرنس ہال میں منعقد ہوگی
پاک ،افغان ادبی روابط قائم کرنے کا فیصلہ
افغانستان کے ثقافتی اتاشی پروفیسر اے۔ رحمان حبیب زئی نے اکادمی کے چیئر مین ڈاکٹر قاسم بگھیو سے ملاقات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور افغانستان دونوں ممالک ایک دوسرے کی ادبی تخلیقات کے تراجم کرائیں ۔
'کم بہت ہی کم':کلیاتِ شاکر عروجی کی تقریب رونمائی
ڈ اکٹر ریاض مجیدنےکہا کہ فیصل آباد کی علمی ادبی تاریخ کا ایک اہم حوالہ شاکر عروجی کی وہ ہمہ جہت کارکردگی ہے جو چھ سات دہائیوں پر پھیلی ہوئی ہے ۔شاکر نے صحافت اور شعر وادب کے میدان میں نمایاں خدمات انجام دیں۔
پاکستان اورجاپان ادبی منصوبوں میں تعاون کریں گے
پانی سفارت خانہ ہرسال ہائیکو مشاعرے کا اہتمام کرتا ہے حال ہی میں ہائیکو ورکشاپ کا انتظام کیا گیا
'لوگ کیاکہیں گے' :کامران احمدکے ناول کی تقریبِ رونمائی
ایک مصنف معاشرے کا عکاس ہوتا ہے اوراپنے حساس پن کی وجہ سے تمام چیزیں کومحسوس کرتا ہے۔ کامران احمدکے ناول میںبھی یہی کچھ دیکھنے کوملا ہے
آباد خرابہ :کشورناہید کے تازہ شعری مجموعہ کی تقریب رونمائی 18فروری کو ہوگی
اکادمی ادبیات پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر قاسم بگھیو تقریب کی صدارت کریں گے۔ڈاکٹر نجیبہ عارف، حمید شاہداور اشفاق سلیم مرزامضامین پڑھیں گے۔تقریب اکادمی ادبیات کے کانفرنس ہال میںسہ پہر ساڑھے تین بجے شروع ہوگی۔
مقبول ترین
ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے کہا کہ امریکی رپورٹ میں پاکستان کے دہشت گردی کے خلاف اٹھائے گئے اقدامات کو متنازع بنایا گیا ہے۔ القاعدہ کی خطے میں ناکامی کو تو تسلیم کیا گیا لیکن اس کے خلاف پاکستان کی کاوشوں کو نظر انداز کیا گیا۔ پاکستان میں
رینٹل پاور کیس میں سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف سمیت 10 ملزمان نے بریت کی درخواست دائر کر رکھی تھی اور نیب ترمیمی آرڈیننس کے تحت تمام درخواستیں دائر کی گئی تھیں۔ جس پر احتساب عدالت اسلام آباد نےفیصلہ محفوظ کر رکھا تھا تاہم آج احتساب
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہم سے جواب مانگا جارہا ہے جواب ان سے مانگا جائے جو ملک کو اس حال میں چھوڑ کرگئے۔ قومی اسمبلی کے اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس کی وبا پھیلنے کے بعد
سپریم کورٹ میں کورونا از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوان چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیے کہ وزیراعظم کہتےہیں ایک صوبے کا وزیراعلیٰ آمر ہے، اس کی وضاحت کیا ہوگی؟ چیف جسٹس نے کہا کہ وزیراعظم اور وفاقی

کرونا وائرس اور احتیاتی تدابیر
اس بات کو کسی بھی صورت نظر انداز نہیں کیا جاسکتا کہ یہ زندگی مکافات عمل ہے۔ کچھ لوگ اپنا کیا اسی دنیا میں کاٹ لیتے ہیں اور کچھ لوگ آخرت میں۔ مگر کوئی اس سے بچ نہیں سکتا یہ بات تو واضح ہے اسے کسی بھی صورت میں جھٹلایا نہیں جا سکتا۔
آن لائن ایجوکیشن سسٹم تقریباً پوری دنیا میں رائج ہے ۔پاکستان میں بھی دو بڑی یونیورسٹیاں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اورورچوئل یونیورسٹی اس وقت ہزاروں اسٹوڈنٹ کو آن لائن ایجوکیشن فراہم کر رہی ہیں۔
پاکستان میں مہنگائی کا جن پچھلے کئی سالوں سے آزادہےاورہرگزرتےدن کےساتھ پہلےسےزیادہ طاقتورہوتاجارہاہے۔ہرآنےوالی حکومت اسے قابوکرنےمیں ناکام رہی ہے، یہی وجہ ہےآج کل جسےدیکھووہی مہنگائی کاروناروتانظرآتاہے،ہر شے کی قیمت آسمان سے باتیں کرتی نظرآتی ہے۔

پاکستان
 
آر ایس ایس
ہمارے پارٹنر
ضرور پڑھیں
ریڈرز سروس
شعر و ادب
مقامی خبریں
آڈیو
شہر شہر کی خبریں